امریکی یونیورسٹیوں نے افغان بچوں کوعسکریت پسند بنایا ، احسن اقبال

امریکی یونیورسٹیوں نے افغان بچوں کوعسکریت پسند بنایا ، احسن اقبال

اسلام آباد (این این آئی)وفاقی وزیرداخلہ پروفیسر احسن اقبال نے کہا ہے کہ طالبان کا ابھرنا ایک مذہبی ہی نہیں سیاسی معاملہ تھا ٗخطے میں امن واستحکام کیلئے ہمیں لارجر پولیٹکل ایشوز کو دیکھنا ہوگا ٗ ان کو حل کئے بغیر امن قائم نہیں ہوسکتا ٗ انتہا پسند مسلمانوں کے تنازعات کا فائدہ اٹھا رہے ہیں ٗمسلم امہ کو اپنے مسائل پر توجہ دینی چاہیے ٗ امریکی یونیورسٹیوں نے افغان پناہ گزینوں کے بچوں کو سوویت یونین سے لڑائی کیلئے عسکریت پسند بنایا ٗ جنگ ختم ہونے کے بعد امریکہ اور یورپ نے خود ٹرافیاں لیں ٗ ہمیں مسائل سے نمٹنے کیلئے چھوڑ دیا ٗداعش مدارس کی پیداوار نہیں، امریکہ اور یورپ سے تعلیم یافتہ نوجوان شام میں لڑ رہے ہیں ٗنوجوانوں کی بحالی اور ان کو ڈی ریڈیکلائز کرنے کیلئے بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے۔ وہ مقامی ہوٹل میں ’’افغانستان اور پاکستان میں مدارس کا کردار‘‘ کے موضوع پر سٹڈی رپورٹ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کر رہے تھے جس کا اہتمام سینٹر فار ریسرچ اینڈ سکیورٹی سٹڈیز نے کیا تھا۔ وزیر داخلہ نے سٹڈی کے انعقاد پر سی آر ایس ایس کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ مدارس کی تاریخ بہت پرانی ہے اور یہ اسلامی تہذیب کا اہم حصہ ہیں۔ مدارس نے فزکس، ریاضی، کیمسٹری اور الجبرا کے علوم میں بڑے بڑے نام پیدا کئے ٗمدرسہ ہی ہر قسم کی تعلیم کا مرکز تھا، نوآبادیاتی دور میں مذہبی اور دنیاوی تعلیم کی تفریق پیدا ہوئی۔ 1979ء سے مدارس کا کردار تبدیل ہوا اور ان کا کردار کمیونزم کے خلاف جہاد کیلئے افرادی قوت پیدا کرنا ہوگیا ٗ صرف مدرسہ کو بنیاد پرست نہیں بنایا گیا بلکہ امریکی یونیورسٹیوں نے افغان پناہ گزینوں کے بچوں کو بھی بنیاد پرست اور عسکریت پسند بنایا لیکن جنگ ختم ہوتے ہی سب نکل گئے، یورپ اور امریکہ نے یہ جنگ جیتنے پر ٹرافیاں لیں اور اپنے معاملات حل کرلئے ٗ پاکستانی قوم کی قیمت پر یہ جنگ لڑی گئی لیکن اور پاکستان کو صورتحال سے نمٹنے کیلئے تنہا چھوڑ دیا گیا ، یورپ اور امریکہ ان مسائل کے ذمہ دار ہیں جن کا ہم شکار ہیں ٗ اب ان کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ مسائل سے نمٹنے میں تعاون کریں۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ طالبان کا ابھرنا ایک مذہبی ہی نہیں سیاسی معاملہ تھا ۔ طالبان کے بعد القاعدہ اور اب داعش وجود میں آگئی ہے ٗ داعش مدارس کی پیداوار نہیں بلکہ ماڈرن یونیورسٹیوں سے تعلیم یافتہ لوگ اس میں شامل ہوئے ہیں۔ امریکہ اور یورپ کے نوجوان شام میں لڑ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انتہا پسندی اور بنیاد پرستی ناانصافی اور تعصب و امتیاز سے جنم لیتی ہے۔

احسن اقبال

مزید : صفحہ اول


loading...