دل بہت بے قر ار رہتا ہے

دل بہت بے قر ار رہتا ہے
دل بہت بے قر ار رہتا ہے

  

جب ترا انتظار رہتا ہے

دل بہت بے قر ار رہتا ہے

روح کو بے بسی سی رہتی ہے

درد با اختیار رہتا ہے

دل ہے بے چینیوں کی مٹھی میں

ذہن پر تُو سوار رہتا ہے

اِک ترا دھیان آریوں کی طرح

روح کے آر پار رہتا ہے

وہم ہے یہ مجھے کہ تیری طرف

اِک مرا غم گسار رہتا ہے

شب بہت بے قرار رہتی ہے

دن بہت سوگوار رہتا ہے

فرحت عباس شاہ

                                            Jab Tira Intzaar Rehta Hay

                             Dil Bahut Beqaraar Rehta Hay

                                      Ruh Ko Bebasi Si Rehti Hay

                                     Dard Ba Ikhtyaar Rehta Hay

             Dil Hay Bechainiun Ki Muthi Men

                            Zehn Par Tu Sawaar Rehta Hay

                          Ik Tira Dhyaan Aariun Ki Tarah

                                         Rooh K Aar Paar Rehta Hay

Wehm Hay Yeh Mujhay Keh Teri Taraf

                          Ik Mira Ghamgusaar Rehta Hay

                         Shab Bahut Beqaraar Rehti Hay

                          Din Bahut Sogawaar Rehta Hay

                                                                          Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -