بٹ خیلہ ،نقل کی اجازت نہ دینے پر امتحانی عملہ کو دھمکیاں

بٹ خیلہ ،نقل کی اجازت نہ دینے پر امتحانی عملہ کو دھمکیاں

بٹ خیلہ (بیورورپورٹ )عشیرئی پبلک سکول دیرمیں نقل کی اجازت نہ دینے پرامتحانی عملہ کے خلاف سکول کے اساتذہ اورطلباء کی جانب سے احتجاج اور امتحانی عملہ کو سنگین نتائج کی دھمکیوں کے خلاف ھیڈماسٹرایسوسی ایشن ملاکنڈکے صدرحکیم خان اور آل ٹیچرزکوارڈینیشن کونسل ملاکنڈکے صدرامیرغزن ودیگرکی پریس کانفرنس۔ڈپٹی کمشنرملاکنڈعشیرئی پبلک سکول دیرمیں تعینات امتحانی عملہ کو فوری طورپر تحفظ دینے کے لئے اقدامات کریں اورپاک آرمی کی نگرانی میں امتحانی ہال کو دوسرے سکول میں منتقل کریں اورواقع میں ملوث ملزمان کے خلاف فوری کاروائی کی جائے ۔تفصیلات کے مطابق گذشتہ روزعشیرئی پبلک سکول دیرمیں اس وقت صورتحال کشیدہ ہوگئی جب ریذیڈنٹ انسپکٹرشیرولی نے مبینہ طورپر جماعت نہم ودہم کے سالانہ امتحان میں امتحانی عملہ کی جانب سے طلباء کو نقل کی اجازت نہ دینے پر طلباء کو پرچے سے بائیکاٹ پر اُکسایا ۔اورطلباء نے اساتذہ سمیت بائیکاٹ کرکے امتحانی عملہ کے خلاف نعرے بازی کی اور امتحانی عملہ کو سنگین نتائج کی دھمکی دی جس کے خلاف امتحانی عملہ نے فوری طورپر مقامی پولیس کو طلب کرلیا ۔تاہم بعد میں طلباء کو امتحان میں بیٹھنے کی اجازت دے دی گئی ۔امتحانی عملہ کے خلاف عشیرئی پبلک سکول دیرکے ریذیڈنٹ انسپکٹرشیرولی کی جانب سے طلباء کو پرچہ سے بائیکاٹ پر اُکسانے اورامتحانی عملہ کو سنگین دھمکیوں کے خلاف ہیڈ ماسٹر ایسوسی ایشن ملاکنڈ کے صدر حکیم خان ، آل ٹیچرز کوارڈینینشن کونسل ملاکنڈ کے صدر امیر غزن اتمان خیل ، نائب صدر محب اللہ بخاری ، تحصیل بٹ خیلہ کے صدر سلیم خان و دیگر نے مشترگہ طور پر پریس کانفرنس کرتے ہوئے اس واقع کی پُر زور مذمت کی اور واقع میں ملوث مبینہ ٹیچر شیر ولی اور سکول انتظامیہ کے خلاف فوری کاروائی کا مطالبہ کیا ۔ انہوں نے چیئر مین ملاکنڈ بورڈ، سیکرٹری ملاکنڈ بورڈ اور ڈی سی دیر سے واقع کی غیر جانبدارانہ تحقیقات اور امتحانی عملہ کو فوری طور پر تحفظ دینے اور امتحانی حال کو فوج کی نگرانی میں کسی دوسرے قریبی سکول منتقل کرنے کا کا مطالبہ کیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر