پوری قوم کشمیریوں کی آواز بن گئی، شہر شہر ، گلی گلی احتجاجی مظاہرے ، 12بجتے ہی پورے ملک میں ٹریفک رک گئی ، پاکستان اور کشمیر کا ترانہ بجایا گیا ، وزیر اعظم نے شاہراہ دستور پر کشمیر بنے گا پاکستان کے نعروں میں احتجاجی مظاہرے کی قیادت کی

    پوری قوم کشمیریوں کی آواز بن گئی، شہر شہر ، گلی گلی احتجاجی مظاہرے ، 12بجتے ...

  

اسلام آباد،پشاور ،کوئٹہ ،کراچی (سٹاف رپورٹر ، مانیٹرنگ ڈیسک ، نیوز ایجنسیاں ) وزیراعظم عمران خان کے اعلان پر مظلوم کشمیری عوام سے اظہار یکجہتی کے لیے دن 12 بجے سے ساڑھے 12 بجے تک پوری قوم نے کشمیر آور منا یا ،نہتے مظلوموں پر بربریت کیخلاف پوری قوم سڑکوں پر نکل آئی، ملک بھر میں سائرن، پاکستان اور کشمیر کا ترانہ بجایا گیا، 12 بجتے ہی تمام شاہراہوں پر ٹریفک سگنل آدھے گھنٹے کے لئے سرخ ہوئے،وزیراعظم نے شاہراہ دستور پر کشمیر بنے گا پاکستان کے نعروں کی گونج میں احتجاجی مظاہرے کی قیادت کی، ملک بھر میں عوام اپنے مقام کار، دفاتر، گھروں، مارکیٹوں، شاپنگ پلازوں سے باہر آ کر قریبی سڑکوں اور گلیوں میں جمع ہوئے۔ پاکستان کے شہر شہر، قریہ قریہ کشمیر آور منانے کیلئے لوگ سڑکوں پر نکل آئے، کشمیریوں سے اظہار یکجہتی اور وادی میں مظالم کیخلاف بھارت کیخلاف شدیدا حتجاج کیا گیا۔ شرکا نے مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ کی قرار دادوں اور کشمیریوں کی مرضی کے مطابق حل کرنے کا مطالبہ کیا کشمیر میں بھارتی مظالم کے خلاف پوری قوم کشمیریوں کی آواز بن گئی، کشمیری بھائیوں سے اظہا ریکجہتی کیلئے ملک بھر میں کشمیر آور منایا گیا۔ تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی اپیل پر ملک بھر کے عوام کشمیریوں سے اظہار یکجہتی اور مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کو واضح پیغام بجھوانے کیلئے کشمیر آور منا گیا ۔دوپہر 12 بجتے ہی وزیراعظم عمران خان اور کابینہ اراکین سمیت دیگر شخصیات وزیراعظم سیکریٹریٹ کے سامنے جمع ہوگئے جہاں سائرن بجائے گئے اور پہلے پاکستان کا قومی ترانہ پڑھا گیا جس کے بعد کشمیر کا قومی ترانہ پڑھا گیا۔دوپہر 12 سے ساڑھے 12 بجے تک ٹریفک کو بھی روک دی گئی جب کہ ٹرینیں ایک منٹ کے لیے روکی گئیں۔اسلام آباد میں دن 12 بجے سے آدھے گھنٹے کے لیے ٹریفک سگنل سرخ کردیے گئے جس سے شہر بھر میں ٹریفک رک گیا۔اسلام آباد کے ڈی چوک میں شاہراہ دستور پر واقع دفاتر کے ملازمین اور تحریک انصاف کے رہنما جمع ہوئے، وزیراعظم نے شاہراہ دستور پر کشمیر بنے گا پاکستان کے نعروں کی گونج میں احتجاجی مظاہرے کی قیادت کی۔ وزرا نے ارکان اسمبلی کے ہمراہ اپنے دفاتر کے سامنے جمع ہونے والوں کی قیادت کی جبکہ ملک بھر میں عوام اپنے مقام کار، دفاتر، گھروں، مارکیٹوں، شاپنگ پلازوں سے باہر آ کر قریبی سڑکوں اور گلیوں میں جمع ہوئے۔ریلوے سٹیشنوں اور ہوائی اڈوں پر بھی کشمیری عوام سے اظہار یکجہتی کے لئے اجتماعات کا اہتمام کیا گیا ۔وزیراعظم کی ہدایت پر عوامی نمائند وں نے اپنے اپنے حلقوں میں احتجاج کی قیادت کی جبکہ احتجاج کیلئے سول سوسائٹی اور طلبا کو بھی دعوت دی گئی ہے۔وزیراعظم کی جانب سے کشمیریوں سے یکجہتی کی اپیل پر وزیر ریلوے شیخ رشید نے ملک میں چلنے والی تمام 138 ٹرینیں ایک منٹ روکی گئیں ۔ملتان، پاک پتن، جہانیاں، وہاڑی اور دیگر کئی شہروں میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے ریلیاں نکالی گئی، طلبا اور مختلف مکاتب فکر کے افراد کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ شرکا کشمیر بنے گا پاکستان کے نعرے لگاتے رہے۔صادق آباد کے نوجوانوں نے کشمیریوں سے اظہار محبت میں آزاد کشمیر کا سو فٹ لمبا جھنڈا تیار کرلیا۔ سندھ کے مختلف شہروں میں بھی شہریوں کی بڑی تعداد نے کشمیریوں کی حمایت کا اعادہ کیا۔ سکھر، کشمور اور دوسرے شہروں میں عوام نے کشمیریوں کی حمایت میں مظاہرے اور ریلیاں نکالیں۔بلوچستان میں گوادر، قلعہ عبداللہ، چاغی میں مختلف مکاتب فکر کے افراد نے وادی میں بھارتی مظالم کیخلاف احتجاج کیا۔ خیبرپختونخوا میں سوات کے عوام نے کشمیریوں سے بھرپوریکجہتی کا اظہار کیا۔ میرپور آزاد کشمیر میں خواتین کشمیریوں کی حمایت میں میدان میں آگئیں، وادی میں نہتے کشمیریوں پر مظالم پر مودی سرکاری کیخلاف شدید احتجاج کیا۔کراچی میں بھی کشمیریوں سے یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے مودی کو دو ٹوک پیغام دیا گیا، بارہ بجتے ہی شہر بھر میں ٹریفک رک گیا۔ شہریوں نے گاڑیوں سے اتر کر قومی ترانہ پڑھا۔ طلبہ و طالبات، دفاتر میں کام کرنے والے، وکلا، سول سوسائٹی سمیت ہر ایک نے کشمیری بھائیوں سے اظہار یکجہتی کیا۔ مزار قائد پر نکالی گئی ریلی میں گورنر سندھ، وزرا اور شاہد آفریدی سمیت اہم شخصیات نے شرکت کی۔بھارت تجھ سے کشمیر لے کر رہیں گے۔ پاک وطن کی شہہ رگ کو چھین کر رہیں گے۔۔ کراچی والوں نے ہندوستان کو دوٹوک پیغام دے دیا۔ تمام ڈویژنل وضلعی ہیڈکوارٹر زپر احتجاجی ریلیاں اور جلسے جلوس منعقد کیے گیے‘ دارالحکومت مظفرآباد میں سب سے بڑی یکجہتی ریلی وزیر اعظم سیکرٹریٹ سے قائد ملت سردار ابراہیم خان کی یادگار تک نکالی گئی ریلی کی قیادت شہزاد ارباب نے کی‘ آزادکشمیر کے وزراء،چیف سیکرٹری ،انسپکٹر جنرل پولیس ‘ سیکرٹری صاحبان ، سربراہان محکمہ جات ، تمام سیاسی جماعتوں کے نمائندگان کے علاوہ ملازمین اور سول سوسائٹی کے افراد کی بھر پور شرکتپارلیمنٹ ہاﺅس کے باہر بھی بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کئے جانے اور مظلوم کشمیریوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کے خلاف احتجاجی مظاہر کیا گیا ، جس میں ا سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر ، چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی ، چیئرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام سمیت بڑی تعداد میں اراکین پارلیمنٹ،ملازمین اور طلبا ءنے شرکت کی، اس موقع پرکشمیر بنے گا پاکستان ، کشمیر کی آزادی تک جنگ رہے گی کے فلک شگاف نعرے بھی لگائے گئے، پاکستان سویٹ ہومزکے بچوں کی جانب سے کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے شاندار مارچ پاسٹ کا مظاہرہ کیا گیا،تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ کشمیر کے بغیر پاکستان نا مکمل ہے ، مودی کی نفرت کی سوچ کبھی کامیاب نہیں ہو گی ، پاکستان امن چاہتا ہے اور اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق کشمیریوں کو ان کا حق دلانا چاہتا ہے ، پاکستان کشمیر پر کسی بھی معاملے میں سودے بازی نہیں کرے گا ، ہم کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں جو آزادی کی جدوجہد کر رہے ہیں ،ان خیالات کا اظہار ڈپٹی اسپیکر قاسم خان سوری ، چیئرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام ،سینیٹر میاں عتیق شیخ اور سینیٹر کہدا بابر نے کیا تقریب کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام نے کہا کہ پورے ملک میں کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا جا رہا ہے، مقبوضہ کشمیر میں کرفیو کو 25دن ہو گئے ہیں وہاں خوراک کی کمی ہے ، انہیں ادویات نہیں مل رہیں ،9 لاکھ بھارتی فوجی مقبوضہ کشمیر میں تعینات ہیں ، فخر امام نے کہاکہ کشمیر آج بھی متنازع ہے،برہان وانی کی شہادت کے بعد جس جذبے کے تحت کشمیریوں نے شہادت کا رتبہ پایا سب کے سامنے ہے،اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کا اجلاس آرہا ہے،چین کشمیر کے مسئلے پر پاکستان کا مکمل ساتھ دے رہا ہے،تین اسلامی ممالک نے پاکستان کی حمایت کی ہے ،ایران، ترکی اور ملائیشیا نے پاکستان کی حمایت کی ہے ، فخر امام نے کہا کہ بین الاقوامی ذرائع ابلاغ کشمیر کے معاملے پر بھارت کا چہرہ بے نقاب کر رہا ہے، کشمیر کے بغیر پاکستان نا مکمل ہے، اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ڈپٹی سپیکر قاسم سوری نے کہا کہ پوری قوم اپنے کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے اکٹھے ہوئے ہیں،مقبوضہ کشمیر میںآج کشمیری اپنے گھروں میں بند ہیں،آر ایس ایس کا ایک اہلکار بھارت کا وزیراعظم بن گیا ہے،مودی کی نفرت کی سوچ کبھی کامیاب نہیں ہو گی ،پاکستان مودی کی اس سازش کو کبھی کامیاب نہیں ہونے دے گا ، مودی کو بتانا چاہتے ہیں کہ پاکستان امن چاہتا ہے اور اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق کشمیریوں کو ان کا حق دلانا چاہتا ہے ، اگر بھارت سازش کرتا رہا تو پاکستان ہر حد تک جائے گا ، اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سینیٹر کہدا بابر نے کہا کہ پوری قوم کشمیریوں کے ساتھ ہے ، پاکستان کشمیر پر کسی بھی معاملے میں سودے بازی نہیں کرے گا ، سینیٹر میاں محمد عتیق شیخ نے کہا کہ ہم سب وزیر اعظم کی ہدایت کے مطابق یہاں آئے ہیں ، ہم کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں جو آزادی کی جدوجہد کر رہے ہیں وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے مود ی کو پیغام دیا ہے کہ پاکستان اور خیبرپختونخوا میں ایسے بہادر اور غیور لوگ بستے ہیں کہ اگر وزیراعظم پاکستان کا حکم ملا تو نہ انڈیا رہے گا نہ انڈیا کاباجارہے گا۔اُنہوںنے کہا ہے کہ جب تک وزیراعظم پاکستان کا دوسرا حکم نہیں ملتا ،ریلیوں کا سلسلہ جاری رہے گا۔ ہر جمعہ 12:00 سے 12:30 تک صوبائی حکومت کشمیری بھائیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کیلئے ریلی نکالے گی ۔کشمیری بھائیوں کو پیغام دینا چاہتے ہیں کہ پوری پاکستان عوام آپ کے ساتھ کھڑی تھی اور کھڑی ہے، جو ظلم مودی نے مقبوضہ کشمیر میں شروع کر رکھا ہے ۔مودی کو پیغام دینا چاہتا ہوں کہ خیبرپختونخوا میں ایسے بہادر لوگ بستے ہیں کہ اگر حکم ملا تو انڈیا کا نام ونشان مٹا دیں گے ۔ اُنہوںنے یونائیٹڈ نیشن سے ایک پیغام میں کہا ہے کہ آئیں اور مقبوضہ کشمیر کے عوام کو ان کا حق خود ارادیت دلا دیں۔انہوںنے مزید کہاکہ اگر یونائیٹڈ نیشن مقبوضہ کشمیر کا مسئلہ حل نہیں کرتا تو پھر پاکستان اور خیبرپختونخوا کے عوام وزیراعظم عمران خان کے حکم کا انتظار کریں گے اور ہم سب مقبوضہ کشمیر کے بھائیوں کے حق کیلئے میدان میں لڑیں گے اور مقبوضہ کشمیر کو آزاد کرکے دکھائیں گے ۔ وہ پشاور میں مقبوضہ کشمیر کے عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کے حوالے سے نکالی گئی ریلی سے خطاب کررہے تھے ۔ ریلی میںگورنر خیبرپختونخوا شاہ فرمان ، سپیکر صوبائی اسمبلی مشتاق غنی ، صوبائی وزراء، اراکین صوبائی اسمبلی ، وزیراعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری شہاب علی شاہ، آئی جی پی ڈاکٹر محمد نعیم خان، سی سی پی او پشاور و دیگر سیاسی رہنماﺅں اور حکومتی اہلکاروں نے شرکت کی ۔ ریلی نے صوبائی اسمبلی سے وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور تک مارچ کیا جس میں ہزاروں کی تعداد میں لوگ شریک ہوئے ۔ ریلی کی قیادت وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان اور گورنر خیبرپختونخوا شاہ فرمان کر رہے تھے ۔ ریلی کے دوران مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کے خلاف نعرہ بازی کی گئی جبکہ کشمیر بنے گا پاکستان کے نعروں سے بھی ریلی گونج اُٹھی ۔ ریلی سے خطاب کے دوران وزیراعلیٰ کا کہنا تھاکہ وزیراعظم پاکستان کی ہدایت کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ظلم وجبر کے خلاف یہ ریلی نکالی گئی ہے جس کا مقصد کشمیری بھائیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی منانا ہے ۔ریلی کے شرکاءنے مقبوضہ کشمیر میں ظلم کے خلاف شدید نعرہ بازی کی اور اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا کہ مقبوضہ کشمیر کے معصوم عوام کو بھارتی مظالم سے آزاد کرایا جائے ۔ وزیراعلیٰ نے ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ جب آزاد کشمیر ہمارے قبضے میں آیا اور پاکستان کے غیو ر عوام مقبوضہ کشمیر کو فتح کرنے والے تھے تو انڈیا کی بزدل حکومت اُس وقت خود اقوام متحدہ مقبوضہ کشمیر کا مسئلہ لے کرگئی ۔ اقوام متحدہ نے کشمیر پر قرارداد پاس کی تھی جس کے مطابق کشمیریوں کو حق خود ارادیت کا حق دیا گیا تھا ۔ انہوںنے کہاکہ اب ہم اقوام متحدہ سے اپیل کرتے ہیں کہ اپنی قرارداد کی پاسداری رکھتے ہوئے مقبوضہ کشمیر کے مظلوم عوام کو فاشسٹ مودی کے ظلم وجبر سے آزادی دلا دے ۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ اگر اقوام متحدہ یہ مسئلہ حل نہیں کرتا تو پھر پاکستان اور خیبرپختونخو اکے عوام وزیراعظم کے حکم کا انتظار کریں گے اور جیسے ہی حکم ملے ہم سب مقبوضہ کشمیر میں جہاد کیلئے جائیں گے اور مقبوضہ کشمیر کو آزاد کرائیں گے ۔وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے کہا ہے کہ ہم اس کٹھن وقت میں اپنے کشمیری بھائیوں کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں، آج قوم کا ہر بچہ، جوان اور بوڑھا بھی یہی پیغام دے رہا ہے کہ بھارتی مظالم وبربریت کی اس مشکل گھڑی میں وہ اپنے کشمیری بھائیوں کو نہیں بھولا، ہم دنیا کو یہ واضح پیغام دینا چاہتے ہیں کہ کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے اور کشمیریوں اور پاکستانیوں کا رشتہ روز اول سے قائم ہے جسے کسی صورت ختم نہیں کیا جاسکتا، ان خیالات کا اظہارانہوں نے کشمیریوں سے اظہاریکجہتی کے لئے نکالی گئی ایک بہت بڑی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کیا،گورنر بلوچستان جسٹس ریٹائرڈامان اللہ خان یاسین زئی بھی ریلی میں شریک تھے جبکہ دیگر شرکاءمیں اسپیکر صوبائی اسمبلی میر عبدالقدوس بزنجو، ڈپٹی اسپیکر صوبائی اسمبلی، کابینہ کے اراکین، اراکین صوبائی اسمبلی اور عوام کی کثیر تعداد شامل تھی، ریلی کے آغاز سے قبل تمام ٹریفک کی روانی معطل کرکے سائرن بجا کر چند لمحات کے لئے خاموشی اختیار کی گئی جس کے بعد پاکستان اور کشمیر کا قومی ترانہ پڑھاگیا، بعدازاں صوبائی اسمبلی تا سیرینا چوک وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کی زیرقیادت کشمیری عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لئے ریلی نکالی گئی، ریلی کے شرکاءنے کشمیر بنے گا پاکستان کے فلک شگاف نعرے بلندکئے، ریلی سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہا کہ بھارتی فوج کی طرف سے کی جانے والی انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا اقوام متحدہ نوٹس لے، اقوام متحدہ کی قرارداد کی روشنی میں بھارت کشمیریوں کے حق خودارادیت کو تسلیم کرے، انہوں نے کہا کہ ستر سال سے زائد کے عرصے پر محیط کشمیریوں کی نسل کشی اب ختم ہونی چاہئے،انہوں نے کہا کہ جب کشمیری عوام کی بات آتی ہے تو پورا پاکستان متحد ہوجاتا ہے، ہمارے دشمن یہ بات نہ بھولیں کہ کشمیریوں پر ظلم وجبر کے خلاف پوری قوم یکجہت ہے، مودی سرکار اور ہندو انتہا پسند آر ایس ایس نے دنیا کے سامنے واضح کردیا کہ بھارتی جمہوریت صرف لفاظی کی حد تک محدود ہے، بھارت جمہوریت کا علمبردار بنتا ہے لیکن موجودہ بھارتی حکومت خود بھارت میں بھی سنگین انسانی خلاف ورزیوں میں ملوث ہے جس کی وجہ سے آج بھارت کے اندر سے بھی ہندو انتہا پسند سوچ کے خلاف آواز اٹھ رہی ہے، بھارت کشمیر میں اب تک دو لاکھ سے زائد کشمیریوں کو شہید کرچکا ہے اور بھارتی فوج سینکڑوں خواتین کی عصمت دری کی بھی مرتکب ہوئی ہے، بھارت یہ بات سمجھ لے کہ ظلم وجبر، پیلٹ گنز کا استعمال اور کشمیری نوجوانوں کی جبری گمشدگی سے آزادی اور حق خودارادیت کی آواز کو دبایا نہیں جاسکتا۔وزیر مذہبی امور پیر نور الحق قادری نے کہا ہے کہ ساری دنیا خاموش ہو جائے گی لیکن عمران خان اور ان کی ٹیم مسلہ کشمیر پر خاموش نہیں رہے گی،مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی جانب سے لگائی گیا کرفیو فوری ختم کرائے۔ جمعہ کو وزیر مذہبی امور پیر نور الحق قادری کے زیر اہتمام کشمیر سے یکجہتی کے لیے وزارت مذہبی امور کے باہر مظاہرہ کیا گیا جس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر مذہبی امور پیر نور الحق قادری نے کہا وزیراعظم عمران خان کے کہنے پر ملک بھر میں کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ انہوں نےاقوام متحدہ اور انسانی حقوق کی تنظیموں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی جانب سے لگائی گئی کرفیو فوری ختم کرائے،ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ بین الاقوامی میڈیا کو مقبوضہ کشمیر میں جانے دیا جائے،کشمیر کسی صورت میں بھی بھارت کے حوالے چھوڑ نہیں سکتے۔وفاقی وزیر امور کشمیر و گلگت بلتستان علی امین خان گنڈا پورنے کہا ہے کہ آج پوری پاکستانی قوم نے یوم یکجہتی کشمیر بھرپور انداز میں منا کر ثابت کر دیا ہے کہ پاکستان کا بچہ بچہ مظلوم کشمیریوں کے ساتھ ہے انہوںنے کہا کہ پوری قوم نے آج اس عزم کا بھی اظہار کیا کہ کشمیرکی آزادی اور کشمیری عوام کو اُن کا حق خود ارادیت دلوانے کے لیے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائے گا علی امین خان گنڈا پور نے ملازمین کے جذبے کوسہراتے ہوئے کہا کہ بھارت کا کوئی بھی جارحانہ حربہ ہمیں کشمیریوں کی حمایت سے دستبرار نہیں کرواسکتا انہوںنے کہاکہ آج خنجراب تاگوادر پاکستان کا ایک ایک فردمظلوم کشمیریوں کے شانہ بشانہ کھڑا ہے۔انہوںنے کہاکہ آخری سانس اور خون کے آخری قطرے تک کشمیریوں کی حمایت جاری رکھیںگے۔وفاقی وزیرنے کہاکہ پوری پاکستانی اور کشمیری قوم مودی کے فاشسٹ ایجنڈے کا ہر قدم پر ڈٹ کر مقابلہ کریں گے اور اس خطے پر ہندو انتہاپسندوں کے نظریے کو کسی صورت غالب نہیں آنے دیں گے ۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا برطانوی نشریاتی ادارے نے بھارتی مظالم کاپردہ چاک کردیاکشمیریوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جارہاہے، عالمی برادری بھارت کا احتساب کرے۔تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے موقع پر کہا کشمیری غیر قانونی بھارتی قبضہ میں تکالیف کا سامنا کررہے ہیں، بھارتی فوج کے ہاتھوں کشمیریوں کو تشدد کا نشانہ بنایا جارہاہے، عالمی برادری بھارت کا احتساب کرے۔شاہ محمودقریشی کا کہنا تھا کہ برطانوی نشریاتی ادارے نے بھارتی مظالم کا پردہ چاک کردیا، کشمیریوں پر تشدد عالمی قوانین اورجنیوا کنونشن کی خلاف ورزی ہے۔

یکجہتی ریلیاں

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر) صدر مملکت عارف علوی نے کہا ہے کہ پاکستانی عوام کشمیریوں کے ساتھ کھڑے کھڑے ہیں اور کھڑے رہیں گے، مسئلہ کشمیر دنیا کے مسلمانوں کا مشترکہ مسئلہ ہے،کشمیریوں کیخلاف بھارتی مظالم پر پوری قوم متحد ہے ، بھارتی پروپیگنڈہ کا ہر سطح پر جواب دیں گے، کشمیریوں کے حقوق کسی صورت سلب نہیں کرنے دینگے۔اسلام آباد میں کشمیر آور کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی عوام کشمیریوں کے ساتھ کھڑے تھے اور کھڑے ہیں اور کھڑے رہیں گے۔ مسلم امہ سے اپیل ہے کہ مسئلہ کشمیر دنیا کے مسلمانوں کا مشترکہ مسئلہ ہے۔ پاکتان کی حکومت اور عوام کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کشمیریوں پر بھارتی مظالم پر پوری قوم متحد ہے ہم متحد ہوں گے تو کشمیر ضرور آزاد ہوگا۔ صدر نے کہا کہ بھارت کشمیریوں سمیت پورے بھارت میں مسلمانوں پر مظالم کررہا ہے بھارتی پروپیگنڈہ کا ہر سطح پر جواب دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیریوں کے حقوق کسی صورت سلب نہیں کرنے دینگے۔ کشمیریوں کے حقوق کسی صورت دبائے نہیں جاسکتے۔ صدر عارف علوی نے کہا کہ پاکستان نے تاریخ میں دنیا میں جہاں مسلمانوں پر ظلم ہوا پاکستانیوں نے ہمیشہ ساتھ دیا کشمیریوں سے یکجہتی پر پوری قوم کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ جبکہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں بگڑتی صورتحال علاقائی امن کیلئے خطرہ ہے۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے گوجرانوالہ کور ہیڈکوارٹرز کا دورہ کیا جہاں انہیں آپریشنل تیاریوں پر بریفنگ دی گئی۔اس موقع پر جوانوں سے خطاب میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ قوم نے کشمیر آور کے دوران کشمیری بھائیوں سے یکجہتی کا مظاہرہ کرکے دنیا کو بھرپور پیغام دیا۔انہوں نے کہا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں بگڑتی صورتحال علاقائی امن کیلئے خطرہ ہے۔

صدر مملکت

مزید :

صفحہ اول -