بدل گئے میرے موسم تو یار اب آئے

بدل گئے میرے موسم تو یار اب آئے
بدل گئے میرے موسم تو یار اب آئے

  

بدل گئے میرے موسم تو یار اب آئے

غموں نے چاٹ لیا، غمگسار اب آئے

یہ وقت اس طرح رونے کا نہیں ہے لیکن

میں کیا کروں کہ میرے سوگوار اب آئے

وہ دھوپ دھوپ ہی میں ہو گیا بسر چپ چاپ

شجر شجر پہ میرے برگ و بار اب آئے

وہ جن پہ دھوکا سا جھیلا تھا ہم نے منزل کا

وہ قافلے تو سرِ رہگزار اب آئے

نہ ڈالیوں پہ کوئی پھول ہے نہ ہونٹوں پر

مزہ تو جب ہے کہ بادِ بہار اب آئے

فرحت عباس شاہ

     Badal Gaey Meray Dil K Maosam To Yaar Ab Aaey

                     Ghamon Nay Chaat Lia , Ghamgusaar Ab Aaey

                           Yeh Waqt Iss Tarah Ronay Ka To Nahen Lekin

                     Main Kia KArun Keh Meray Sogwaar Ab Aaey

 Wo Dhoop Dhoop Men Hi Ho Gia Basar Chuo Chaap

                                Shajar Shajar Pe Miray Barg  o Baar Ab Aaey

 Wo Jin Pw Dhoka Sa Jheela Tha Ham Nay Manzil Ka

                                              Wo Qaaflay To Sar  e  Rehguzaar Ab Aaey

                                 Na Daaliun Pe Koi Pholl Hay Na Honton Par

                         Maza To Jab Hay Keh Baad  e  Bahaar Ab Aaey

                                                                                                                               Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -