لیہ میں وزیراعلیٰ کا دبنگ خطاب،چوک اعظم چوبارہ ماڈل سٹی ،30،30کروڑ کا اعلان

لیہ میں وزیراعلیٰ کا دبنگ خطاب،چوک اعظم چوبارہ ماڈل سٹی ،30،30کروڑ کا اعلان

وزیر اعلی پنجاب میاں محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ پاکستان کو عوام کی طاقت سے عظیم اور طاقت ور ملک بنائیں گے عوام کا پیسہ عوام کے لیے مسلم لیگ (ن) کا منشور ہے پاکستان ایسا ہوگا جیسا حضرت قائد اعظم اور علامہ اقبال چاہتے تھے۔ لیہ میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے عمران خان پر سخت تنقید کی اورکہا کہ 24 گھنٹے جھوٹ بولنے والا اور سر سے پاؤں تک کرپشن میں ملوث عمران اور زرداری عوام سے محبت کا ڈھونگ رچا کر کس منہ سے عوام کے پاس جائیں گے مسلم لیگ (ن) عوام کی نجات دہندہ جماعت ہے ایسا پاکستان چاہتے ہیں جہاں انصاف ہو، لوگ خوشحال ہوں کارخانے چلیں کھلیان سر سبز و شاداب ہوں غریب اور امیر میں کوئی فرق نہ ہو 2013 میں عوام نے جو مینڈیٹ دیا اسے پورا کرنے کی ہر ممکن کوشش کی وزیر اعلی پنجاب نے کہا کہ اگر شمالی پنجاب میرا دماغ ہے تو جنوبی پنجاب میرا دل ہے دماغ شمالی پنجاب کے لوگوں بارے سوچتا ہے تومیرا دل جنوبی پنجاب کے عوام کے لیے دھڑکتا ہے، میں اپنے دل و دماغ کے بغیر کیسے رہ سکتا ہوں پانچ سال میں 70 سال کی محرومیوں کو ختم کرنے کی کوشش کی اور دھرنا خان، جھوٹے خان لوگوں کو بہکا کر ترقی کا سفر نہ روکتا تو حالات بہت مختلف ہوتے لیکن ہم نے اس چیلنج کو قبول کیا الحمد للہ آج ہم بجلی کے بحران پر قابو پا کر عوام کے سامنے سرخرو ہیں عمران اور زرداری بتائیں کہ انہوں نے کے پی کے اور سندھ کے عوام کو کیا دیا وزیر اعلی پنجاب نے لیہ، چوک اعظم اور چوبارہ کو ماڈل سٹی بنانے کے لیے 30،30 کروڑ روپے کی گرانٹ دینے کا اعلان کیا اسی طرح بہادر کیمپس کو مکمل یونیورسٹی کا درجہ دینے اور ٹیکنیکل کالج کو یونیورسٹی سے منسلک کرنے کا اعلان کیا وزیر اعلی پنجاب نے کہا کہ کسانوں کی طرح گنے کی قیمت نہ ملنے پر میں بھی پریشان ہوں لیکن میں چپ نہیں بیٹھا کسان کو اس کا حق دلا کر دم لوں گا کسان کا استحصال کرنے میں اگر میرے کسی عزیز کی مل بھی شامل پائی گئی تو میں رشتہ داری کی بھی پرواہ نہیں کروں گا انہیں جیل بھجوانا پڑا تو جھجکوں گا نہیں ۔

سابق وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ جمہوری عمل کو نقصان پہنچانے والے کبھی ملک کے خیر خواہ نہیں ہو سکتے۔ پیپلز پارٹی نے ہمیشہ جمہوریت کو مستحکم کیا اور کوشش بھی کی وہ گذشتہ روز نواحی گاؤں چوغطہ پنجوانہ میں مہر طارق سعید سنپال مرحوم کی رہائش گاہ پر گفتگو کر رہے تھے پیپلز پارٹی کی رہنما نتاشہ دولتانہ اور مہر عمران حیدر سنپال بھی اس موقع پر موجود تھے۔ سید یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ عمران خان الزامات کی سیاست کے ماہر ہیں جبکہ سیاست برداشت اور تحمل مزاجی کا نام ہے انہوں نے کہا کہ میثاق جمہوریت ایک سیاسی دستاویز ہے اسے کبھی ردی کی ٹوکری میں نہیں پھینکا جا سکتا انہوں نے کہا کہ حالات کچھ بھی ہوں ووٹ کے تقدس اور احترام کا ہر صورت خیال رکھنا چاہیے انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی نے کبھی انتقامی سیاست نہیں کی۔

پیپلز لائرز فورم کی جانب سے ہنگامی اجلاس میں جنوبی پنجاب کو وسائل سے مالا مال علاقہ قرار دیاگیا لیکن پھر بھی وسائل سے اس خطے کو محروم رکھا جاتا ہے سول ججز کے امتحانات کے لئے 3648 وکلاء نے حصہ لیا تھا جن میں سے صرف 21 وکلاء کو پاس کیا گیا ہے جن کا تعلق اپر پنجاب سے ہے اور ان 21 امیدواروں کا تانا بانا اعلیٰ شخصیات سے ملتا ہے اس خطے سے مسلسل زیادتی کی جا رہی ہے اور اس بات سے وکلاء میں شدید غم و غصہ کی لہر ہے اور انہوں نے کہا کہ وہ مطالبہ کرتے ہیں کہ اس خطے کے وسائل اسی خطے میں استعمال کئے جائیں تاکہ اس خطے کے لوگوں سے احساس محرومی ختم ہو سکے۔ اجلاس میں سینئر وکیل مرزا عزیز اکبر بیگ، شیخ غیاث الحق، خواجہ نور مصطفی، مس فیروزہ فیض، ملک سرفراز احمد، ملک عمران بھٹہ، مس نگینہ مظفر ہراج، مہر نجف علی چاون، نجمہ جٹ راں، جاوید ہاشمی، مہر اقبال سرگانہ، خالد مترو، فیاض بھٹہ، واجد رضوی نے شرکت کی۔

ملک کے دیگر حصوں کی طرح ملتان سمیت وسطی اور جنوبی علاقوں میں بھی شدید دھند کا راج برقرار ہے اور خشک سردی نے ایندھن کی قیمتوں کو آگ لگا دی ہے ملتان میں گذشتہ روز بھی حد بصارت کم ہونے کی وجہ سے شاہراہوں پر معمولات بری طرح متاثر ہوئے ہیں دھند کی وجہ سے شاہراہوں پر ٹریفک، پروازوں اور ٹرینوں کا شیڈول بھی متاثر ہوا ہے خشک سردی کی وجہ سے کھانسی، نزلہ، بخار کی بیماریوں کے پھیلاؤ میں ایک بار پھر اضافہ ہو گیا ہے بچے ان بیماریوں کی زد میں زیادہ ہیں۔ ہوا میں نمی 100 فیصد ہو جانے سے دمہ اور سانس کی بیماریوں میں مبتلا افراد کو شدید مشکلات کا سامنا ہے ملتان کے نواحی علاقوں میں دمہ کے امراض میں مبتلا افراد کے لئے ادویات اور خصوصی آلات کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا گیا ہے سخت سردی کی وجہ سے تعلیمی اداروں میں طلباء کی حاضری بہت کم رہی دفاتر میں سرکاری ملازمین بھی سردی کی وجہ سے غائب رہے ایل پی جی، خشک لکڑی اور کوئلے کی قیمتوں میں بھی اضافہ کر دیا گیا ہے سخت سردی کی وجہ سے خشک میوہ جات، کوئلہ اور لکڑی کی قیمتوں کو آگ لگا کر شہریوں کی چیخیں نکلوا دی گئیں۔ محکمہ موسمیات کے مطابق دھند اور سخت سردی آج اور کل بھی برقرار رہے گی شدید سردی کے باوجود واپڈا نے بھی اپنی روش تبدیل نہ کی اور بجلی کی طویل لوڈشیڈنگ جاری رہی جس سے کمرشل و گھریلو صارفین کو سخت دشواری کا سامنا کرنا پڑا اس کے علاوہ گیس بندش اور پریشر کی کمی بھی جاری رہے۔

درگاہ حضرت غوث بہاء الدین زکریاؒ ، حضرت شاہ رکن عالمؒ اور حضرت بی بی پاک مائی کے سجادہ نشین مخدوم شاہ محمود حسین قریشی نے بھارتی حکومت سے کہا ہے کہ وہ اولیاء اللہ کے مزارات پر حاضری کے لئے پاکستان آنے والے زائرین کے لئے سرحدوں کا راستہ اوپن کرے اور ویزہ کی پابندیاں نرم کی جائیں۔ ہندوستان سے آنے والے زائرین کو حکومت پاکستان اور پاکستان کے عوام کی جانب سے خوش آمدید کہتا ہوں صوبوں کے درمیان محبت اور وفاق کو مضبوط دیکھنا چاہتے ہیں مشائخ اور سجادگان کا اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے حضرت رکن عالمؒ کے سالانہ عرس کے دوسرے روز قومی شاہ رکن عالم کانفرنس کی دوسری نشست میں صدارتی خطاب میں کیا جس میں درگاہ حضرت مولانا حامد علی خان کے سجادہ نشین صاحبزادہ قاری احمد میاں خان نقشبندی، درگاہ حضرت کوٹ مٹھن کے سجادہ نشین خواجہ معین الدین محبوب کوریجہ، علامہ خادم حسین سعیدی، علامہ ڈاکٹر محمد ارشد بلوچ، علامہ ڈاکٹر محمد صدیق خان قادری، قاری محمد ظفر کوثر، علامہ محمد صادق سیرانی، قاری رکن الدین حامدی، مولانا کمال الدین آریسر (انڈیا)، حافظ علی جان، حافظ اللہ، خالد رضا نے خطاب جبکہ سندھی زائرین حاجی نذیر احمد عالمانی، قاری احمد بخش سعیدی اور ملتان کے معروف ثناء خواں حمید نواز عاصم، احمد نواز عصیمی، غلام شبیر قادری نے ہدیہ نعت و سلام پیش کیا۔ حضرت شاہ رکن عالمؒ کے سالانہ عرس کے پہلے روز سجادہ نشین مخدوم شاہ محمود حسین قریشی کی حکمت عملی کام آگئی۔ چھوٹے بھائی مخدوم مرید حسین قریشی نے بھائی کے ہمراہ دربار پر چادر چڑھائی اس طرح طویل عرصہ کے بعد پہلا موقع ہے کہ عرس کے موقع پر میڈیا کے لئے کوئی بریکنگ نیوز نہیں بنی، واضح رہے کہ حضرت شاہ رکن عالمؒ کے سالانہ عرس میں دربار پر غسل کا وقت 10 بجے صبح تھا مگر مخدوم شاہ محمود حسین قریشی اور مخدوم زادہ زین قریشی 20 منٹ قبل دربار شریف پہنچے اور مزار کو غسل دیا جبکہ مخدوم مرید حسین قریشی ٹھیک 9 بجکر 56 منٹ پر مزار کے احاطہ میں پہنچے تو مخدوم شاہ محمود قریشی نے بھائی کو چادر چڑھانے کی پیشکش کی جو وہ اپنے ہمراہ لائے تھے اس طرح مخدوم شاہ محمود حسین قریشی کی جانب سے مخدوم مرید حسین قریشی کو پہلے چادر چڑھانے کی دعوت کام آگئی، اس طرح دونوں بھائیوں نے باری باری اپنی طرف سے تیار کرائی گئیں چادریں مزار پر چڑھائیں اور دونوں بھائی اکٹھے دعا میں بھی شریک ہوئے اسی طرح چادر پوشی کا مرحلہ خوش اسلوبی سے طے ہوا بعد میں مخدوم مرید حسین قریشی سے ملتے ہوئے درگاہ حضرت مولانا حامد علی خان والے راستے سے اپنے ساتھیوں کے ہمراہ واپس چلے گئے اور انہوں نے درگاہ کے احاطہ میں ہونے والی قومی شاہ رکن عالم کانفرنس میں شرکت نہیں کی۔

مزید : ایڈیشن 1


loading...