قائد اعظم کی زندگی ہم سب کے لیے مشعل راہ ہے،گورنر سندھ

  قائد اعظم کی زندگی ہم سب کے لیے مشعل راہ ہے،گورنر سندھ

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا کہ قائداعظم نے دو قومی نظریہ پیش کر تے وقت کہا تھا کہ بھارت میں جلد مسلمانوں کے لیے کوئی جگہ نہیں رہے گی، آج ہم دیکھ رہے ہیں کہ بھارت میں رہنے والے مسلمانوں کی جان و مال محفوظ نہیں، قائد اعظم نے تمام مسالک اور مذاہب کے لوگوں کو یکساں حقوق دینے کی بات کی تھی وہ ایک سچے لیڈر تھے، قائد کی زندگی ہم سب کے لیے مشعل راہ ہے،قائد کے وژن کے مطابق پاکستان میں تمام مذاہب کے رہنے والوں کو برابری کے حقوق حاصل ہیں، قائد نے اپنی قوم کی خاطر اپنی ذاتی زندگی کو اہمیت نہیں دی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی کے مقامی ہوٹل میں کراچی کونسل آن فارن ریلیشن کی جانب سے قائد اعظم کی بہن کے پَرنواسے لیاقت مرچنٹ (شریک مصنف) کی تحریر کردہ کتاب جناح انتھالوجی کے چوتھے و آخری ایڈیشن کی منعقدہ تقریب سے خطاب میں کیا۔ اس موقع پر چیئرمین کے سی ایف آر اکرام سہگل، جنرل سیکریٹری کموڈور ریٹائرڈ سدید اے ملک، چینی قونصل جنرل وانگ یو، تھائی قونصل جنرل تھاٹری چواچٹا، افغانستان کے قونصل جنرل اور دیگر مہمان بھی موجود تھے۔ گورنر سندھ نے کہا کہ آج بھارتی حکومت نے وہاں کے مسلمانوں کے لیے کوئی راستہ نہیں چھوڑا، آج کشمیری مسلمانوں پر بھارتی ریاست کی جانب سے ظلم و تشدد سے قائد اعظم کے دو قومی نظریہ کو مزید اہمیت مل گئی ہے اور اسی دو قومی نظریہ کو مدنظر رکھتے ہوئے کشمیری مسلمان الگ وطن کا مطالبہ کررہے ہیں جوکہ بالکل جائز ہے اور ان کا حق بھی ہے۔ گورنر سندھ نے مزید کہا کہ جب تک کشمیر کا مسئلہ حل نہیں ہوتا پاک بھارت کشیدگی کم نہیں ہوگی، کشمیر کے بغیر پاکستان مکمل نہیں ہے ہم نے متعدد بار بھارت کے ساتھ مذاکرات کی کوشش کی لیکن اب کشمیریوں پر ہونے والا ظلم برداشت سے باہر ہوگیا ہے۔ گورنر سندھ نے مزید کہا کہ کشمیر کا مسئلہ کشمیریوں کی امنگوں پر حل کرنے کی ضرورت ہے۔ اس ضمن میں جب تک کشمیر کا مسئلہ حل نہیں ہوتا تب تک سکون سے نہیں بیٹھیں گے۔انہوں نے کہا کہ پاکستانی عوام کشمیری عوام کو اکیلا نہیں چھوڑ سکتے۔ گورنر عمران اسماعیل نے کہا کہ گورنر ہاؤس میں قائداعظم محمد علی جناح کا دفتر ہوا کرتا تھا، اسی تقریب کے دوران مجھ سے ابھی پوچھا گیا کہ آپ گورنر ہاؤس میں قائداعظم کی موجودگی محسوس کرتے ہیں، میرا جواب ہے، جی ہاں میں قائداعظم کی موجودگی محسوس کرتا ہوں۔ عمران اسماعیل نے کہا کہ میں ان پلرز، کرسیوں کو دیکھتاہوں جہاں قائداعظم کھڑے ہوتے یا بیٹھتے تھے، قائداعظم کا دفتر آج بھی محفوظ ہے، یہ تاریخی ورثہ ہے۔ گورنر سندھ عمران اسماعیل نے دعوت عام دیتے ہوئے کہا کہ جب بھی کبھی کسی کو گورنر ہاؤس آنے کا موقع ملے وہ اسے ضرور دیکھیں۔گورنر سندھ نے مزید کہا کہ قائداعظم دنیا کے ان چند رہنماؤں میں سے ایک ہیں جنہوں نے اپنی تاریخ چھوڑی ہے۔ گورنر سندھ نے قائد اعظم کے پَر نواسے لیاقت مرچنٹ سے درخواست کی کہ قائد کے سوانہ حیات کا اردو میں بھی ترجمہ کیا جانا چاہیے، اس ضمن میں انہوں نے اپنے مکمل تعاون کی یقینی دہانی بھی کروائی۔ تقریب میں کتاب کے شریک مصنف لیاقت مرچنٹ نے تحریک پاکستان، نظریہ پاکستان اور قائداعظم کے فرمودات پر روشنی ڈالی، انہوں نے قائداعظم محمد علی جناح پر بنائی گئی دستاویزی فلم بھی دکھائی، لیاقت مرچنٹ نے اپنے خطاب میں کہا کہ جناح انتھالوجی میں قائداعظم اور قیام پاکستان سے متعلق بہت تاریخی مواد موجود ہے۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -