تو  ابھی تک دلِ ویران میں ہے

تو  ابھی تک دلِ ویران میں ہے
تو  ابھی تک دلِ ویران میں ہے

  

اِ ک یہی روشنی امکان میں ہے

تو  ابھی تک دلِ ویران میں ہے

شور برپا ہے تیری یادوں کا

رونقِ ہجر بیابان میں ہے

پیا راور زندگی سے لگتا ہے

کوئی زندہ دلِ بے جان میں ہے

آج بھی تیرے بدن کی خوشبو

تیرے بھیجے ہوئے گلدان میں ہے

زندگی بھی ہے مری آنکھوں میں

موت بھی دیدۂ حیران میں ہے

دل ابھی نکلا نہیں سینے سے

ایک قیدی ابھی زندان میں ہے

فرحت عباس شاہ

                         Ik Yahi Raoshi Imkaan Men Hay

               Tu Abhi Tak Dil  e  Veraan Men Hay

                    Shor  Barpaa  Hay Teri Yaadon Ka

                    Ronaq  e  Hijr Bayabaan Men  Hay

               Payaar Aor Zindagi Say Lagta Hay

                 Koi Zinda Dil  e  Bayjaan Men Hay

                    Aaj Bhi Teray Badan Ki Khushbu

Teray Bhaijay Huay Guldaan Men Hay

           Zindagi Bji Hay Miri Aankhon Men

        Maot Bhi Deeda  e  Hairaan Men Hay

                  Dil Abhi Nikla Nahen Seenay Say

               Aik  Qaidi Abhi  Zindaan Men Hay

                                                                       Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -