اتھرے تھانیدار کا خواجہ سرا پر تشدد، بازار میں برہنہ کردیا، صحافی پر بھی حملہ موبائل توڑ ڈالا

اتھرے تھانیدار کا خواجہ سرا پر تشدد، بازار میں برہنہ کردیا، صحافی پر بھی ...
اتھرے تھانیدار کا خواجہ سرا پر تشدد، بازار میں برہنہ کردیا، صحافی پر بھی حملہ موبائل توڑ ڈالا

  

بہاولنگر (ویب ڈیسک) وردی بدلی مگر رویے نہ بدل سکے، تھانہ صدر بہاولنگر کے اتھرے اے ایس آئی نے سرعام مین شاہراہ پر خواجہ سراءکو تشدد کا نشانہ بنا کر برہنہ ہونے پر مجبور کردیا۔ موقع پر موجود واقعہ کی فوٹیج بنارہا مقامی سینئر صحافی بھی اتھرے تھانیدار کے تشدد کا شکار ہوگیا، موبائل کی ویڈیو ضائع کرنے کے لئے صحافی پر جان لیوا حملہ، موبائل فون توڑ دیا۔ ڈی پی او بہاولنگر کا معاملے پر فوری ایکشن، خواجہ سرا اور صحافی کی مدعت میں مقدمات درج مگر تاحال پولیس گردی کرنے والا غنڈہ اے ایس آئی گرفتار نہ ہوسکا۔ صحافتی، تاجر، وکلاءاور شہری حلقوں کا سرعام پولیس گردی کرنے والے بدنام زمانہ کرپٹ اے ایس آئی کے خلاف شدید احتجاج۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

روزنامہ خبریں کے مطابق گزشتہ روز تھانہ صدر بہاولنگر کے بدنام زمانہ اے ایس آئی اسماعیل موہل نے محلہ فاروق آباد میں ہارون آباد روڈ پر دن دیہاڑے سرعام خواجہ سرا کو شدید تشدد کا نشانہ بنا کر برہنہ ہونے پر مجبو رکردیا۔ اس سارے واقعہ کو موقع پر موجود درجنوں شہری دیکھتے رہے مگر کسی نے پولیس گردی کو روکنے کی ہمت نہ کی، موقع پر موجو د مقامی سینئر صحافی نے اپنے فرائض منصبی کی ادائیگی کے لئےاپنے موبائل فون سے واقعہ کی فوٹیج بجالی، جس پر پولیس گردی کرنے والے اے ایس آئی اسماعیل موہل نے صحافی کو بھی نابخشا اور موبائل فون چھیننے کے لئے اس پر اسلحہ اور آہنی راڈ سے جان لیوا حملہ کردیا اور موبائل فون توڑ دیا اور سنگین نتائج کی دھمکیاں دیتے ہوئے عوام کے جمع ہونے کی وجہ سے موقع سے بھاگ نکلا۔

بعدازاں معاملے کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی پی او بہاولنگر حافظ عطاءالرحمن کے حکم پر تھانہ سٹی بی ڈویژن میں پولیس گردی کرنے والے اے ایس آئی اور اس کے ساتھیوں کے خلاف خواجہ سرا اور صحافی کی مدعیت میں الگ الگ مقدمات درج کرلئے گئے مگر پولیس تاحال مفرور اے ایس آئی کو گرفتا رکرنے سے قاصر ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل بھی مذکورہ بدنام زمانہ اے ایس آئی متعدد سنگین نوعیت کے معاملات میں ملوث رہ چکا ہے اور ہر بار اپنے اثر و رسوخ سے اپنے خلاف ہونے والی ہر انکوائری کو ختم کرواکر من پسند پوسٹنگ حاصل کرلیتا ہے جس کی وجہ سے شہریوں میں عدم احساس تحفظ پای اجاتا ہے اور کوئی بھی عام شہری اپنے ساتھ ہونے والے ظلم اور ناانصافی پر صرف اس وجہ سے خاموش رہ جاتا ہے کہ مذکورہ اے ایس آئی کے خلاف کوئی موثر ایکشن نہیں ہوسکا۔

مزید : علاقائی /پنجاب /بہاول نگر