ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کے دوران بھرتی کئے گئے 500ڈاکٹروں کی تعیناتی لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج

ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کے دوران بھرتی کئے گئے 500ڈاکٹروں کی تعیناتی لاہور ...

لاہور (نامہ نگار خصوصی) ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کے دوران پنجاب حکومت کی طرف سے بھرتی کیے جانے والے ڈاکٹروں کا تقرر لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کردیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں دائر ابوبکر گوندل سمیت 7 ڈاکٹروں کی درخواست پر مسٹر جسٹس اعجاز الاحسن نے حکومت پنجاب سے تفصیلی جواب طلب کرلیا ہے۔ درخواست میں مو¿قف اختیار کیا گیا ہے کہ پنجاب حکومت نے ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال کے دوران محض 3 دنوں (6,5,4 جولائی) میں 500 نئے ڈاکٹر بھرتی کرلیے۔ ایڈہاک اور مختلف درجہ بندیوں کی بنیاد پر کی جانے والی تعیناتیاں آئین اور قانون کی خلاف ورزی ہیں۔ علاوہ ازیں یہ تقرریاں ریکروٹمنٹ پالیسی اور پنجاب پبلک سروس کمیشن کے رولز کے بھی منافی ہیں۔ درخواست میں پنجاب حکومت، پنجاب پبلک سروس کمیشن اور لاہور کے تمام ٹیچنگ ہسپتالوں کے پرنسپلز اور ایم ایس صاحبان کو فریق بنایا گیا ہے۔ درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ مذکورہ بھرتیوں کو غیر قانونی اور غیر آئینی قرار دے کر کالعدم کیا جائے۔ درخواست میں یہ استدعا بھی کی گیءہے کہ حکومت کو نئے ڈاکٹروں کی بھرتیوں سے روکا جائے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...