تمہارا پیار چھپ چھپ کر کئی چہرے بدلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

تمہارا پیار چھپ چھپ کر کئی چہرے بدلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو
تمہارا پیار چھپ چھپ کر کئی چہرے بدلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

  

تمہارا پیار چھپ چھپ کر کئی چہرے بدلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

تمہارا ہجر شدّت سے مرے دل کو مسلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

سمندر آشنا آنکھوں میں صحرا آن بستے ہیں تُمہیں جب بھول جاتا ہوں

پھر اُن صحراؤں میں ایک خواب کا چشمہ نکلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

تری پرچھائیاں ہر سُو مری تنہائیوں کا رقص کرتی ہیں اُداسی پر

میرے سینے میں ایک بےچین سا بچہ مچلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

کسی فٹ پاتھ پر ، بازار میں ، باغات میں یا پھر کسی دریا کنارے پر

بہت خوش ہو کے جب کوئی کسی کے ساتھ چلتا ہے مجھے تم یاد آتے ہو

میں سارا دن کوئی سنگی مجسمہ بن کے رہتا ہوں مگر جب شام ڈھلتی ہے

میرے دل کی جگہ پر کوئی پتھر سا پگھلتا ہےمُجھے تم یاد آتے ہو

تصور میں تمہارے سنگ بیتی بارشیں اکثر آواز دیتی ہیں

نگاہوں میں تمہاری ڈھوپ کا اک دیپ جلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

کبھی کوئی ستارہ آنکھ سے ہوتا ہوا بُجھتا ہےآکے گود میں گر کر

کبھی کوئی بہت ہی دُور اُبھرتا اور ڈھلتا ہے مُجھے تم یاد آتے ہو

فرحت عباس شاہ

Tumhaar aPiaar Chhup Chhup Kar Kai Chehray Badalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                      Tumhaara Hijr Shiddat Say Miray Dil Ko Masalta Hay Mujhay Tum Yaad AaTay Ho

         Samandar Aashna Aankhon Men Sehraa Aan Bastay Hen Tumhen Jab Bhool Jaata Hun

            Phir In Sehraaon Men Ik Khaab Ka Chashma Nikalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                             Maoin Apnay Haath Say Teri Sunehri Yaad Ki Palken Sajaat  Hun Khayaalon Men

                          Khayaalon Men Tira Maosam Kai Pehlu Badalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                                                             Tiri Parchhaaiaan , har Su Miray Tanhaaion Ka Raqs Karti Hen Udaasi Par

                Miray Seenay Men Ik Bechain Sa Bachha Machalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                                            Kisi Futt Paath Par Bazaar Men Baghaat Men Ya Phir Kisi Darya Kinaaray Par

                                  Bahut Khush Ho K Jab Koi Kisi K Saath Chalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                      Main Saara Din Koi Sangi Mujasma Ban K Rehta Hun Magar Jab Shaam Dhalti Hay

                                      Miray Dil Ki Hagah Pr Koi Pathar Sa Pighalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                         Tasawwur Menn Tumhaaray Sang Beeti Baarshen Aksar Tumhen Awaaz Deti Hen

                              Nigaahon Men Tuhaari Dhoop Ka Ik Deep Jalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                                                Kabhi Koi Sitaara Aankh Say Hota Hua Bujhta Hay Aa ky Gode Men Gir Kar

                                               Kabhi Koi Bahut Door Ubharta Aor Dhalta Hay Mujhay Tum Yaad Aatay Ho

                                                                                                                                                                                                                                                                           Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -