اسلامی تعلیمات کے نفاذ سے ہی بحرانوں سے نجات حاصل کی جا سکتی ہے، عبد الغفار روپڑی

اسلامی تعلیمات کے نفاذ سے ہی بحرانوں سے نجات حاصل کی جا سکتی ہے، عبد الغفار ...

  



لاہور(پ ر)اسلام کی تعلیمات کے نفاذ سے ہی ملک میں جاری سیاسی انتشار اور دہشتگردی جیسے خطرناک اور گھمبیر مسائل سے نجات حاصل کی جا سکتی ہے۔ دین سے دوری ہماری ذلت و رسوائی کا سب سے بڑا سبب ہے۔ تمام تر بحرانوں اور پریشانیوں سے نجات کا حل محض اللہ کے احکام اور تعلیمات رسول صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی پیروی میں160ہی مضمر ہے۔ان خیالات کا اظہار جماعت اہل حدیث پاکستان کے امیر حافظ عبدالغفار روپڑی نے جامعہ قدس لاہور میں خطبہ جمعہ ارشاد فرماتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ خلفاء راشدین نے موجودہ حالات سے بھی ابتر صورتحال میں اللہ کے دین اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان کی پیروی کرتے ہوئے اپنے قدم جمائے رکھے اور اللہ تعالیٰ نے انہیں کامیابی سے نوازا۔ آج ہم ہر طرح کے وسائل اور آزادی ہونے کے باوجود اللہ کے احکام سے پوری طرح منہ موڑ چکے ہیں جس کے باعث دنیا بھر کے مسلمان ہر طرح کے دباؤ کا شکار ہیں۔ کفار طاقتیں اور ان کے حواری اسلام کے خلاف پراپیگنڈوں میں دن رات مصروف عمل ہیں اور مسلمانوں کے گرد دائرہ حیات تنگ کرنے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ امت مسلمہ کا اتحادو یکجہتی وقت کی اہم ترین ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری نوجوان نسل ہماری قوم کا سرمایہ ہے۔ نوجوانوں کو چاہیے کہ بے راہ روی کا شکار ہونے کی بجائے کتاب و سنت کی طرف پلٹیں ۔ تاکہ دنیا میں اسلام کی ترویج و اشاعت کے کام کو مضبوط سے مضبوط تر کیا جا سکے۔اس موقع پر ملک و قوم کی سلامتی اور بقا کے لیے خصوصی دعا ئیں بھی کی گئیں۔دریں اثناء حافظ عبدالغفار روپڑی نے گفتگو کرتے ہوئے بھارت کی جانب سے سیالکوٹ سیکٹر میں ایک بار پھر سیز فائر کے معاہدہ کی خلاف ورزی کی شدید الفاظ میں مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی جانب سے بلا اشتعال فائرنگ کا عالمی برادری سختی سے نوٹس لے اور اقوام متحدہ سمیت امن اور حقوق انسانیت کے علمبردار دیگر تمام ادارے بھارتی جارحیت کی روک تھام کے لیے ہنگامی اقدامات کریں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی طرف سے امن کے قیام کی کوششوں اور فائر بندی کی خلاف ورزی پر پاکستانی افواج کی خاموشی کو کمزوری نہ سمجھا جائے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4