اپنے قوانین کے نفاذ کے لئے داعش نےخواتین کی بھرتی شروع کردی

اپنے قوانین کے نفاذ کے لئے داعش نےخواتین کی بھرتی شروع کردی
اپنے قوانین کے نفاذ کے لئے داعش نےخواتین کی بھرتی شروع کردی

  

دمشق(مانیٹرنگ ڈیسک) عراق و شام کے وسیع علاقوں پر قبضہ کرنے والی عسکریت پسند جماعت دولت اسلامی عراق و شام (داعش) نے شریعت کے نفاذکے لئے زنانہ فوج تیار کر لی ہے اور اس فوج کی مسلح سپاہیوں نے اپنا کام بھی شروع کر دیا ہے۔ خبررساں ادارے Syria Deeplyکا کہنا ہے کہ رقہ شہر میں داعش کی زنانہ فوج نے حمیدہ طاہر گرلز سکول پر چھاپہ مار کر دواستانیوں اور دس طالبات کو گرفتار کرلیا کیونکہ انہوں نے جو نقاب پہن رکھے تھے وہ مبینہ طور پر بہت باریک تھے اور بعض طالبات نے برقع کے اندر بالوں میں کلپ لگا رکھے تھے ۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اس فوج میں شامل خواتین کا تعلق رقہ شہر بھی ہے اور دیگر علاقوں سے بھی ہے لیکن ان کی اکثریت جنگجوﺅں کی بیویاں ہیں دوسری جانب جنگجوﺅں کا موقف ہے کہ زنانہ فوج کا مقصد عورتوں میں شعور پیدا کرنا ہے اور مذہب سے دور عورتوں کی گرفتاری اور سزا دینا ہے البتہ شامی اخبار ’العلم‘ کا کہنا ہے کہ زنانہ فوج کا مقصد ان جنگجوﺅں کا پتہ چلانا ہے جو برقعہ پہن کر رقہ میں داعش سے لڑنے کیلئے گھس رہے ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -