وہ مجھے لاکھوں میں پہچانتا ہے

وہ مجھے لاکھوں میں پہچانتا ہے
وہ مجھے لاکھوں میں پہچانتا ہے

  

اس قدر اچھی طرح جانتا ہے

وہ مجھے لاکھوں میں پہچانتا ہے

میری ہر بات کہاں سنتا ہے

میری ہر بات کہاں مانتا ہے

دربدر ملتا نہیں کچھ دل کو

در بدر خاک ہی بس چھانتا ہے

تُو کہاں ہے،تُو کہاں ہے جانی

دل شب و روز یہ گردانتا ہے

تجھ کو پا لینا ہے ہر قیمت پر

کوئی ہر لمحہ یہی ٹھانتا ہے

فرحت عباس شاہ

                                    Iss QadarAchi Tarah Jaanta Hay

Wo Mujhay Laakhon Men Pechaanta Hay

                                 Meri Har Baat Kahaan Sunta Hay

                         Meri Har Baat Kahaan Maanta Hay

                       Darbadar Milta Nahen Kuch Dil Ko

             Darbadar Khaak Hi Bass Chaanta Hay

          Tu Kahaan Hay, Too Kahaan Hay Jaani

                        Dil Shab  o Roz Yeh Gardaanta Hay

         Tujh Ko Paa Lena Hay Har Qeemat  Par

                          Koi Har Lamha Yahi Thaanta Hay

                                                                                 Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -