ملک کو نوازشریف نہیں ، درود شریف کی ضرورت ہے:سینیٹر سراج الحق

ملک کو نوازشریف نہیں ، درود شریف کی ضرورت ہے:سینیٹر سراج الحق

لاہور(خصوصی رپورٹ )امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے ملک کو نوازشریف کی نہیں ، درود شریف کی ضرورت ہے۔حکمران پانامہ کیس میں ملوث ہیں، وکی لیکس میں انکے نام ہیں ، لوٹی ہوئی دولت بیرون ملک چھپاتے ہیں۔ حکمرانوں کی چھتری تلے جاگیردار اور وڈیرے کسانوں کی محنت چوری کر رہے ہیں ۔ کسان خون پسینہ ایک کر کے فصل اگاتے ہیں جس کا انہیں مناسب معاوضہ نہیں ملتا۔ گندم کی فصل آتی ہے تو حکومتی پالیسیاں نہیں بنتیں اور گنا شوگر مافیا کھا جاتا ہے ۔ کاشتکار محنت کرنے کے باوجود فاقہ کشی پر مجبور ہیں کرپشن ، غربت ، مہنگائی و لوڈشیڈنگ حکمرانوں کا تحفہ ہیں ۔کرپشن کیخلاف رد الفساد ناگزیر ہو گیاہے۔ جب تک جاگیرداری اور وڈیرہ شاہی کی سر پر ستی حکمران ٹولہ کرتا رہے گا ، کسان اور مزدور بدحالی کی زندگی گزارنے پر مجبور رہیں گے ۔ حکمران کہتے ہیں کہ نوجوان ناچنا سیکھیں ۔ ملک کو ہالی وڈ کے اداکاروں کی نہیں محمد بن قاسم اور ڈاکٹر قدیر بنانے کی ضرورت ہے ۔ ناموس رسالت ؐ کے مسئلے پر حکمران کچھ نہیں کر سکے ۔ بھارت کلبھوشن بھیجتاہے اور حکمران انڈیا کو بجلی دینے کا اعلان کرتے ہیں ۔گزشتہ روز رحیم یارخان میں عوامی جلسہ سے خطا ب مین انکا مزید کہنا تھا حکمرانوں کے ظلم و ستم اور استحصال کا سب سے زیادہ شکار جنوبی پنجاب ہے جہاں کاشتکاروں کو زمینوں اور بھیڑ بکریوں تک کیلئے پانی میسر نہیں ۔ انہو ں نے مطالبہ کیاکہ گندم کے حوالے سے فوری طور پر سرکاری پالیسی کا اعلان کیا جائے تاکہ کسان کا استحصال نہ ہو۔ رحیم یارخان میں گنے کا کاشتکار ملز مافیا کے ظلم کا شکار ہے ۔ جماعت اسلامی شوگر مافیا راج کی بجائے کسانوں اور مزدوروں کا راج دیکھنا چاہتی ہے ۔چارہ کسان اور کاشتکار ڈالتاہے اور بھینسوں کا دودھ اور مکھن جاگیردار اور وڈیرے کھاتے ہیں ۔ وہ دن دور نہیں جب غریب کسان اور مزدور اسمبلیوں میں پہنچیں گے ۔ظالم جاگیرداراپنے لیے بجٹ بناتاہے تاکہ اسکی جاگیریں ، فیکٹریاں اور بنک بیلنس بڑھ جائے ۔ یہ ایسٹ انڈیا کمپنی کے غلاموں کی اولاد ہیں ۔ یہ کرپشن اور لوٹ کھسوٹ کے ماہر ہیں۔ معاشی دہشتگردوں کی وجہ سے عوام تعلیم ، صحت و روزگار سے محروم ہیں ۔ حکمران نسل در نسل حکمران اور عوام نسل در نسل غلام ، یہ نظام مزید برداشت نہیں کریں گے۔

سراج الحق

مزید : صفحہ آخر