گھریلو زندگی میں مغربی تہذیب کی نقالی کے برے اثرات!

گھریلو زندگی میں مغربی تہذیب کی نقالی کے برے اثرات!

  

”حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا وہ شخص ہم میں سے نہیں ہے جو ہمارے چھوٹوں پر رحم نہ کرے ہمارے بڑوں کی عزت و تو قیر نہ کرے، نیکی اور بھلائی کا حکم نہ دے اور برائی سے نہ روکے۔“

عائلۃ عربی زبان کا لفظ ہے جس کا مطلب ہے خاندان، کنبہ، گھرانہ، اس لیے گھریلو زندگی کو عائلی زندگی کہا جاتا ہے اور اسلام نے گھریلو زندگی کے جو اصول و آداب سکھائے ہیں وہ اسلام کا عائلی نظام ہے۔

عائلی زندگی یا گھریلو زندگی سے مراد شوہر اور بیوی کی زندگی ہے اور جب ان کے ہاں اولاد ہو تو یہی شوہر باپ اور بیوی ماں کہلاتی ہے تو اب اس گھریلو زندگی کے افراد ماں باپ اور اولاد ہیں۔

گھریلو زندگی اختیار کر کے مل جل کر زندگی بسر کرنا اللہ تعالیٰ نے انسان کی فطرت میں شامل فرمایا ہے۔ چنانچہ اللہ رب العزت نے انسان کو گھریلو زندگی کے آداب سکھائے اور رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے اسوہ حسنہ سے گھریلو زندگی کا ایک مکمل نظام عطا فرمایا ہے اور گھریلو زندگی سے بچ کر تنہائی اختیار کرنے کو پسند نہیں فرمایا۔

اسلام نے گھریلو زندگی کا جو نظام دیا ہے اس کا خاکہ یہ ہے کہ ایک طرف تو شوہر کے فرائض مقرر کیے جو بیوی کے حقوق ہیں اور دوسری طرف بیوی کے فرائض مقرر کیے جو شوہر کے حقوق ہیں۔ ان دونوں کو ایک دوسرے کے حقوق ادا کرنے کا پابند بھی کیا۔ پھر جب زندگی کا یہ نظام اور آگے بڑھا تو اب یہ میاں بیوی، ماں باپ کہلائے۔ اور ان کے سامنے اولاد ہے۔ اب اسلام نے ماں باپ کے کچھ فرائض مقر کیے جو اولاد کے حقوق ہیں اور اولاد کے ذمہ کچھ فرائض مقرر کیے جو ماں باپ کے حقوق ہیں۔ ان تمام فرائض و حقوق کی ادائیگی کے ساتھ جو گھریلو زندگی کا ایک نظام سامنے آتا ہے وہ اسلام کا گھریلو نظام زندگی ہے۔

اسلام نے گھریلو زندگی کے مقاصد بھی واضح کیے کہ آخر زندگی کا یہ طرز کیوں اختیار کیا جائے چنانچہ گھریلو زندگی کے بنیادی مقاصد میں سے ایک مقصد نسل انسانی کی بقاء اور تحفظ ہے جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے سورۃ البقرہ میں مردو عورت کے باہمی پاکیزہ تعلق کو ”نساء کم حرث لکم“ سے تعبیر فرمایا کر یہ گھریلو زندگی نسل انسانی کی بقاء کا ذریعہ ہے۔

گھریلو زندگی کا دوسرا اور اہم مقصد تربیت اولاد ہے یہی تربیت اولاد کے دین اور دنیا سنوارنے کا سبب ہے اور ماں باپ کی آنکھوں کی ٹھنڈک کا ذریعہ ہے۔ اللہ تعالیٰ نے سورۃ الفرقان میں اپنے نیک بندوں کی یہ خوبی بتائی کہ وہ یہ دعا مانگتے ہیں۔ ربناہب لنا من ازواجنا و ذریتنا قرۃ اعین۔اے اللہ!ہمیں اپنی بیویوں اور اپنی اولاد سے آنکھوں کی ٹھنڈک عطا فرما۔

گھریلو زندگی کا تیسرا مقصد تحفظ عصمت ہے یعنی گھریلو زندگی کے ذریعہ مرد و عورت فطری تقاضوں کو پورا کرتے ہوئے پاکیزہ زندگی گزارتے ہیں۔

گھریلو زندگی کا چوتھا مقصد راحت و سکون حاصل کرنا ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے:

ومن آیاتہ ان خلق لکم من انفسکم ازواجا لتسکنوا الیہا) (سورہئ روم آیت ۲۱)

”اور اللہ کی نشانیوں میں سے یہ ہے کہ اس نے تمہی میں سے تمہارے لیے بیویاں پید اکیں تاکہ تم ان سے سکون پا سکو۔“

گھریلو زندگی کا پانچواں مقصد احساس ذمہ داری ہے کہ اسلام نے مردو عورت کے لیے کچھ فرائض مقرر کیے، ارشاد نبوی ہے:

(الا کلکم راع وکلکم مسؤل عن رعیتہ)

”آگاہ رہو تم میں سے ہر ایک نگران ہے اور جو لوگ اس کے زیر نگرانی ہیں ان کے بارے میں اس سے پوچھا جائے گا۔“

اب انسان سوچ رہا ہے اور فکر مند ہے کہ آخر اسے گھریلو زندگی کے یہ اہم مقاصد کیوں حاصل نہیں ہو رہے۔ یہ انسان اولاد سے آنکھوں کی ٹھنڈک کا طلب گار ہے گھر میں سکون کا متلاشی ہے محبت و خلوص کیلئے ترس رہا ہے باہمی احترام و اعتماد کی کمی محسوس ہو رہی ہے۔ اگر ان تمام باتوں کی مجموعی وجہ تلاش کی جائے تو معلوم ہوگا کہ اس انسان کی زندگی اسلام کے عطا کردہ گھریلو نظام زندگی سے دور ہو رہی ہے اور یہ انسان گھریلو زندگی میں مغربی تہذیب کی نقالی میں مصروف ہو رہا ہے۔

دراصل ہر نظام کچھ نظریات پر مبنی ہوتا ہے موجودہ مغربی تہذیب درحقیقت رہبانیت یعنی دنیا کو چھوڑ چھاڑ کر معاشرہ سے کٹ کر زندگی گزارنے کے رد عمل میں وجود میں آئی ہے۔ اب اس کی بنیاد ہی انکار خدا ہے۔ اس مغربی تہذیب کی بنیاد پر انسان کو ہر معاملے میں آزادی دی جائے۔ اپنی سوچ، اپنے عمل و کردار اور اپنی پسند و ناپسند میں مذہب کی طرف سے کوئی پابندی نہ ہو۔ ہر شخص اپنی خواہشات کو پورا کر کے خود کو مطمئن کرنے میں مکمل آزاد ہو۔ نتیجہ یہ ہوا کہ شوہر اور بیوی کے درمیان اسلام نے جو باہمی محبت و سکون، اعتماد اور تحفظ عصمت کا جورشتہ قائم کیا تھا وہ اختیارات اور آزادی کی نذر ہو گیا۔ گھریلو زندگی کے یہ دو اہم ستون یعنی شوہر اور بیوی ایک دوسرے کے حقوق اداء کرنے کی بجائے اپنی ضروریات، اپنی خواہشات اور اپنے وقتی مسائل کے پیچھے دوڑنے لگے جس کے نتیجہ میں فیملی لائف کا مغربی تہذیب میں تصور ختم ہو گیا۔

پھر جب اولاد ہوتی ہے تو اگر ماں باپ دیندار، بااخلاق، زبان و عمل کے پاکیزہ ہوں تو یہی صفات اولاد میں منتقل ہو جاتی ہیں پھر اولاد بھی فرمانبردار، باکردار، بااخلاق اور محبت و احترام کرنے والی ہوتی ہے اس لیے کہ اسلام نے یہ سکھایا ہے جیسا کہ سنن ترمذی میں ارشاد نبوی منقول ہے کہ ماں باپ کے چہرہ کی طرف ایک محبت بھری نظر دیکھنے سے ایک حج اور عمرہ کا ثواب ملتا ہے اور پھر اسلام نے بزگوں کو یہ سکھایا کہ چھوٹوں پر شفقت کرو، اور چھوٹوں کو یہ سکھایا کہ بزرگوں کا احترام کرو۔

نتیجہ یہ نکلا کہ اسلام کے گھریلو نظام زندگی میں جنریشن گیپ یعنی دو نسلوں کے درمیان فاصلہ پیدا نہیں ہوتا۔ لیکن مغربی تہذیب کے گھریلو نظام زندگی میں جنریشن گیپ اس قدر پیدا ہو گیا ہے کہ وہاں ان ممالک میں اولاد نے اپنے بزرگوں کو ”اولڈ ہومز“ میں پہنچا دیا۔ ذرا ماں باپ نے تربیت کی خاطر سختی کی بچے نے پولیس کو فون کیا باپ کو ”اولڈ ہاؤس“ پہنچا دیا، اس لیے مغربی تہذیب میں وہاں کے معاشرے کے بزرگوں کے لیے الگ جگہ بنا دی ہے۔

ذہن میں یہ بات آتی ہے کہ آخر اسلام کے ایک مکمل گھریلو نظام زندگی سے رخ موڑ کر مغربی تہذیب کی نقالی کیوں کر آتی ہے۔ تو اس کی وجہ یہ ہے کہ جب مسلمانوں کے ذہن میں مغربی تہذیب کی طرف سے یہ بات بٹھا دی جائے کہ یہ دین اسلام قدیم زمانہ کا مذہب ہے اب یہ قابل عمل نہیں اور خود مسلمانوں کے اندر اسلامی نظام زندگی کے بارے میں تعارف نہ ہو۔ تو پھر ایک انسان کے اندر اپنے نظام کے بارے میں احساس کمتری پیدا ہوتی ہے اس کے نتیجہ میں وہ دوسرے نظام کی نقالی کرتا ہے اوراسی نظام زندگی کے مطابق اپنی زندگی کا معیار بنا لیتا ہے۔

چنانچہ آج ہم جب گھریلو زندگی میں معاشی پریشانیوں کا جائزہ لیتے ہیں تو وہاں اور دوسرے اسباب کے ساتھ ساتھ جو شخص مغربی تہذیب کی نقالی میں اپنے ذہن میں ایک معیار زندگی بنا لیتا ہے پھر اسی معیار پر بیوی بچوں کو چلانا چاہتا ہے لیکن اتنے وسائل نہیں ہوتے تو پھر وہ گھریلو طور پر انتہائی پریشانیوں میں مبتلا ہو جاتا ہے۔ ایسی گھریلو زندگی میں گھر کے ہر فرد کا رویہ یہ ہوتا ہے کہ اپنی خواہش کو پورا کرنا، ناشکری، بے صبری، حرص و لالچ، بے حسی اور خود غرضی آجاتی ہے۔ ظاہر ہے کہ اس گھریلو نظام میں نہ آپس کا احترام ہو گا، نہ محبت ہو گی، نہ گھریلو زندگی میں سکون ہو گا نہ اولاد سے آنکھوں کو ٹھنڈک ملے گی۔

 اللہ رب العزت ہمیں اپنے گھروں میں اسلام کے گھریلو نظام زندگی کو رائج کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔

٭٭٭

مزید :

ایڈیشن 1 -