’بچے کی پیدائش کے ایک گھنٹے کے اندر ماں کو ہر صورت یہ کام کردینا چاہیے‘ سائنسدانوں نے شادی شدہ جوڑوں کو اہم ترین بات بتادی

’بچے کی پیدائش کے ایک گھنٹے کے اندر ماں کو ہر صورت یہ کام کردینا چاہیے‘ ...
’بچے کی پیدائش کے ایک گھنٹے کے اندر ماں کو ہر صورت یہ کام کردینا چاہیے‘ سائنسدانوں نے شادی شدہ جوڑوں کو اہم ترین بات بتادی

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

نیویارک(نیوز ڈیسک) بچے کے لئے ماں کے دودھ کی اہمیت سے کون واقف نہیں لیکن شاید اس بات کا ادراک کم لوگوں کو ہو گا کہ پیدائش کے فوری بعد ہی بچے کو ماں کا دودھ ملنا ازحد ضروری ہے۔ عالمی ادارہ صحت اور اقوام متحدہ کے ادارے یونیسف نے کہا ہے کہ نومولود کو پیدائش کے پہلے گھنٹے کے اندر ہی ماں اپنا دودھ پلانا شروع کر دے توغیر متوقع موت اور بیماریوں کے خدشے کو غیر معمولی حد تک کم کیا جا سکتا ہے۔

میل آن لائن کے مطابق عالمی ادارہ صحت و یونیسف کی جانب سے جاری کی گئی مشترکہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بچے کو دودھ پلانے میں محض دو گھنٹے کا انتظار اس کی غیر متوقع موت کا خدشہ تین گناہ بڑھا دیتا ہے جبکہ ایک دن تک اسے ماں کا دودھ نہ ملے تو یہ خطرہ دو گنازیادہ ہوجاتا ہے۔ اس رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ماں کے دودھ سے بچے کا مدافعتی نظام تیزی سے مضبوط ہوتا ہے جس کے نتیجے میں وہ زندگی کیلئے خطرہ بننے والے کئی طرح کے انفیکشن سے محفوظ ہوجاتاہے۔

بچوں کی اموات کے بارے میں عالمی اعدادوشمار پر نظر ڈالتے ہوئے رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ہر پانچ میں سے تین بچوں کو پیدائش کے پہلے گھنٹے کے دوران ماں کا دودھ نہیں پلایا جاتا جس کا نتیجہ نومولودد بچوں کی اموات کی صورت میں سامنے آتا ہے۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر ٹیڈروس ایڈنوم کا کہنا تھا ”ماں کا دودھ بچے کو زندگی کا بہترین ممکن طریقے سے آغاز کرنے میں مدد فراہم کرتا ہے۔ بچے کو پہلے گھنٹے میں ہی ماں کا دودھ ملنا چاہیے اور اس بات کو یقینی بنانے کے لئے خاندان ، ہیلتھ ورکرز سمیت ہر کسی کو چاہیے کہ وہ نومولود بچے کی ماں کی ہر ممکن مدد کریں۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس /تعلیم و صحت