بڑھتی مہنگائی اور بے روزگاری کے خلاف پیپلز لیبر بیورو کے زیر اہتمام احتجاجی مظاہرہ

بڑھتی مہنگائی اور بے روزگاری کے خلاف پیپلز لیبر بیورو کے زیر اہتمام احتجاجی ...

  



ملتان (سپیشل رپورٹر) بڑھتی ہوئی مہنگائی اور بے روزگاری کے خلاف انڈسٹریل اسٹیٹ ملتان میں پیپلز لیبر بیورو کے زیر اہتمام احتجاجی مظاہرے سے معروف مزدور رہنما محمد عاشق بھٹہ،(بقیہ نمبر45صفحہ7پر)

جنرل سیکرٹری پیپلز لیبر بیورو جنوبی پنجاب نے خطاب کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ لیبر قوانین پر عملدرآمد کو یقینی بھنایا جائے کم از کم اجرت کے قانون پر عملدرآمد کروایا جائے۔ مساوی اجرت کے قانون پر عمل کرتے ہوئے خواتین ورکرز کو بھی قانون کے مطابق 8 گھنٹے ڈیوٹی کے قانون پر عمل کروایاجائے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت اکثر کارخانوں میں 8 گھنٹے کے بجائے 12 گھنٹے ڈیوٹی لی جارہی ہے عاشق بھٹہ نے مزید کہا کہ ملتان میں مزید دو بوائز اور گرلز ورکرز ویلفیئرز سکول قائم کئے جائیں انڈسٹریل اسٹیٹ میں مزدوروں کے لئے بنائے گئے فلیٹس کو فوری طور پر مزدوروں کو دیئے جائیں اور ان میں قائم ورکرز ویلفیئرز سکولوں کو بھی چالو کئے جانے کے اقدامات کئے جائیں عاشق بھٹہ نے کہاکہ سوشل سکیورٹی میڈیکل سنٹر انڈسٹریل اسٹیٹ یونٹ نمبر 4 کو اَپ گریڈ کیا جائے اور اس کو ہسپتال کا درجہ دیا جائے۔ عاشق بھٹہ نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ میرج گرانٹ اور ڈیتھ گرانٹ کی زیر التوا درخواستوں کا فوری طور پر فیصلہ کیا جائے اور حق دار مزدوروں کو گرانٹ کے چیک جاری کئے جائیں۔ انہوں نے احتجاجی مظاہرے میں شامل مزدوروں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کم از کم اجرت ے بجائے ضرورت کے مطابق تنخواہوں کا تعین کیا جائے۔ اگر مہنگائی کے تناسب سے مزدوروں کی اجرت مقرر نہ کی گئی تو مزدور مزید احتجاج کرنے پر مجبور ہوں گے۔ عاشق بھٹہ نے مطالبہ کیاکہ فوری طور پر سہ فریقی لیبر کانفرنس بلائی جائے اور کانفرنس کی سفارشات کے مطابق لیبر پالیسی نافذ کی جائے۔ احتجاجی مظاہرے میں عاشق بھٹہ کے ہمراہ مزدور رہنما محبوب کشمیری، عبدالرحمن بلوچ، غلام یاسین اور اقبال لابر بھی موجود تھے۔

مظاہرہ

مزید : ملتان صفحہ آخر