دہشتگردی اور توانائی بحران پر قابو پالیا ، انتخابات کارکردگی کی بنیاد پر لڑیں گے: مریم اورنگزیب

دہشتگردی اور توانائی بحران پر قابو پالیا ، انتخابات کارکردگی کی بنیاد پر ...

اسلام آباد(اے پی پی) وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات و قومی ورثہ مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) نے دہشت گردی کی لعنت اور توانائی کی قلت جیسے بڑے چیلنجز پر قابو پانے کے ساتھ ساتھ پائیدار اقتصادی نمو حاصل کرنے کے وعدے پورے کئے اور آئندہ انتخابات کارکردگی کی بنیاد پر لڑے گی،پاکستان فیصلہ کن دور سے گزر رہا ہے اور جمہوریت مضبوط ہو رہی ہے ، چین پاکستان اقتصادی راہداری ملک کے لئے ایک نعمت ہے جس سے نہ صرف پاکستان بلکہ پورا خطہ آپس میں منسلک ہو جائے گا ۔ ایسوسی ایٹڈ پریس آف پاکستان (اے پی پی) کے ہیڈ کوارٹرز کے دورہ کے موقع پر ’’اے پی پی‘‘ کو خصوصی انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کی حکومت دیگر جماعتوں کی پالیسیوں کا مقابلہ اپنی کارکردگی کے ساتھ کر رہی ہے جس کے نتیجے میں پاکستان بدل رہا ہے اور یہاں استحکام آ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اب سیاست اور کارکردگی ایک دوسرے سے منسلک ہیں اور عوام کارکردگی کی بنیاد پرجماعتوں کو ووٹ دیں گے۔ وزیر مملکت نے کہا کہ پاکستان فیصلہ کن دور سے گزر رہا ہے ،یہاں جمہوریت مضبوط ہو رہی ہے، ترقیاتی منصوبے مکمل کئے جارہے ہیں اور جمہوری عمل میں عوام کا اعتماد بحال ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) نے اپنے منشور میں کئے گئے وعدے پورے کئے ہیں۔ مریم اورنگزیب نے کہا کہ جس وقت پاکستان مسلم لیگ (ن) نے حکومت سنبھالی تو ملک میں 16 سے 17 گھنٹے روزانہ لوڈشیڈنگ ہو رہی تھی لیکن اب صورتحال واضح طور پر مختلف ہے۔ شہروں میں لوڈ شیڈنگ کم ہو کر تین گھنٹے اور دیہی علاقوں میں 6 گھنٹے تک آگئی ہے، 14 سال کے بعد گزشتہ دو برسوں سے صنعتوں کو بلاتعطل بجلی فراہم کی جارہی ہے جس کے نتیجے میں ملکی معیشت اور روزگار پر مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ فوج، قانون نافذ کرنے والے ادارے اور عوام گزشتہ کئی برسوں سے دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑ رہے ہیں، 2013ء تک دہشت گردی کے خلاف جنگ بغیر کسی جوابی بیانیہ کے لڑی گئی۔2013میں کراچی میں آپریشن شروع کیا گیا اور قومی داخلی سیکورٹی پالیسی کا اعلان کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ پشاور میں آرمی پبلک سکول کے افسوسناک واقعہ کے بعد قومی ایکشن پلان پر عمل شروع کیا گیا، 2013ء میں اوسطاً دہشت گردی کے 2400 واقعات پیش آئے جبکہ 2017ء میں 170سے 180 واقعات رونما ہوئے۔ مریم اورنگزیب نے کہا کہ دنیا کے انسداد دہشت گردی کے سب سے بڑے اقدام آپریشن ضرب عضب کے نتیجے میں دہشت گرد بھاگ رہے ہیں، ملک میں لاقانونیت کو روکنے کیلئے آپریشن ردالفساد بھی شروع کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے ملکی معیشت کو بلند شرح نمو کی راہ پر گامزن کر دیا ہے اور تمام سروے و اشاریئے پاکستانی معیشت کی بڑھوتری کو ظاہر کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 2013ء میں پاکستان ڈیفالٹ کے خطرے سے دو چار تھا اور دنیا اس کے استحکام کے حوالے سے اپنے خدشات ظاہر کررہی تھی تاہم اب پاکستان کی سٹاک ایکسچینج ایشیاء کی سب سے زیادہ تیزی سے ترقی کرتی ہوئی سٹاک ایکسچینج بن گئی ہے۔ وزیرمملکت نے کہا کہ حکومت نے ملک میں تعلیم کا معیار بلند کرنے کے لئے وزیراعظم کے تعلیمی اصلاحات کے پروگرام کا آغاز کرکے اپنے ایک اور وعدے کی تکمیل کی ہے۔پاکستان سکولوں میں داخلے کی 100 فیصد شرح حاصل کرنے کیلئے کوشاں ہے، اس سلسلے میں پنجاب نے 55 ہزار سکولوں کے ساتھ نمایاں پیش رفت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چین پاکستان اقتصادی راہداری ملک کے لئے ایک نعمت ہے جس سے نہ صرف پاکستان بلکہ پورا خطہ آپس میں منسلک ہو جائے گا، اقتصادی راہداری دنیا کے تمام بڑے اقتصادی مراکز کو منسلک کرے گی، اس منصوبے کو پوری دنیا نے گیم چینجر قرار دیا ہے ۔ مریم اورنگزیب نے کہا کہ جو عناصر پاکستان کو پیچھے دھکیلنا چاہتے ہیں وہ سی پیک سے خوف زدہ ہیں لیکن پاکستان کے عوام ایسے عناصر کے مذموم عزائم کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا ذمہ دارانہ کردار ادا کرتے ہوئے سی پیک کو متاثر کرنے والے عوامل سے گریز کرے۔ انہوں نے کہا کہ جو عناصر پاکستان اور اس خطے کے خیرخواہ نہیں ہیں وہ افراتفری چاہتے ہیں تاکہ سی پیک پر کام کی رفتار میں خلل واقع ہو حالانکہ سیاست کرنے کیلئے اور بھی ایشوزموجود ہیں لیکن بعض حلقوں کو قومی مفادات کے معاملات پر سیاست کرنے سے گریز کرنا چاہئے۔ قبل ازیں وزیر مملکت اطلاعات، نشریات و قومی ورثہ مریم اورنگزیب نے قومی خبر رساں ادارے (اے پی پی ) کے دورہ کے موقع پر اعلیٰ سطح کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دنیا میں پاکستان کا مثبت تشخص اجاگر کرنے کے لئے اے پی پی کے مزید فعال کردار کی ضرورت ہے۔ وزیر مملکت مریم اورنگزیب کو بریفنگ دیتے ہوئے منیجنگ ڈائریکٹر مسعود ملک نے بتایا کہ اے پی پی مصدقہ خبروں کی ترسیل کا ادارہ ہے جو خبروں، فوٹو، ویڈیو فوٹیج اور سوشل میڈیا کے ذریعے پاکستان میں عوام الناس اور دنیا بھر تک خبریں پہنچارہی ہے۔انہوں نے بتایا کہ اے پی پی انگلش، اردو، عربی کے علاوہ صوبائی یکجہتی کو یقینی بنانے کیلئے علاقائی زبانوں سرائیکی ‘سندھی ‘پشتو ‘بلوچی میں بھی خبریں قومی اخبارات ‘علاقائی اخبارات ‘ٹی وی چینلز ‘ریڈیو چینلز اور خبروں کے تبادلے کے معاہدوں کی روشنی میں مختلف بین الاقوامی نیوز ایجنسز کو بھی فراہم کر رہی ہے۔انہوں نے بتایا کہ اے پی پی کے ملک کے تمام صوبوں اور بڑے بڑے شہروں میں بیورو آفسز اور سٹیشنز کام کررہے ہیں۔ وزیر مملکت اطلاعات نشریات و قومی ورثہ مریم اونگزیب نے اے پی پی کے سوشل میڈیا کو مزید فعال بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔انہوں نے کہا کہ اے پی پی اپنی خبروں ‘فیچرز ‘رائٹ اپ اوردستاویزی فلموں کے ذریعے حکومتی اقدامات کو بہتر انداز میں اجاگر کرے۔انہوں نے ایم ڈی اے پی پی کو ہدایت دی کہ ایڈیٹوریل سٹاف کے استعداد کار میں اضافے اور رپورٹنگ کو عالمی معیار کے مطابق لانے کیلئے تربیتی پروگرام کو مزید تیز کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ اے پی پی کی اپنی اہمیت اور افادیت ہے، ہر سطح پر اس اہمیت اور افادیت کو یقینی بنانے کیلئے وزارت اطلاعات و نشریات اپنا کردار ادا کریگی۔وزیر مملکت مریم اورنگزیب نے کہا کہ تاریخ گواہ کے کہ موجودہ حکومت کے ساڑھے تین برسوں کے دوران پاکستان کے اندر جو ترقیاتی کام ہوئے ہیں وہ گذشتہ 40سے 50سالوں کے دوران نہیں ہوسکے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے کلچر، سپورٹس اور سیاحت کو عالمی سطح پر اجاگر کرنے کیلئے سٹیٹ میڈیا اپنا بھرپور کردار ادا کر رہا ہے۔ بعد ازاں وزیر مملکت نے اے پی پی کے سینٹرل نیوز ڈیسک، ویڈیو نیوز سروس، جنرل رپورٹنگ اور دیگر شعبہ جات کا دورہ بھی کیا۔

مریم اورنگزیب

مزید : کراچی صفحہ اول