”سعید انور کے بہنوئی کو اغواءنہیں کیا گیا بلکہ ایجنسیز نے اٹھایا کیونکہ۔۔۔“ سعید انور کے بہنوئی کے گھر کتنے لوگ آئے اور ان کے ساتھ گھر سے اور کیا کچھ لے کر گئے؟ نجی خبر رساں ادارے نے تہلکہ خیز دعویٰ کر دیا

”سعید انور کے بہنوئی کو اغواءنہیں کیا گیا بلکہ ایجنسیز نے اٹھایا ...
”سعید انور کے بہنوئی کو اغواءنہیں کیا گیا بلکہ ایجنسیز نے اٹھایا کیونکہ۔۔۔“ سعید انور کے بہنوئی کے گھر کتنے لوگ آئے اور ان کے ساتھ گھر سے اور کیا کچھ لے کر گئے؟ نجی خبر رساں ادارے نے تہلکہ خیز دعویٰ کر دیا

  


لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کے مایہ ناز سابق کرکٹر سعید انور کے بہنوئی کو مبینہ طور پر بیدیاں روڈ پر واقع ان کی رہائش گاہ سے اغواءکر لیا گیا لیکن اب نجی خبر رساں ادارے نے اپنی رپورٹ میں تہلکہ خیز دعویٰ کر دیا ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں۔۔۔”مفتی صاحب عشاءکے بعد مجھے خدمت کیلئے کمرے میں بلاتے اور پھر۔۔۔“ مدرسے میں تعلیم حاصل کرنے والے نوجوان نے اپنے ساتھ کئی سالوں تک پیش آنے والا واقعہ سنا دیا، ایسا دعویٰ کر دیا کہ ہر کسی کی روح کانپ اٹھی

ذرائع کے مطابق یہ واقعہ ایک ہفتہ قبل پیش آیا تاہم سعید انور کی بہن شکیلہ انور نے پیر کے روز پولیس سے رابطہ کیا اور درخواست میں لکھا کہ نامعلوم افراد نے ان کے شوہر اسد منیر کو بیدیاں روڈ پر واقع رہائش گاہ سے اغواءکیا۔

پولیس نے مسز شکیلہ کے حوالے سے بتایا ہے کہ چند مسلح افراد زبردستی ان کے گھر میں گھس گئے اور اسد منیر کو اپنے ساتھ لے گئے تاہم خاندان کے ایک فرد کا کہنا ہے کہ یہ معاملہ اس روز ہی پولیس کے علم میں لایا گیا تھا جس روز انہیں اغواءکیا گیا تھا۔ نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر اس نے بتایا کہ تقریباً 2 درجن کے قریب منیر کے گھر آئے اور انہیں اپنے ساتھ لے گئے۔

ڈان نیوز نے اپنی رپورٹ میں پولیس ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ اسد منیر کو کسی نے اغواءنہیں کیا بلکہ انہیں ایجنسیز نے مبینہ طور پر ان کے ریاست مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہونے کے باعث اٹھایا ہے۔ اس نے مزید کہا کہ حکام نے ان کے گھر سے چند دستاویزات اور ایک لیپ ٹاپ بھی قبضے میں لیا ہے اور انہیں نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔۔۔”میں تمہیں تھپڑ ماروں گا اگر۔۔۔“ یورپی ملک میں پاکستانی سفارت خانے کا عملہ اوور سیز پاکستانیوں کیساتھ کیسا سلوک کرتا ہے؟ ایسی ویڈیو سامنے آ گئی کہ آپ بھی ہکا بکا رہ جائیں گے

جنوبی کینٹ پولیس سٹیشن کے سب انسپکٹر حبیب اللہ کو اس واقعے کا تفتیشی افسر مقرر کیا گیا ہے جن کا کہنا ہے کہ مقدمہ درج کیا جائے گا، ابھی وہ درخواست گزار مسز شکیلہ سے ”اغواء“ کے واقعے کی تفصیلات جاننے کیلئے رابطہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /کھیل /علاقائی /پنجاب /لاہور


loading...