کالج آف فزیشنز کے کونسل ممبران کے الیکشن نتائج عدالتی فیصلے سے مشروط

کالج آف فزیشنز کے کونسل ممبران کے الیکشن نتائج عدالتی فیصلے سے مشروط

  



لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے کالج آف فزیشنز اینڈ سرجنز کے کونسل ممبران کے الیکشن نتائج عدالتی فیصلے سے مشروط کر دیئے، عدالت کا انتخابات میں حصہ لینے کے خواہشمند ڈاکٹر عامر بندیشہ کے کاغذات نامزدگی وصول کرنے کا حکم بھی دیا ہے ۔ جسٹس شہزادہ مظہر نے ڈاکٹرعامر بندیشہ کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کے وکیل نوشاب اے خان نے موقف اختیار کیا کہ کالج آف فزیشنز اینڈ سرجنز پاکستان کے 20 کونسل ممبروں کے انتخابات 21فروری کو ہو رہے ہیں مگر کالج کے صدر ظفر اللہ چودھری اور سیکرٹری مصطفی آرائیں نے کالج پر اپنا قبضہ برقرار رکھنے کے لئے اور انتخابات میں نئے فزیشنز کاراستہ روکنے کے لئے متنازع الیکشن شرائط جاری کر دی ہیں جس کے تحت کالج کے کونسل ممبروں کیلئے عمر کی حد 40سال اور بطور فزیشن کام کرنے کا تجربہ 8 سال ہونے کی شرط عائد کی گئی ہے جو غیرقانونی ہے، انہوں نے عدالت کو بتایا کہ کالج آف فزیشنز سرجنز آرڈیننس میں کونسل ممبروں کے انتخابات لڑنے کے لئے ایسی کوئی شرط موجود نہیں ہیں اور کالج انتظامیہ درخواست گزار ڈاکٹر عامر بندیشہ کے کاغذات نامزدگی بھی وصول نہیں کر رہی ، انہوں نے استدعا کی کہ کالج انتظامیہ کی طرف سے کونسل ممبروں کے انتخابات لڑنے کے لئے عائد عمر اور تجربے کی شرائط کالعدم کی جائیں، ابتدائی سماعت کے بعد عدالت نے کالج انتظامیہ کو حکم دیا کہ انتخابات میں درخواست گزار ڈاکٹر عامر بندیشہ کے کاغذات وصول کئے جائیں، عدالت نے سی پی ایس پی کے کونسل ممبروں کے انتخابات کے نتائج کو بھی عدالتی فیصلے سے مشروط کرتے ہوئے کالج کے صدر اور سیکرٹری سے 17 مارچ تک جواب طلب کر لیا۔

مزید : صفحہ آخر


loading...