حکومتی اجازت کے بغیر سکول کھولنا انتظامیہ کو مہنگا پڑگیا

حکومتی اجازت کے بغیر سکول کھولنا انتظامیہ کو مہنگا پڑگیا
حکومتی اجازت کے بغیر سکول کھولنا انتظامیہ کو مہنگا پڑگیا

  

پشاور(ویب ڈیسک) پرائیویٹ سکول ریگولیٹری اتھارٹی نے حکومت کی اجازت کے بغیر سکول کھولنے پر نجی سکول کی انتظامیہ پر جرمانہ عائد کر دیا ہے۔پرائیویٹ سکول ریگولیٹری اتھارٹی کے ترجمان کا کہنا ہے کہ نجی سکول کی انتظامیہ پر 60 ہزار روپے جرمانہ عائد کیا گیا اور سکول بند کرنے کی ہدایت بھی کی گئی۔

چند روز قبل بھی حیات آباد میں حکومتی اجازت کے بغیر کھلنے والے سکول پر پرائیویٹ سکول ریگولیٹری اتھارٹی (پی ایس آر اے) نے جرمانہ عائد کیا تھا۔

ہم نیوز کے مطابق اسسٹنٹ ڈائریکٹر آپریشن پی ایس آر اے نے بتایا کہ حکومتی اجازت کے بغیر سکول کھولنے پر سکول مالکان کے خلاف کارروائی عمل میں لائی گئی۔انہوں نے کہا کہ نجی سکول پر 40 ہزار روپے جرمانہ عائد کیا گیا ہے کیونکہ وہاں حکومتی پابندی کے باوجود تدریسی عمل جاری تھا۔اسسٹنٹ ڈائریکٹر آپریشن کا مزید کہنا تھا کہ کورونا کے خلاف ایس او پیز پر بھی عمل درآمد نہیں کیا جا رہا تھا۔سکول کو ہفتے میں جرمانہ ادا کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔

خیبر پختونخوا میں تمام سرکاری سکول 15 ستمبر سے کھولنے کا امکان ظاہر کیا گیا ہے۔حکومتِ خیبر پختونخوا نے اس ضمن میں اعلامیہ بھی جاری کر دیا جس کے مطابق خیبر پختونخوا میں سرکاری اسکولوں کو کورونا ایس او پیز کے تحت کھولا جائے گا۔

ڈائریکٹر ایجوکیشن کے مطابق مختلف اضلاع کے اساتذہ کو ایس او پیز پر عملدرآمد کو یقینی بنانے کی تربیت دی گئی ہے۔خیبر پختونخوا حکومت کی جانب سے جاری کردہ مراسلہ میں تلقین کی گئی ہے کہ سکولوں میں سینی ٹائزر، ماسک کے استعمال اور ہاتھ دھونے کے لیے صابن کی فراہمی یقینی بنائی جائے۔

مزید :

علاقائی -خیبرپختون خواہ -پشاور -