بربریت کی نئی تاریخ رقم ہو گئی،12چوروں نے خاندان کو ہائی وے پر اور پھر گھنٹوں تک گاڑی میں سوار خواتین کے ساتھ ایسا شرمناک ترین سلوک کہ بیان کرنا بھی مشکل

بربریت کی نئی تاریخ رقم ہو گئی،12چوروں نے خاندان کو ہائی وے پر اور پھر گھنٹوں ...
بربریت کی نئی تاریخ رقم ہو گئی،12چوروں نے خاندان کو ہائی وے پر اور پھر گھنٹوں تک گاڑی میں سوار خواتین کے ساتھ ایسا شرمناک ترین سلوک کہ بیان کرنا بھی مشکل

  


نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کا دارالحکومت کہلانے والے بھارت میں گزشتہ روز 12ڈاکوﺅں نے خاندان کے سامنے ماں بیٹی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔” ٹائمز آف انڈیا“ کی رپورٹ کے مطابق گزشتہ رات بھارتی شہر نوائیڈا کا رہائشی یہ خاندان اپنے انتقال کر جانے والے ایک عزیز کی آخری رسومات میں شرکت کے لیے شاہ جہان پور جا رہا تھا۔ یہ لوگ دہلی، کان پور نیشنل ہائی وے 91پر سفر کر رہے تھے۔ جیسے ہی وہ دوست پور گاﺅں کے قریب پہنچے سڑک کنارے چھپے ہوئے درجن بھر ڈاکوﺅں نے لوہے کا ایک راڈ ان کے گاڑی کے سامنے پھینک دیا۔ راڈ گاڑی میں لگنے سے زور دار آواز آئی اور ان کا ڈرائیور گاڑی روک کر صورتحال دیکھنے کے لیے نیچے اترا۔ اسی اثناءمیں جھاڑیوں سے ڈاکو نکل آئے اور گن پوائنٹ پرڈرائیور کو گاڑی ایک سنسان راستے پر لیجانے کو کہا۔ جنگل میں پہنچ کر انہوں نے خاندان سے 11ہزار روپے اور زیورات لوٹ لیے اور گاڑی میں موجود 35سالہ ماں اور اس کی 14سالہ بیٹی کو تین گھنٹے تک زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد رات کی تاریکی میں فرار ہو گئے۔ متاثرہ خاندان لٹنے کے بعد جب گاڑی پر واپس آنے لگا تو راستہ انجان ہونے کے باعث بھٹک گئے اور ان کی گاڑی کیچڑ میں پھنس گئی۔ وہ گاڑی سے اتر کر پیدل میرٹھ رینج کے ایک پولیس اسٹیشن پہنچے اور ایف آئی آر درج کروائی۔ ڈی آئی جی میرٹھ رینج لکشمی سنگھ کا کہنا ہے کہ ہم نے پولیس کی 6ٹیمیں تشکیل دے دی ہیں جن میں سے تین کی سربراہی سرکل آفیسرز کر رہے ہیں،یہ ٹیمیں کیس کی تحقیقات اور ملزموں کی تلاش کر رہی ہیں۔

مزید : بین الاقوامی


loading...