پنجاب، خیبر پختونخوا میں لاگو قانون کو سند ھ میں بھی چلنے دیا جائے: بلاول بھٹو

پنجاب، خیبر پختونخوا میں لاگو قانون کو سند ھ میں بھی چلنے دیا جائے: بلاول ...

  



اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ ایک پاکستان میں دوقانون نہیں ہو سکتے، ہم مطالبہ کرتے ہیں جو قانون پنجاب اور خیبرپختونخوا میں لاگو کرتے ہیں اسی کے مطابق سندھ میں بھی چلیں،وفاق کو بھیجے گئے پانچ ناموں میں سے آئی جی سندھ تعینات کیاجائے،پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ آٹا کا بحران ہے اس پر اسمبلی کا اجلاس نہیں بلایا گیا، اس حکومت کے طریقہ کار میں جمہوریت نہیں، یہ پارلیمنٹ کو بے اختیار بنانا چاہتے ہیں، پھرسے سیاسی گرفتاریوں کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے، اس کی مذمت کرتے ہیں،انہوں نے کہا کہ قبائلی اضلاع کے نوجوانوں نے بہت قربانیاں دی ہیں، ہماری حکومت نے سارے آئی ڈی پیز کو واپس گھروں کو بھیجا، آئی ڈی پیزکی بحالی کے لیئے کام کرنا چاہیے،عمران خان اس پر خاموش ہے، بلاول بھٹو نے کہا کہ ان کا دھرنا جمہوریت اور ہمارا دھرنا غداری؟ ایک پاکستان میں دوقانون نہیں ہو سکتے، اسلام آباد کا آئی جی تبدیل ہوا تھا، آئی جی نے فون کا جواب نہیں دیا تو اس بات پر آئی جی ہٹ سکتا ہے،خیبرپختونخوا میں بھی آئی جی تبدیل ہوتے ہیں، لیکن سندھ کے آئی جی کے لیئے پانچ نام بھیجے جاتے ہیں مگر آئی جی تبدیل نہیں ہوتا۔اس کا نقصان سندھ کے عوام کو ہوتا ہے، ہم مطالبہ کرتے ہیں جو قانون پنجاب اور خیبرپختونخوا میں لاگو کرتے ہیں اسی کے مطابق سندھ میں بھی چلیں۔بلاول بھٹو نے کہا کہ جب سے یہ حکومت آئی ہے عوام کا معاشی قتل کیاجارہا ہے،گیس بجلی کی قیمتیں بڑھتی جارہی ہیں یہ حکومت عام آدمی پر اور بوجھ ڈال رہی ہے، کسانوں کے لیئے کوئی بیل آؤٹ پیکج نہیں آیا، عوام کامطالبہ ہے کہ معاشی انصاف ہو۔ وفاق نہیں چاہتا کہ سندھ میں کام ہو، یہ حکومت تنقید برداشت نہیں کرتی۔دریں اثنا اپنے ایک ٹویٹر پیغام میں بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ جن لوگوں کو امریکی تاریخ میں دلچسپی ہے انہیں دورِ حاضر کو سمجھنے کیلئے ماضی کو جاننا ہوگا۔ یہ جاننے کیلئے کہ کیسے امریکا کو سخت ترین ادوار میں چلایا گیا، میرے دوست جیرڈ کوہن کی کتاب حادثاتی صدور کا مطالعہ کریں۔

بلاول بھٹو

مزید : صفحہ اول