استعفوں کی سیاست پر مردائی چھا گئی، تحریک انصاف میں اختلاف، جماعت اسلامی الگ

استعفوں کی سیاست پر مردائی چھا گئی، تحریک انصاف میں اختلاف، جماعت اسلامی الگ

خیبر پختونخوا کی حکمران جماعت تحریک انصاف اسمبلیوں سے استعفوں بارئے واضح طور پر منقسم نظر آرہی ہے تحریک انصاف کے اراکیں پارلیمنٹ کی اکثریت اسمبلیوں سے استعفوں کے فیصلے کے حق میں نہیں ہیں جسکی ٹھوس وجہ ساڑھے چار برسوں میں پی ٹی آئی اراکین اسمبلی کی طرف سے اپنے حلقوں اور صوبے بھر میں کوئی قابل ذکر ترقیاتی کام نہ کرنا ہے اب سیاسی بحران اٹھنے کے بعد صوبائی حکومت اور اس کے اراکین اسمبلی نے خزانے کے منہ کچھ اس طرح کھول دےئے ہیں کہ صوبہ بھر کی سٹرکوں اور گلیوں کو ادھیڑ کے رکھ دیا گیا حکومت اور اس کے اراکین ترقیاتی منصوبوں کی جلد از جلد تکمیل اور اپنے ناموں کی تختیاں لگانے کیلئے کوشاں ہیں حکومتی اراکین کے اس روئیے کے باعث تحریک انصاف کے قائد عمران خان اسمبلیوں سے مستعفی ہونے کے پر جوش اعلان کے بعد اچانک خاموش ہو گئے اور نہ صرف میڈیا پر آنا کم کردیا بلکہ استعفوں کے معاملے پر بات بھی کرنے سے گریز کرتے ہیں بظاہر ایسا لگتا ہے کہ عمران خان اپنے اراکین کے عدم تعاون کی وجہ سے اندر سے ٹوٹ چکے ہیں دوسری طرف پیپلز پارٹی کے صدر آصف زرداری اور جے یو آئی کے قائد مولانا فضل الرحمٰن خیبرپختونخوا میں درپردہ غیر معمولی طور پر متحرک نظر آتے ہیں آصف زرداری نے پاکستان پیپلز پارٹی کے صوبائی رہنماؤں کا اھم اجلاس اسلام آباد میں طلب کیا جس کے اعلامیے کے مطابق آصف زرداری نے پارٹی اراکین کو سینٹ الیکشن کے لئے متحرک ہونے کی ھدایت کی مگر دوسری طرف زرداری کے حمایت یافتہ مولانافضل الرحمٰن نے ممکنہ عدم اعتماد تحریک کی کامیابی کیلئے اراکین اسمبلی کی حمایت حاصل کرنے کی کوشیش تیز کر دیں جے یو آئی کو اس سلسلے میں اپنے مقصد میں اس وقت اھم کامیابی ملی جب مخلوط حکومت میں شامل جماعت اسلامی نے عدم اعتماد کی تحریک پیش ہونے کی صورت میں صوبائی حکومت کی حمایت سے دو ٹوک الفاظ میں انکار کر دیا جماعت اسلامی کی پالیسی میں واضح تبدیلی سے صوبائی حکومت کو شدید دھچکا لگا جس کے رد عمل میں وزیر اعلٰی پرویز خٹک سمیت بعض وزراء اور اراکین اسمبلی نے جماعت اسلامی کے متعلق سخت الفاظ استعمال کئے جماعت اسلامی کی طرف سے جے یو آئی کے موقف کی حمایت سے پی ٹی آئی کے ناراض اراکین کو حوصلہ ملا بعض اطلاعات کے مطابق پی ٹی آئی کے ناراض اراکین اسمبلی نے عدم اعتماد کی تحریک کی ممکنہ کامیابی کیلئے جے یو آئی کے ساتھ رابطے استوار کر لئے ہیں خیال ہے کہ آصف زرداری بلوچستان کی طرح خیبرپختونخوا میں کوئی بڑی سیاسی گیم کھیل کر سینٹ کے انتخابات میں غیر معمولی نشستیں خاصل کر سکتے ہیں اور پی ٹی آئی جو کہ اس وقت صوبائی اسمبلی میں اکثریت رکھتی ہے اسے سینٹ کی بعض نشستوں سے محروم کر کے پی ٹی آئی اور جے یو آئی کو فائدہ دلوایا جاسکتا ہے۔

تحریک انصاف اور صوبائی حکومت ممکنہ عدم اعتماد کی تحریک سے نمٹنے کیلئے تیاری کر چکی ہے اب بظاہرا یسالگ رہا ہے کہ عمران خان کی طرف سے صوبائی اسمبلی کی تحلیل کے ممکنہ اعلان کو زائل کرنے کیلئے عدم اعتماد کی تحریک پیش کی جائے گی جس کے بعد وزیر اعلٰی کے پاس اسمبلی تحلیل کرنے کا اختیار ختم ہو جائے گا اور بلوچستان کی طرح خیبرپختونخوا اسمبلی میں بھی ان ہاؤس تبدیلی کیلئے راستہ ہموار ہو جائے گا اگر ایسا ہو گیا تو سیاسی منظر نامے پر جے یو آئی نمایاں نظر آئے گی مگر اس ساری گیم کا ماسٹر مائینڈ اسلام آباد میں خاموش بیٹھا ملے گا جو کہ آصف زرداری ہے بہر خال اب آنے والے دنوں میں دیکھنا ہو گا کہ اس سارئے کھیل میں عمران خان کیا پوزیشن اختیار کرتے ہیں نئے سیاسی کھیل میں زرداری بھی اپنے مقاصد کے حصول کیلئے پر امید نظر آتے ہیں۔

عوامی نیشنل پارٹی نے طویل عرصہ سے قائم اپنی خاموشی کو توڑتے ہوئے پشاور میں اپنے پاور شو کا بھر پور مظاہرہ کیا باچا خان اور ولی خان کی برسی کی مناسبت سے پشاور میں بہت بڑے جلسے کا اہتمام کیا گیا جس میں صوبے بھرسے کارکنوں کی غیر معمولی تعداد نے شرکت کی اس جلسے نے اے این پی کی بے جان سیاست میں نئی روح پھونک دی ہے اے این پی کے قائد اسفندیار ولی خان نے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے نام لئے بغیر عمران خان سمیت اپنے مخالفین پر تنقید کی اسفندیار ولی خان کا کہنا ہے کہ پارلیمنٹ میں بیٹھے شخص کا پارلیمان پر لعنت بھیجنا شرمندگی کا مقام ہے‘ اسفندیار ولی خان نے واضح کیا کہ جمہوری اداروں پر کسی بھی حملہ کی کوشش کی بھرپور مخالفت کرینگے ہمارے ملک خصوصاً صوبے میں اسلام کے نام پر اسلام آباد کی سیاست کی جا رہی ہے اسفندیار ولی خان نے فاٹا کے حوالے سے اپنا مؤقف دہراتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ الیکشن سے قبل فاٹا کو صوبے میں شامل کیا جائے اسفندیار ولی خان نے مخالفین پر تنقید کے دوران اخلاقیات کا دامن ہاتھ سے چھوڑنے نہیں دیا ان کا یہ جلسہ بہرحال ایک کامیاب اور بہت بڑا جلسہ تھا اے این پی کے اس جلسے کو باقاعدہ انتخابی مہم کا آغاز سمجھا جائے تو غلط نہ ہو گا۔

مزید : ایڈیشن 1


loading...