اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں توسیع منظور، ملزم تعاون کر رہا ہے تو گرفتار کرنے کا مقصد کیا؟ اسلام آباد ہائیکورٹ

اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں توسیع منظور، ملزم تعاون کر رہا ہے تو گرفتار ...

  



اسلام آباد (این این آئی)اسلام آباد ہائیکورٹ نے رہنما جے یو آئی (ف) اکرام درانی کی عبوری ضمانت میں 19 فروری تک توسیع کر دی جبکہ چیف جسٹس اسلا م آباد ہائیکورٹ نے ریماکس دیئے کہ نیب بتائے کیا جن لوگوں کو گھر الاٹ ہوئے ان کیخلاف بھی کارروائی چاہتا ہے، عدالت نے نیب کی جانب سے سول ججوں کو گھروں کی الاٹمنٹ کی فہرست پیش کرنے پر معاملہ چیئرمین نیب کو بھیج دیا۔جمعرات کو اسلام آ با د ہائیکورٹ میں اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں توسیع سے متعلق درخواست پر سماعت ہوئی،نیب پراسیکیوٹر نے بتایا عدالت میں اکرم درا نی کی گرفتاری کے حوالے سے رپورٹ جمع کروائی ہے، تفتیشی آفسر کے پاس گرفتاری کی وجوہات موجود ہیں، چیف جسٹس اطہر من اللہ نے سوال اٹھایااگر ملزم آپ سے تعاون کر رہا ہے تو آپ گرفتار کیوں کرنا چاہتے ہیں؟۔ جسٹس اطہر من اللہ نے استفسار کیا آپ ملزموں کو کس بنیاد پر گرفتار کرتے ہیں،نیب نے بتایا اگر ریکارڈ ٹیمپر یا گواہوں پر اثر انداز ہونے کا خدشہ ہو تو ملزم کو گرفتار کرتے ہیں، اگر ریکارڈ پر ٹھوس شو اہد ہوں تو بھی ملزم کو گرفتار کیا جاتا ہے، ہمیں خدشہ ہے اکرم درانی گواہوں پر اثر انداز ہونگے، اسلئے گرفتار کرنا چاہتے ہیں۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ آپ گرفتار کر کے فائدہ کیا حاصل کرنا چاہتے ہیں، کیا آپ گرفتار کرکے تھرڈ ڈگری دیکر کچھ نکلوانا چاہتے ہیں، کوئی بھی قا نون سے بالا تر نہیں لیکن آپ کو بتانا ہو گا گرفتار کیوں کرنا چاہتے ہیں، اگر مجھے بھی ایک گھر غیر قانونی طور پر الاٹ ہوا ہے تو میں بھی قانون سے بالاترنہیں۔ اس کیس کا تمام ریکارڈچیئرمین نیب کے سامنے پیش کیا جائے،وہ دوبارہ پڑھ کر فیصلہ کریں گرفتاری کرنی ہے یا نہیں، عدا لت نے اکرم درانی کی عبوری ضمانت میں بھی 19 فروری تک توسیع کر دی، کیس کی مزید سماعت 19 فروری کو ہوگی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ

مزید : صفحہ آخر