آگ سی لگ گئی ہے پانی میں

آگ سی لگ گئی ہے پانی میں
آگ سی لگ گئی ہے پانی میں

  

جذبۂ شوق کی روانی میں

غلطی ہو گئی جوا نی میں

زندگانی تو جیسے ڈوب گئی

ہجر اور غم کی بےکرانی میں

جانے کیا کہہ گیا ہے اشکوں کو

آگ سی لگ گئی ہے پانی میں

ایک دن دل حواس کھو بیٹھا

ایک چھوٹی سی ناگہانی میں

تجربہ ہی نہیں کیا اس کا

عمر بیتی ہے خوش گمانی میں

اس کی عادت سے مجھ کو لگتا ہے

کوئی لذت ہے بدگمانی میں

اک کشش سی عجیب ہوتی ہے

عشق کی سلطنت کی رانی میں

وہ مجھے دیکھ کر بہت خوش ہے

دکھ کے سورج کی سائبانی میں

اک محبت ہے اور جدائی ہے

عمر کی مختصر کہانی میں

فرحت عباس شاہ

                          Jazba  e  Shoq  Ki Rawaani Men

                                          Ghalti Ho Gai Jawaani Men

                                 Zindgaani To Jaisay Doob Gai

                   Hijr Aor Gham Ki Bekaraani Men

           Jaanay Kia Keh Gia Hay Ashkon Ko

                            Aag Si Lagg Gai Hay Paani Men

                             Aik Din Dil Hawaas Kho Baitha

                                            Aik Choti Si Nagihaani Men

                                        Tajrba Hi Nahen Kia Uss Nay

           Umr Beeti Hay Khush Gumaani Men

                                         Tajrba Hi Nahen Kia Uss Nay

              Umr Beeti Hay Khushgumaani Men

        Uss Ki Aadat Say Mujh Ko Lagta Hay

                     Koi Lazzat HayBadgumaani Men

                                       Ik Kashish Si Ajeeb Hoti Hay

                                     Eshq Ki Saltnat Ki Raani Men 

Wo Mujhay Dekh Kar bahut Khush Hay

                        Dukh K Sooraj Ki Saaibaani Men

                 Ik Muhabbat Hay Aor Judaaee Hay

                          Umr Ki Mukhtasir Kahaani Men

                                                                       Farhat Abbasd Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -