رمضان المبارک (ارفن ڈے)

رمضان المبارک (ارفن ڈے)
 رمضان المبارک (ارفن ڈے)

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

15
نیکیوں کا موسم بہار رمضان المبارک کا پہلا عشرہ رحمتوں کے سائے میں گزر چکا ہے، مغفرت کے عشرے کی بہاریں جاری ہیں، گنتی کے دِنوں کے جانے کا پتہ ہی نہیں چل رہا،خوش قسمت ہیں وہ لوگ جو اس بابرکت ماہِ رمضان کی فیوض و برکات کو سمیٹنے اور اپنے رب کا قرب حاصل کرنے میں مصروف ہیں،صرف چھ دن کے بعد 15رمضان المبارک یوم یتامی ٰ آ رہا ہے جسے یونیسف ہر سال 15رمضان کو  (Orphans Day) کے طور پر مناتا ہے۔ اِس وقت دنیا میں یتیم بچوں کی تعداد14کروڑ سے زائد ہو چکی ہے، 14کروڑ میں سے6کروڑ15لاکھ یتیم بچے ایشیا میں موجود ہیں۔گزشتہ برسوں میں اسلامی ممالک میں جاری جنگ کی وجہ سے یتیم بچوں کی تعدداد میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے۔
عراق،افغانستان، فلسطین،شام، لبنان سمیت پاکستان میں یتیم بچوں کی بڑی تعداد موجود ہے۔یونیسف اور اقوام متحدہ کے مطابق پاکستان میں یتیم بچوں کی تعداد44لاکھ50ہزار تک پہنچ چکی ہے۔ان میں بڑی تعداد ایسے بچوں کی ہے جنہیں تعلیم و تربیت، صحت اور خوراک کی مناسب سہولیات میسر نہیں ہیں۔ یونیسف کے مطابق پاکستان کا شمار یتیم بچوں کے حوالے سے فہرست میں دس ممالک میں شامل ہے۔پاکستان میں یتیم بچوں کی کفالت کے درجنوں ادارے موجود ہیں،جو یتیم بچوں کی کفالت کے مختلف ادارے چلا رہے ہیں، کچھ ادارے یتیم بچوں کی کفالت کیلئے گھروں کی تعمیر(یتیم خانے) کے منصوبے دے رہے ہیں، کچھ ادارے یتیم بچوں کی کفالت ان کے گھروں میں کر رہے ہیں۔یتیم بچوں کی کفالت کے اداروں نے پاکستان میں یتیم بچوں کے مسائل اور معاشرے کی اجتماعی ذمہ داریوں کے احساس کیلئے پاکستان آرفن کیئر فورم تشکیل دے رکھا ہے۔


 پاکستان آرفن کیئر فورم نے 15رمضان المبارک کو ہر سال یوم یتامیٰ منانے کا فیصلہ کر رکھا ہے۔گزشتہ رمضان المبارک میں بھی یوم یتامیٰ منایا گیا۔ پاکستان آرفن کیئر فورم میں الخدمت فاؤنڈیشن، ہیلپنگ ہینڈ، مسلم ایڈ، اسلامک ریلیف پاکستان، ہیومن اپیل، قطر چیرٹی،ایڈ فاؤنڈیشن، غزالی ایجوکیشن ٹرسٹ، تعمیر ملت فاؤنڈیشن، ایدھی ہومز، انجمن فیض الاسلام،صراط الجنت ٹرسٹ، ضیب فاؤنڈیشن، سویٹ ہومز، فاؤنڈیشن آف دی فیتھ حمایت السلام فاؤنڈیشن شامل ہیں۔ آرفن کیئر فورم نے ہر اس ادارے کے لئے ممبر شپ دینے کا پروگرام بنا رکھا ہے جو یتیم بچوں کی کفالت کا پروگرام رکھتا ہو وہ پاکستان آرفن کیئر فورم کا ممبر بن سکتا ہے۔ اسلامی ممالک کی تنظیم او آئی سی(آرگنائزیشن آف اسلامک کوآپریشن) نے پہلی بار ترکی کی معروف سماجی مدد گار تنظیم آئی ایچ ایچ کی تجویز پر اپنے وزرائے خارجہ کی کونسل کے40ویں سیشن منعقدہ 9تا11دسمبر 2013ء میں قرارداد نمبر (ICHAD40/1) آرٹیکل نمبر21میں فیصلہ کیا گیا کہ تمام اسلامی ممالک15رمضان المبارک کو یتیم بچوں کے دن کے طور پر منایا جائے گا۔اس دن یتیم بچوں کی فلاح و بہبود، کفالت اور عملی اقدامات کی اہمیت کو اجاگر کرنے کے لئے تمام ممبر ممالک کی حکومتیں،سول سوسائٹی اور رفاعی ادارے بھرپور آواز اٹھائیں گے۔اس فیصلے کو دنیا بھر کی طرح پاکستان کے رفاعی اداروں نے بھی خوب سراہا اور اس پر عمل بھی کیا اور15رمضان کو پاکستان میں بھی(Orphans day) منانے کا فیصلہ کیا۔قابل ِ ستائش عمل یہ ہے کہ15رمضان المبارک کو یوم یتامیٰ منانے کا فیصلہ حکومتی سطح پر ہوا۔حکومتی سرپرستی ملنے کے بعد اس کے ثمرات ملک میں بسنے والے ہر ایک یتیم اور بے سہارا تک پہنچائے جا سکیں۔


پاکستان آرفن کیئر فورم کی انہی کاوشوں کے نتیجے میں سینٹ آف پاکستان نے20مئی 2016ء کو پاکستان میں ہر سال 15رمضان المبارک کو یتیم بچوں کے دن کے طور پر منانے کی متفقہ قرارداد منظور کی۔ اسی طرح قومی اسمبلی نے بھی 29مئی2018ء کو اس قرارداد کو منظور کر لیا۔پاکستان آرفن کیئر فورم کی کوششیں رنگ لائیں اور سرکاری سطح پر 15رمضان المبارک کو ایوانِ صدر میں مرکزی تقریب کا انعقاد کیا جاتا ہے اور اہل خیر اس دن اللہ کی رضا کی حصول کے لئے یتیم اور مسکین بچوں اور قیدیوں کو کھانا کھلاتے ہیں، آگاہی پروگرامات کا انعقاد ہوتا ہے۔ قرآن عظیم الشان میں آتا ہے لوگ پوچھتے ہیں ہم کیا خرچ کریں، فرمایا گیا انہیں کہہ دو مال جو اللہ نے تمہیں دیا ہے اس میں سے خرچ کرو، اپنے والدین پر، عزیز و اقارب پر، یتیموں، مسکینوں اور مسافروں پر جو بھلائی تم کرو گے اللہ اس سے خوب واقف ہے۔ اللہ تمہیں حکم دیتا ہے کہ یتیموں کے ساتھ انصاف کرو جو بھلائی تم کرو گے اللہ کے علم میں ہے پس تم یتیم پر سختی نہ کرو آپ یتیموں کے بارے میں سوال کرتے ہیں۔ آپ ان کو کہہ دیجئے ان کی خیر خواہی کرنا بہت بہتر ہے اور اگر تم ان کا مال اپنے مال میں ملا بھی لو تو وہ تمہارے بھائی ہیں اللہ تعالیٰ  بدنیت اور نیک نیت ہر ایک کو خوب جانتا ہے۔فرمایا گیا ہے یتیم کی کفالت جنت کا سودا کرنے کے مترادف ہے۔ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا جو یتیم کی کفالت کرے گا وہ قیامت کے دن  میرے ساتھ ایسے ہو گا، اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے ہاتھ کی دونوں انگلیاں جوڑ کر کھڑی کر کے دکھائیں، یتیم کی کفالت کا اجر ثواب بہت زیادہ بتایا گیا ہے۔


پاکستان میں اس وقت یتیموں کی کفالت کے درجنوں اداروں میں الخدمت فاؤنڈیشن کا نام سرفہرست  ہے۔آغوش ہوم کے نام سے یتیم بچوں کی کفالت کا جو منصوبہ دے رکھا ہے، سینکڑوں یتیم بچے خوبصورت گھروں میں پاکیزہ ماحول میں تعلیم و تربیت کے ساتھ رہ رہے ہیں۔اس وقت دنیا بھر میں اس کی مثالیں دی جا رہی ہیں، خوبصورت آغوش ہوم میں بچوں کی دینی،جسمانی اور تعلیمی ضروریات پوری کرنے سمیت کھیلوں کے مواقع بھی فراہم کیے جا رہے ہیں، کھانے پینے کا اعلیٰ درجے کا انتظام کیا گیا ہے، سٹڈی سنٹر بنائے گئے ہیں، آرفن فیملی سپورٹ پروگرام بھی دیا گیا ہے جہاں ایک ایک فیملی کو5000 روپے ماہانہ اور60 ہزار روپے سالانہ بنیادوں پر فراہم کیا جا رہا ہے۔یتیم بچوں کی کفالت کیلئے شروع کیے گئے آغوش پروگرام پر کروڑوں روپے خرچ کیے جا رہے ہیں، ملک بھر میں مختلف مقامات پر آغوش منصوبے زیر تکمیل ہیں۔ دلچسپ امر یہ ہے الخدمت فاؤنڈیشن کے زیر اہتمام یتیم بچوں کے آغوش پروگرام، فیملی سپورٹس پروگرام سمیت دیگر منصوبے سو فیصد اہل خیر کے تعاون سے جاری ہیں۔ ایک دن بعد آرفن ڈے آرہا ہے، نیکیوں کے موسم بہار رمضان المبارک کے دوسرے عشرے میں نیکیاں کمانے اور جنت میں گھر بنانے کے لئے آرفن ڈے کے موقع پر الخدمت فاؤنڈیشن کے آغوش پروگرم میں کم از کم ایک بچے کی کفالت کا ذمہ لے سکتے ہیں،ماہانہ بنیادوں پر اور سالانہ بنیادوں پر کفالت کا بیڑا اٹھا سکتے ہیں۔ اللہ کے دیئے ہوئے مال میں ان یتیم بچوں کا زیادہ حق ہے آئیں مل کر 15رمضان المبارک کو دنیا بھر میں منائے جانے والے آرفن ڈے کے موقع پر اپنی آمدن کا مخصوص حصہ یتیم بچوں کے نام وقف کر دیں۔
اللہ ہماری کوششوں کو اپنی بارگاہ میں قبول فرمائے،آمین
٭٭٭٭٭

مزید :

رائے -کالم -