ضلع کونسل شانگلہ اجلاس،سرکاری اداروں میں سیاسی مداخلت بند کرنے کا مطالبہ

ضلع کونسل شانگلہ اجلاس،سرکاری اداروں میں سیاسی مداخلت بند کرنے کا مطالبہ

الپوری(ڈسٹرکٹ رپورٹر)شانگلہ کے ضلع کونسل کا اجلاس میں سرکاری اداروں میں سیاسی مداخلت بند کرنے سمیت ملاکنڈ ڈویژن بھر میں ٹیکسوں کی آڑ میں کرش پلانٹس کی بندش کو ختم کرکے یہاں کے غریب عوام کو روزگار دیا جائے ۔شانگلہ سے ٹرانسفر کئے گئے فنانس کے پلاننگ آفیسروں کا تبادلہ منسوخ کرکے شانگلہ واپس لایا جائے کے متفقہ قراردیں منظور ۔ منگل کے روز الپوری کالج اڈیٹوریم ہال میں ضلع کونسل کا اجلاس زیر صدارت سپیکر ضلع کونسل کامران اقبال منعقد ہوا جس میں کثیر تعداد میں ارکان کونسل نے شرکت کی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ضلع ناظم نیاز احمد خان نے کہا کہ ضلع کونسل کے وقار پر کوئی سمجھوتا نہیں کرینگے شانگلہ میں سیاسی مداخلت کے زریعے ترقیاتی منصوبوں کے راہ میں روکاوٹیں ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے ہماری بدقسمتی ہے کہ جہاں پر مخالف سیاسی جماعت کا حکومت ہوں اُس کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جاتا ہے ضلع کی ترقی کیلئے تمام سیاسی پارٹیوں کو ساتھ لیکر چلنے کو تیار ہیں ہرممبر کی قدر کرتے ہیں۔ ضلع کونسل اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے حاجی سلطان نبی ، صابررحمن ، الطاف گلاب شاہپوری ،زاکراللہ خان پورن،شیرعلی خان ،گلزاری لعل سنگھ ،خان نواب ،گل محمد ،اکبرحسین و د یگر ممبران نے خطاب کیا۔ ان ممبران کا کہنا تھا کہ ضلع کونسل کے نمائندوں کا کوئی نہیں مانتا ضلع کونسل کو حقارت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے ضلع آفیسران تعاون نہیں کرتے جبکہ حکمران جماعت کے ایم پی اے تمام ترقیاتی منصوبوں پر اثرانداز ہورہے ہیں۔ ناظم صابر رحمن کا کہنا تھا کہ ملاکنڈ ڈویژن میں ٹیکس کی آڑ میں کرش پلانٹ کو بند کردیا گیا ہے جس سے لاکھوں کے قریب غریب مزدور بے روزگار ہوچکے ہیں تمام ترقیاتی منصوبوں پر کام بند پڑا ہے انھو ں نے متفقہ قراردادوں کے زریعے کرش پلانٹ جلد کھولنے اور سیاسی بنیاد پر ٹرانسفر کئے گئے پلاننگ آفیسروں کی بحالی کا مطالبہ کیا ۔ اجلاس سے الطافگلاب شاہپوری نے کہا کہ اپوزیشن مخصوص ممبران اسمبلی کو یکساں نظر انداز کیا جاتا ہے اُن کو برابر ی کی بنیاد پر ضلع کونسل میں فنڈ فراہم کی جائے۔اجلاس سے ذاکراللہ خان پورن نے کہا کہ ڈ پٹی کمشنر کو باربار کہنے کے باوجود یختنگی روڈ کی صفائی پر کام نہیں کیا جارہا ہے جبکہ صفائی مہم کا فنڈ بے دردی سے ضائع کیا جارہا ہے۔اجلاس سے گلا زاری لعل سنکھ اقلیتی ممبر نے کہا کہ اقلیتی برادری کا سرکاری کوٹہ غصب کیا جارہا ہے اقلیتی برادری کی حقوق کی تحفظ کی جائے۔اجلاس سے کماچ نصرت خیل کے ناظم حاجی سلطان نبی نے کہا کہ میں نے فرم کے نام پر کام کیا ہے جبکہ میرا سیکورٹی تاحال ریلیز نہیں کردی گئی، ترقیاتی منصوبوں پر ٹینڈر تاخیر کا شکار کیوں ہے،وزیراعظم فنڈکے منصوبوں پر ٹینڈر نہیں کیا جارہا بیس کروڑ میں اپوزیشن کو ایک کروڑ دینا ناانصافی ہے،تمام ممبران کو برابر فنڈ دینا چاہئے۔اجلاس سے عطاء اللہ خان نے کہا کہ پشاور سے منتخب رکن صوبائی اسمبلی شوکت یوسف زئی شانگلہ میں کرپشن کا جڑ بنا ہوا ہے وہ شانگلہ کے سرکاری اداروں میں سیاسی مداخلت کرتے ہیں ۔محکمہ جنگلات نے یہاں اپنی بادشاہت قائم کردی ہے انھوں نے فارسٹ اہلکاروں کو خبر دار کرتے ہوئے کہا کہ وہ اپنا قبلہ درست کرلیں لوگوں کے گھروں کی چاردیواری کا تحفظ یقینی بنائے ۔اجلاس سے شیر علی چکیسر نے کہا کہ ٹی ایم اے افضل کے کیس میں تمام ممبران شامل ہیں شانگلہ کے معتبر لوگوں نے سیلاب فنڈ ہڑپ کیا ہے ،ویلج کونسلوں کے فنڈ کے ساتھ جو کچھ ہوا گراونڈ پر کوئی کام دیکھنا کو نہیں ملتا ، شانگلہ میں یہ صورت حال کب تک چلے گا۔ اجلاس سے ناظم گل محمد نے کہا کہ ہمارا فنڈ ضائع کیا جارہا ہے شوکت یوسف زئی چھ کروڑ کی لاگت سے ایک کلومیٹر روڈ اب تک میرے یونین کونسل میں نہیں بنا سکے۔اجلاس سے ممبر سرفراز خان نے کہا کہ محکمہ فوڈ والے غریب لوگوں کو بلاوجہ تنگ نہ کریں بشام بازار میں صفائی کے ناقص صورتحال کا نوٹس لیا جائے تجاویزات کو ختم کیا جائے ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...