نیاسال شروع، 2013ءبھارت میں ’عام آدمی ‘ کو اقتدار د ے گیا، شیلاڈکشت مستعفی ہونے پر مجبور ہوئیں

نیاسال شروع، 2013ءبھارت میں ’عام آدمی ‘ کو اقتدار د ے گیا، شیلاڈکشت مستعفی ...
نیاسال شروع، 2013ءبھارت میں ’عام آدمی ‘ کو اقتدار د ے گیا، شیلاڈکشت مستعفی ہونے پر مجبور ہوئیں

  

نئی دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان کے پڑوسی ملک بھارت میں 2013ءمیں پہلی مرتبہ الیکشن میں سامنے آنے والی ’عام آدمی پارٹی‘ نے ’جھاڑو‘ پھیر دیا اور 15سال سے دہلی کی وزیراعلیٰ شیلاڈکشت کو مستعفی ہونا پڑا۔اناہزارے کے ساتھی کیچری وال نے عام آدمی کے نام سے اپنی پارٹی بنائی لیکن بعد میں حکمت عملی کے اختلافات کی وجہ سے انّا ہزارے سے علیحدہ ہو گئے تھے۔بھارت میں ہونیوالے انتخابات میں نئی دہلی کے ریاستی انتخابات میں بی جے پی کے ساتھ مل کرعام آدمی پارٹی نے حکومت بنانے میں کامیاب ہوگئی اور شکست تسلیم کرتے ہوئے 15سال سے دہلی کی وزیراعلیٰ شیلاڈکشت مستعفی ہوگئیں ۔کیچری وال نے 28دسمبر2013ءکو وزیراعلیٰ کے عہدے کا حلف اُٹھایا۔دہلی کے رام لیلا میدان میں ہونیوالی حلف برداری کی تقریب میں کجریوال میٹرو کے ذریعہ پہنچے، ان کا کہنا تھا کہ وہ وی آئی پی کلچر کے خلاف رہے ہیں اور ان کا میٹرو پر آنا بھی اسی قدم کا غماز تھا۔ انہوں نے کہا کہ میں وزیر اعلی نہیں بن رہا بلکہ دہلی کے عوام وزیرِاعلی بنے ہیں ،کجریوال کے ساتھ وزیر کے عہدے کا حلف لینے والے عام آدمی پارٹی کے چھ رکن اسمبلی بھی میٹرو سے ہی رام لیلا میدان پہنچے۔حلف لینے کے بعد کجریوال نے کہا کہ یہ عام آدمی کی جیت ہے، یہ حلف دہلی کی عوام نے لیا ہے۔انہوں نے کہا میں یہ جنگ اکیلے نہیں لڑ سکتا،دو سال قبل یہ نہیں سوچا تھا کہ ہم یہ انقلاب برپا کر سکتے ہیں، یہ آزادی کی دوسری جنگ ہے جو عام آدمی جیتا ہے۔ ہمارے پاس تمام مسائل کا حل نہیں ہے اور نہ ہی ہمارے پاس کوئی جادو کی چھڑی ہے لیکن دہلی کے عوام مل کر مسائل کا حل نکال سکتے ہیں۔عام آدمی پارٹی کا انتخابی نشان ”جھاڑو“ تھا اور اُس نے پہلے ہی انتخابی معرکے میں ’جھاڑو سے ووٹ‘ سمیٹ لیے ۔بعض تجزیہ کاروں کے خیال میں نئی دہلی میں کیجری وال کی کامیابی قومی سطح پر انتخابی مہم کا آغاز ہو سکتی ہے۔ ان کی جماعت کا انتخابی نشان جھاڑو ہے جس سے بھارت میں رشوت اور بدعنوانی کے کلچر کو صاف کرنے کے عہد کی نشاندہی ہوتی ہے۔

مزید : بین الاقوامی /اہم خبریں