مشرف کو آج بہانوں کی بجائے عدالت میں پیش ہونا پڑے گا، سیاستدان

مشرف کو آج بہانوں کی بجائے عدالت میں پیش ہونا پڑے گا، سیاستدان

لاہور( انوسٹی گیشن سیل)عدلیہ کا مورال بلند کرنے کیلئے قوم کو ایک شخص کی حفاظت کی بجائے قانون کے ہاتھ مضبوط کرنے چاہیں۔پرویز مشرف کو آج بہانوں کی بجائے عدالت میں پیش ہونا پڑے گا۔آئین اور قانون توڑنے والے کے ٹرائل میں رکاوٹ بننے کی بجائے ملکی سالمیت اور اصولوں کو مضبوط اور بلند کرنا ہوگا۔ان خیالات کا اظہار ملک کے سیاسی رہنماؤں نے روز نامہ پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ہے۔مسلم لیگ (ن)کے رکن قومی اسمبلی چوہدری منیر اظہر نے کہاکہ پرویز مشرف کے وکیل عدالتوں کی توہین کر رہے ہیں جس سے قوم کو بھی الجھن میں ڈالا جا رہا ہے۔ایک شخص کی خاطر آئین اور قانون کو پاؤں تلے نہیں روندنا چاہیے۔مشرف کو باہر بھیجنے اور معافی دلانے والوں کو قوم سے معافی مانگنی چاہیے۔سابق انفارمیشن سیکرٹری تحریک بحالی جمہوریت منیر احمد خان نے کہاکہ پرویز مشرف کا مقدمہ سنگین نوعیت کا ہے جس کیلئے دیکھنا ہو گا کہ متعلقہ ادارے اور حکومت قانون کی بالا دستی قائم رکھ سکتے ہیں یا نہیں ۔آرٹیکل 6کے تحت کسی شخص کو استثنیٰ حاصل ہے اور نہ ہی معافی ،عدالتوں کا فیصلہ ہرکسی کیلئے ہر صورت قابل قبول ہو گا۔پیپلز پارٹی کے رہنما صفدر عباسی نے کہا کہ آج بھی سابق صدر کو پیش کرنے کی بجائے عدالتی احکامات ہو ا میں اڑائے جاتے ہین تو قوم مایوس ہو گی۔قانون سب کیلئے برابر ہونا چاہیے۔تحریک انصاف کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل عمر ڈار نے کہا کہ عدالتی امور میں رکاوٹ بننے والے لوگ قوم سے مخلص نہیں ہیں۔پرویز مشرف کا کیس میں عدالتی احکامات کا بول بالا ہونا چاہیے۔عدالتوں کی بالا دستی کو تسلیم نہ کرنے والی قومیں دنیا میں ذلیل اور خوار ہوتی ہیں۔مسلم لیگ (ق)کی رہنما عطیہ عنائیت اللہ نے کہا کہ آج پرویز مشرف عدالت میں پیش ہونگے لیکن ان کے کیس کو نہ تو ذاتی لینا چاہیے اور نہ ہی سیاسی رنگ دیا جانے چاہیے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...