بھارت نے پاکستانی ہندوﺅں کو شہریت دینے کے لیے قانون بنایا، لیکن اب لوگ واقعی وہاں پہنچ گئے تو بھارتی ایجنسیوں کے ہوش اُڑگئے

بھارت نے پاکستانی ہندوﺅں کو شہریت دینے کے لیے قانون بنایا، لیکن اب لوگ واقعی ...
بھارت نے پاکستانی ہندوﺅں کو شہریت دینے کے لیے قانون بنایا، لیکن اب لوگ واقعی وہاں پہنچ گئے تو بھارتی ایجنسیوں کے ہوش اُڑگئے

  



نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے غیرقانونی شہریتی ترمیمی بل منظور کرکے پاکستان، افغانستان اور بنگلہ دیش سے ہندوﺅں، سکھوں اور مسیحیوں سمیت دیگر اقلیتوں کو بھارتی شہریت دینے کا اعلان تو کر دیا لیکن اب پاکستان سے ہندو برادری بھارت پہنچنی شروع ہوئی ہے تو بھارتی ایجنسیوں کے ہوش اڑ گئے ہیں۔ ٹائمز آف انڈیا کے مطابق فی الحال پاکستان سے 200سے زائد ہندوخاندان بھارتی پنجاب پہنچے ہیں۔ یہ لوگ اپنے مال اسباب کے ساتھ پاکستان سے واہگہ بارڈر کے راستے بھارتی پنجاب گئے جس پر بھارتی ایجنسیاں بوکھلا کر رہ گئیں۔

بتایا گیا ہے کہ ان لوگوں کی آمد گزشتہ سال دسمبر کے وسط میں شروع ہوئی۔ یہ وزٹ ویزے پر بھارت آ رہے ہیں۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ لوگ تاحال اپنے دل کا حال نہیں بتا رہے کہ وہ مستقل طور پر بھارت میں رہنا چاہتے ہیں یا وزٹ ویزہ ختم ہونے پر واپس پاکستان چلے جائیں گے۔ بھارتی ایجنسیاں اس بات پر پریشان ہیں کہ بظاہر لگتا ہے جیسے ان لوگوں کو منصوبہ بندی کے تحت بھارت بھیجا جا رہا ہے، کیونکہ جب بھارتی میں شہریتی ترمیمی بل کی بات شروع ہوئی تھی، تبھی سے ان لوگوں نے وزٹ ویزوں کی درخواستیں دینی شروع کر دی تھیں۔ ایجنسیوں کے لوگوں کا کہنا ہے کہ انہیں کچھ معلوم نہیں کہ آیا یہ حقیقت میں سیاح ہیں یا ان کے ذہنوں میں کچھ اور ہے۔ جب ان کے ویزوں کی مدت ختم ہو گی، تبھی معلوم ہو سکے گا کہ وہ مستقل یہاں رہتے ہیں یا واپس جاتے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی