روپے کی قدر میں کمی سے مہنگائی میں مزید اضافہ ہو گا، عرفان یوسف

روپے کی قدر میں کمی سے مہنگائی میں مزید اضافہ ہو گا، عرفان یوسف

لاہور( پ ر ) روپے کی قدر میں کمی سے مہنگائی میں مزید اضافہ ہو گا،شرح سود 6فیصد کر دی گئی ہے ۔غیر ملکی قرضوں میں جولائی تا دسمبر 600 ارب روپے کا اضافہ ہو اہے۔صرف دسمبر میں 300ارب کے قرضے لیے گئے، موجودہ دور حکومت میں غیر ملکی قرضوں کا بوجھ 4ہزار 200ارب اضافے سے ریکارڈ 9ہزار ارب تک پر پہنچ گیا ہے۔پاکستانی برآمدات کا حجم 25 بلین ڈالرز سے کم ہو کر 20 بلین ڈالرز ہو گیا ہے اورتجارتی خسارہ مسلسل بڑھ رہا ہے۔ان خیالات کا اظہار فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری(ایف پی سی سی آئی) کے نائب صدر و ریجنل چےئرمین چوہدری عرفان یوسف نے حال ہی میں جاری سٹیٹ بینک مانیٹری پالیسی پر اپنارد عمل دیتے ہوئے کیا ۔پا کستا نی رو پے کی قد رمیں لگ بھگ 5فیصد کمی ہو ئی ہے ۔انہوں نے مزید کہاکہ بین الاقوامی معاہدوں میں پاکستانی تاجر برادری کو نظر انداز نہ کیا جائے۔معاشی ترقی اور صنعت تجارت کے لئے مناسب حکمت عملی انتہائی ضروری ہے،حکومت کو تجارتی معاہدوں کو دوبارہ زیر غور لانا ہوگی۔انہوں نے مزید کہاکہ تجارت میں مسلسل کمی میں بہت سے عناصر شامل ہیں۔جن میں امپورٹ اور ایکسپورٹ کے طریقے کار ان سے متعلقہ محکموں کا تعاون قرضوں تک رسائی فرسودہ ٹیکنالوجی اور فنی مہارت کی کمی ،کرپشن اور سرحدوں سے غیر قانونی تجارت شامل ہیں۔ آنے والے پالیسی میں تجارتی رکاوٹوں کوحل کرنے کے ساتھ ساتھ عالمی منڈیوں تک رسائی اور نئی منڈیوں کی تلاش کے لئے خصوصی حکمت عملی کی ضرورت ہے۔ جی ایس پی پلس سٹیٹس سے فائدہ اٹھانے کے لئے معلو ماتی کاوشیں کرنا ہوگی ۔حکومت کو تجارتی معاہدوں کو دوبارہ زیر غور لانا چاہیے ۔ایکسپورٹ کو بڑھانے اور تاجروں کے اعتماد کو بحال کرنے کے لئے سی پیک معاہدوں میں پاکستانی کاروباری برادری کو بھی وہی سہولیات دینی ہوگی جو غیرملکی تاجر برادری کو دی جا رہی ہے اگر تاجروں کے یہ مسائل حل نہ ہوئے تو معاشی مشکلات مزید بڑھیں گی۔

مزید : کامرس


loading...