سوچتے رہنے کی عادت ہو گئی

سوچتے رہنے کی عادت ہو گئی
سوچتے رہنے کی عادت ہو گئی

  

سوچتے رہنے کی عادت ہو گئی

چونکتے رہنے کی عادت ہو گئی

ہجر کی راتوں کے سنگ آنکھوں کو بھی

جاگتے رہنے کی عادت ہو گئی

جانے کیا ڈر ہے کہ اپنے آپ سے

بھاگتے رہنے کی عادت ہو گئی

وہ نہیں لوٹے گا پھر کیوں راہگزر

دیکھتے رہنے کی عادت ہو گئی

وہ میرے اندر چھپا ہے اور اسے

بولتے رہنے کی عادت ہو گئی

فرحت عباس شاہ

                Sochtay Rehnay Ki Aadat Ho Gai Hay

          Chonktay Rehnay Ki Aadat Ho Gai Hay 

                Hijr Ki Raton K Sang Aankhon Ko Bhi

                    Jaagtay Rehnay Ki Aadat Ho Gai Hay

          jaanay Kia Dar Hay Keh Apnay Aap Say

             Bhaagtay Rehnay Ki Aadat Ho Gai Hay

Wo Nahen ALotay Ga Phir Kiun Reh Guzar

                  Dekhtay Rehnay Ki Aadat Ho Gai Hay

               WO Miray Andar Chupa Hay Aor Usay

                        Boltay  Rehnay Ki Aadat Ho Gai Hay

                                                                                            Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -