مجھے تو ڈر تھا کہ آٹےبحران پر لوگ ۔۔۔شیخ رشیدنے حکومت کو سب سے بڑے خطرے کی نشاندہی کر دی

مجھے تو ڈر تھا کہ آٹےبحران پر لوگ ۔۔۔شیخ رشیدنے حکومت کو سب سے بڑے خطرے کی ...
مجھے تو ڈر تھا کہ آٹےبحران پر لوگ ۔۔۔شیخ رشیدنے حکومت کو سب سے بڑے خطرے کی نشاندہی کر دی

  



راولپنڈی(ڈیلی پاکستان آن لائن)وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید احمد  نے کہا ہے کہ حکومت کی حقیقی اپوزیشن مہنگائی ہے جس سے ہم نے نبٹنا ہے،عمران خان  کے دور میں اگر کرپشن ہوئی تو اس سےبڑا ظلم کوئی نہیں ہو گا،عمران خان پر 13سو باتیں ہو سکتی ہیں لیکن وہ کرپٹ نہیں ہے،چوہدری  برادران اور حکومت کےاتحادی کہیں نہیں جا رہے،وزیر اعلیٰ پنجاب   شریف آدمی ہیں ،چوروں لٹیروں کو ہم کب  تک ملک پر مسلط کرتے رہیں گے؟مہنگائی ان لوگوں کی وجہ سے ہوئی جنہوں نے ملک کو لوٹا،ہم نے مافیا پر پکا ہاتھ ڈالا تو عوام خوش ہوں گے،مہنگائی اور بل عوام کے لئے قابل قبول نہیں  ہے،حکومت اگلےسال تک مہنگائی کے  جن پر قابو پا لے گی،عمران خان پانچ سال پورے کرے گااور انہیں اپوزیشن سے  کوئی خطرہ نہیں۔

نجی ٹی وی کےپروگرام’’نیوز ٹاک یشفین جمال کیساتھ ‘‘میں گفتگو کرتےہوئے شیخ  رشید احمد کا کہنا تھا کہ  حکومت کو مہنگائی کی وجہ سے شدید تنقید کاسامنا ہے، مہنگائی تسلیم نا کی تو ہم عوام کی نظروں سے گر جائیں گے،بجلی اور گیس کے بل عوام کیلئے قابل قبول نہیں،میرے  نزدیک اپوزیشن  فرینڈلی ہے،نواز شریف پاکستان واپس نہیں آ رہے جبکہ آصف زرداری بھی حکومت  کےخلاف کوئی سخت اقدام اٹھانے نہیں جارہے،اپوزیشن  ٹی پر کھیل رہی ہےاورہم اُسے کھیلارہے ہیں ،حکومت کی حقیقی اپوزیشن مہنگائی ہے ،جس سے ہم نے نبٹنا ہے،خان صاحب کوسب  کچھ پتا ہے،آٹے نےجو بحران پیدا کیا ہے،اللہ کا شکر ہےکہ  لوگ سڑکوں پر نہیں آئے ،مجھے تو ڈر تھا کہ کہیں لوگوں نے آٹے کے گوداموں کو لوٹنا شروع کر دیا تو  پھر سواستیا ناس ہو جائے گالیکن عمران خان پر لوگ یقین کرتے ہیں کہ وہ اِن حالات   کوٹھیک کرنے کی بڑی کوشش اور محنت کر رہا ہے ،یہ بھی حقیقت ہے کہ ہم مہنگائی کے جن پر ابھی تک قابو نہیں پا سکے،اس جن کو بوتل میں بند  کرنا ہے ہے،میرےنزدیک اصل مسئلہ صرف اورصرف  مہنگائی ہےجس پر  ہم اگلے  سال تک  قابو   پالیں گے۔انہوں نے کہا کہ ہماری خوش قسمتی ہے کہ اتنی غیر مقبول اپوزیشن ملی ہے کہ وہ  آٹے جیسےسنجیدہ ایشو کو   بھی صیح طور پر پروجیکٹ نہیں  کر سکی،اپوزیشن  کو بھی پتا ہے  کہ ملک کے موجودہ حالات کی وجہ بھی وہ خود ہیں اورقوم کو مہنگائی کےلگنے والے ٹیکے کے بنیادی ذمہ دار نواز شریف اور آصف  زرداری کی حکومتیں ہیں۔

شیخ  رشید نے کہا کہ عمران خان  کے دور میں اگر کرپشن ہوئی تو اس سےبڑا ظلم کوئی نہیں ہو گا ،عمران خان پر آپ ایک ہزار  اکیس الزام لگا سکتے ہیں کرپشن  کا نہیں لگا سکتے،دیکھیں  دوائیوں کا مسئلہ  ہوا  تو کیسے اُس نےاپنے  خاص الخاص لوگوں کو  اٹھا کر باہر پھینکا  ،اِسی طرح  اگر کسی کا بھی کرپشن  کا مسئلہ ہو  تو عمران خان اُسے  اٹھاکرباہرپھینکےگا،کرپشن  عمران  کے دورمیں نہ ہوئی ہے نہ کرپشن ہونے کی امید ہے،عمران خان پر 13سو باتیں ہو سکتی ہیں لیکن وہ کرپٹ نہیں ہے،مسائل کی ایک بڑی وجہ یہ ہے کہ بیورو کریسی اس  حکومت کی مدد نہیں  کر رہی ،ادارے اس حکومت کے ساتھ نہ کھڑے ہوتے تو پھر حالات بڑے  مشکل اور تکلیف دہ ہوتے ،اداروں کو پتا ہے کہ عمران خان کے علاوہ کوئی چوائس  نہیں،مولانا  فضل الرحمان مہینےتک جلسےجلوس شروع کریں گے لیکن  وہ   حکومت کو کوئی ڈینٹ نہیں ڈال سکیں گے۔

انہوں نے کہا کہ چوہدری برادران کہیں نہیں جا  رہے ،وہ عمران خان کے ساتھ کھڑے ہوں گے،وہ جومولانا فضل الرحمن کاایک شمشا   بنا  تھا اورپہلی  دفعہ کسی مولوی نے کسی دوسرے  صوبے  سے ایک ریلی لے کر آیا اور جاندار ریلی اورجاندار کراؤڈ تھا ،وہ اپنےصوبے سے بھی نہیں بلکہ  کراچی سے نکلا    اور اسلام آباد میں آکر پڑاؤ ڈالا اور میری سوچوں سے چارچھے دن زیادہ رہ گیا ،لیکن دیکھیں وہ کہہ رہے تھےکہ بس دسمبر دیکھیں  اور آپ کو پتا لگ جائے گا کہ میں خالی ہاتھ نہیں جا  رہا ،سیاست دان اپنی مارکیٹ کو مایوس نہیں کرتا کم ازکم دسمبر تک تو انہوں نے اپنے  کراؤڈ کو اکٹھا رکھا لیکن یہ نہیں بتایا کہ وہ کس دسمبر کی بات  کر رہے  ہیں؟جس دور میں فضل ا لرحمان کو   چوہدری  برادران ملنے  جاتے رہے گو بظاہر وہ ان کو سمجھانے بجھانے کے لئے جاتے  رہے لیکن اس کا تاثر غلط گیا ،اُن کو عمران خان کو اعتماد میں لینا چاہئے تھا  لیکن اچھا ہوا کہ غلط فہمیاں پیدا ہونے سے پہلے ہی وہ معاملات حل  ہو گئے،چوہدری برادران حکومت سےرابطے میں ہیں ،ان کے بچے رابطے میں ہیں اور ابھی ایک پارلیمانی سیکرٹری بنے ہیں کسی منسٹری کے،چوہدری کہاں جائیں گے  ؟کیونکہ ن لیگ میں تو وہ جا نہیں سکتے،مونس الٰہی کا  مسئلہ مختلف ہے،مونس الٰہی نے ایک ٹی  وی چینل پر یہ کہہ کر کہ عمران  خان ہمیں پسند نہیں کرتے، اپنے  لئے بھی کوئی  آسائش  پیدا نہیں کی،اسکا مونس کو فائدہ کم اور نقصان زیادہ ہوا ہے ، مونس ایک اچھا بچہ ہے اور اس کا ایک مستقبل ہے۔

انہوں نے کہا کہ  یہ بھی حقیقت ہے کہ گجرات کی سیاست میں اُن کی بات بڑی اہم ہے اور حکومت اُن کی بات کو  وزن دےرہی ہےاور ان کی باتیں مانی جا رہی ہیں ،ڈویلپمنٹ کے  فنڈز  ملنے  لگے  ہیں ،ایڈمنسٹریشن میں بھی اُن کا عمل دخل ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت کو کوئی چھوڑ کر نہیں جا رہا ،یہ بلبلے ہیں ،چھوٹی موٹی ان میں جان پڑتی ہےلیکن یہ جلدد دور ہو جاتے ہیں ،جی ڈی اے کے ساتھ اصل مسئلہ آئی جی کی وجہ سے پیدا ہوا  ورنہ عمران خان آئی کا مسئلہ تو  حل کر آئے تھے،وزیر اعظم  جی ڈی اے کوپہلے اور وزیر اعلیٰ سندھ اور ایم کیو ایم  کو بعد میں ملتے تو  حالات بہتر ہو جاتے  اور اتنا مسئلہ پیدا نہ ہوتا ،وزیر اعلیٰ سندھ کو ملنے کے بعد وزیراعظم جب جی ڈی اے سے ملے اور اپنی کیبنٹ میں آئے تو   وہاں سندھ کی ساری قیادت  جی ڈی اے اور تحریک انصاف کی قیادت نےایک مختلف سٹینڈ  لیا اسوجہ سے مسئلہ کٹھائی میں پڑ گیا ورنہ میرے خیال میں تو پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف  بہت قریب ہونے  جا رہی تھی۔

شیخ رشید نے  کہا کہ مجھےاللہ پر  پورا یقین ہے کہ عمران خان کہیں نہیں جا رہا ،کوئی آدمی عمران  خان کے خلاف تحریک نہیں شروع  کر رہا سوائے ہم خود  اپنے امیج کو  بہتر بنا  سکیں  اور خراب ہونے سے روک سکیں ،میرے حساب میں عمران خان پانچ سال پورے کرے گااور انہیں اپوزیشن سے  کوئی خطرہ نہیں ہے،ن لیگ اور پیپلزپارٹی کوئی ڈینٹ نہیں ڈالنے جا رہی لیکن مسائل ہمیں ڈینٹ ڈال سکتے ہیں،مسائل کو ہمیں فرنٹ فٹ پر لیتے  ہوئے اُن کا تدارک کرنا ہے،مسائل کا تدارک ٹیکنو کریٹ نہیں کر سکتے،اسکا تدارک منتخب  حکومتیں ہی کر سکتی ہیں،عمران خان اور اس کی منتخب ٹیم ہی کر سکتی ہے ،اُس کےغیر منتخب اراکین نہیں کر سکتے ،اگلے  سال تک عمران خان معاملات سنبھال لیں  گے۔شیخ رشیدکا کہنا تھا کہ اداروں سے  عمران  خان کے تعلقات  ٹھیک ہیں،اونچ نیچ ہوتی رہتی ہے ،ٹک ٹاک لگی رہتی ہے لیکن مجموعی طور پر حالات اچھے ہیں۔انہوں نے کہا کہ عثمان بزدار عمران خان کی پسند ہے وہ کیسے  اُس کوہٹائے گا؟عمران خان اگر اس معاملے پر یوٹرن لے گا  تو اگلا 20 دن بھی نہیں چلے گا ،میں عمران خان کے ساتھ ہوں ،عثمان بزدار عمران خان کی پسند ہے اور مجھے  بھی وہ پسند ہے۔

مزید : قومی