تو وہی ہے نا زمانے والا

تو وہی ہے نا زمانے والا
تو وہی ہے نا زمانے والا

  

سرد سا ہاتھ ملانے والا

تو وہی ہے نا زمانے والا

تم مجھے یاد رکھو گے کیسے

جب خدا بھی ہو بھلانے والا

دکھ کی مزدوری مجھے کرنی ہے

ہے کوئی ہاتھ بٹانے والا

رات آگے نہ جانے والی

ہجر بھی شور مچانے والا

جانے اب شہر رہے یا نہ رہے

میں تو اِک شخص ہوں جانے والا

شاید اِک غم ہی فقط ہوتا ہے

عمر بھر ساتھ نبھانے والا

اب زمانہ ہی نہیں ہے فرحت

دیپ سے دیپ جلانے والا

فرحت عباس شاہ

                            Sard Sa Haath Milaanay Waala

                 Tu Wahi Hay Na Zamaanay Waala

  Tum Mujhay Yaad Rakho Gay Kaisay

        Jab Khuda Bhi Ho Bhulaanay Waala

 Dukh Ki Mazdoori Mujhay Karni Hay

                          Hay Koi Haath Bataanay Waala

                                     Raat Aagay Na Jaanay Waali

                      Hijr Bhi Shor Machaanay Waala

   Jaanay Ab Shehr Rahay Ya  Na Rahay

    Main Ti Ik Shakhs Hun Jaanay Waala

     Shaayad Ik Gham Hi Faqat Hota Hay

              Umr Bhar Saath Nibhaanay Waala

 Ab Zamaana Hi Nahen Hay FARHAT

                         Deep Say Deep Jalaanay Waala

                                                                      FarhatAbbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -