روز ہوں گی ملاقاتیں اے دل

روز ہوں گی ملاقاتیں اے دل
روز ہوں گی ملاقاتیں اے دل

  

بے سبب ہیں تری باتیں اے دل

کچھ بھی سنتی نہیں راتیں اے دل

کس طرح خود کو بچا پاؤ گے

ان گنت دکھ کی ہیں گھاتیں اے دل

درد کے زمرے میں ہی آتی ہیں

تیری جیتیں ہیں یا ماتیں اے دل

تم کو اشکوں کی قطاریں بھی لگیں

چاند تاروں کی براتیں اے دل

ہم بھی رہتے ہیں اسی صحرا میں

روز ہوں گی ملاقاتیں اے دل

فرحت عباس شاہ

                            Besabab Hen Tiri Baaten Ay Dil

          Kuch Bhi Sunti Nahen Raaten Ay Dil

          Kiss Tarah Khud Ko Bacha Paao Gay

     An Ginat Dukh Ki Hen Ghaaten Ay Dil

                          Dard K Zumray Men Hi Aati Hen

                                           Teri Jeeten Ya Maaten Ay Dil 

Tum Ko Ashkon Ki Qataaren Bhi Lagen

                Chaand Taaaron Ki Baraaten Ay Dil

                                Ham Rehtay Hen Isi Sehra Men

                                Roz Hon Gi Mulaqaaten Ay Dil

                                                                              Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -