ایف بی آر اسلام آباد میں اگلے ہفتے رئیل ٹائم انوائس مانیٹرنگ سسٹم نافذ کریگا

ایف بی آر اسلام آباد میں اگلے ہفتے رئیل ٹائم انوائس مانیٹرنگ سسٹم نافذ کریگا

  



اسلام آباد (این این آئی) ایف بی آر جنوری کے پہلے ہفتے میں اسلام آباد کے پچاس لاکھ اور اس سے زیادہ سیلز ٹرن اوور والے بعض ہوٹلوں و ریسٹورنٹس پر رئیل ٹائم انوائس مانیٹرنگ سسٹم (ریمز) کا نفاذ بطور پائلٹ پراجیکٹ کرے گا اور اس کے کامیاب تجربے کے بعد ریمز کا دائرہ کار وفاقی دارالخلافہ کے ان تمام ہوٹلوں و ریسٹورنٹس تک بڑھایا جائے گا جن کا سیلز ٹرن اوور پچاس لاکھ روپے یا اس سے زیادہ ہو گا۔ تاہم پچاس لاکھ سے کم سیلز ٹرن اوور والے ہوٹلوں و ریسٹورنٹس پر ریمز لاگو نہیں ہو گا۔ ان خیالات کا اظہار ریجنل ٹیکس آفس اسلام آباد کے چیف کمیشنر مصطفی سجاد حسن نے اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری میں ہوٹلوں و ریسٹورنٹس مالکان کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ ریجنل ٹیکس آفس اسلام آباد کی کمیشنر محترمہ آئشہ فاروق، چیف سیلز ٹیکس ظہیر قریشی اور پرال کے انجینئر افتخار علی بھی اس موقع پر ان کے ہمراہ تھے۔ اجلاس میں ہوٹلوں و ریسٹورنٹس مالکان کو ریمز کے بارے میں تفصیلی پرزینٹیشن دی گئی اور ان کو بتایا گیا کہ اس سسٹم کو کیسے چلانا ہے۔ مصطفی سجاد حسن نے کہا کہ ریمز، جو ویب بیسڈ سسٹم ہے، کے نفاذ کا مقصد ٹیکس دہندگان کو سہولت فراہم کرنا ہے کیونکہ اس کے لاگو ہونے سے محکمہ ٹیکس اور ٹیکس دہندگان کے درمیان براہ راست روابط کا سلسلہ کم ہو گا اور ٹیکس اہلکاروں کی طرف سے ٹیکس دہندگان کو کوئی پریشانی نہیں ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ جن ہوٹلوں و ریسٹورنٹس پر ریمز لاگو ہو گا ان کا کوئی سیلز آڈٹ نہیں کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ریسٹورنٹس مالکان کو اس سسٹم کے نفاذ سے خوفزدہ ہونے کی کوئی ضرورت نہیں کیونکہ یہ صرف ان کی سیل کو مانیٹر کرے گا اور سیلز ٹیکس اکھٹا کرنے میں معاون ثابت ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ایف بی آر بتدریج ایسے آئی ٹی سسٹم معیشت کے دیگر شعبوں کیلئے بھی متعارف کرائے گا تا کہ محکمہ ٹیکس اور ٹیکس دہندگان کے درمیان براہ راست رابطہ کم کیا جائے اورسیلز ٹیکس کو بہتر کیا جا سکے۔ انہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ سیلز ٹیکس میں اضافے کی صورت میں اس کے ریٹ کو بھی کم کیا جا سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ محکمہ ریسٹورنٹس کے ٹیکنیکل سٹاف کو ریمز کے بارے میں ضروری تربیت بھی فراہم کرنے کو تیار ہے تا کہ وہ اس سسٹم کو چلانے میں سہولت محسوس کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس سسٹم کے لاگو ہونے کے بعد اس میں جو بھی خرابیاں یا مشکلات پیش آئے گی ایف بی آر کی ٹیکنیکل ٹیم ان کا مداوا کرے گی۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے اسلام آباد چیمبرکے صدر شیخ عامر وحید نے کہا کہ ریمز کا اجراء پہلے ٹیکس نادہندگان سے کیا جائے اور اس کے بعد اس نظام کو بتدریج دیگر ہوٹلوں و ریسٹورنٹس پر لاگو کیا جائے ۔ انہوں نے مزیدکہا کہ اس سسٹم کے نفاذ کیلئے کم از کم تین چار ماہ کا عرصہ دیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ ایف بی آر تاجر برادری کو اعتماد میں لے کر ٹیکس ریونیو کو بہتر کرنے کیلئے نئے سسٹم متعارف کرائے تا کہ تاجروں و صنعتکاروں کو غیر ضروری خوف و ہراس سے بچایا جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ ریمز کے اجراء کرنے سے پہلے تمام متعلقہ ہوٹلوں و ریسٹورنٹس کے ٹکنیکل سٹاف کو ٹریننگ فراہم کی جائے تا کہ وہ اس سسٹم کو نافذ کرنے میں مثبت کردار ادا کر سکیں۔ اجلاس میں اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی ذیلی کمیٹی برائے ٹیکس کے چیئرمین نعیم صدیقی اور ممبر میاں محمد رمضان سمیت مقامی ریسٹورنٹس ایسوسی ایشن کے نامزد نمائندگان ریمز کے نفاذ کیلئے ایف بی آر کی ٹیم کی معاونت کریں گے۔

مزید : کامرس


loading...