پی آئی اے میں جعلی ڈگریوں پر بھرتی ملازمین کی 20 روز میں رپورٹ طلب

پی آئی اے میں جعلی ڈگریوں پر بھرتی ملازمین کی 20 روز میں رپورٹ طلب

لاہور (وقائع نگار خصوصی) ڈائریکٹر ایف آئی اے لاہور نے پی آئی اے میں جعلی ڈگریوں پر بھرتی ہونے والے ملازمین کی تحقیقات کے لئے جنرل منیجر پی آئی اے کو ہدایات دیتے ہوئے 20دن میں رپورٹ طلب کر لی ہے ۔پی آئی اے کے ملازمین کی طرف سے ڈائریکٹر ایف آئی اے لاہور کو درخواست دی گی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ وہ عرصہ دراز سے پی آئی اے میں کام کر رہے ہیں تاہم پی ائی اے حکام نے اپنے خاص لوگوں کو نوازنے کے لئے ایم بی اے کی ڈگری کے عوض دو گروپ اوپر پروموشن کی پالیسی نکالی ۔اس پالیسی سے فائدہ اٹھانے کے لئے پی آئی اے کے لوگوں نے بلیک لسٹ یونیورسٹیوں سے ڈگریاں حاصل کیں اور پروموشن لے کر گروپ چار سے چھ میں چلے گئے جس کی وجہ سے کئی سنیئر افسروں کی ترقی روک گئی ۔افسروں کی طرف سے 5افراد کے نام انتظامیہ کو دیئے گئے ہیں جن میں ڈیوٹی افسر تنویر قاسم،سینئر سلیز پروموشن افسر واجد سلیم ،ڈیوٹی افسر انٹرنیشنل کاونٹر قیصرہ تبسم،ڈیوٹی افسر ایئرپورٹ عرفان باسط،لوکل ٹرینگ افسر محمد اعجاز شامل ہیں نے مبلغ ڈیڑھ لاکھ سے 2لاکھ روپے میں الخیر یونیورسٹی سے ایم بی اے کی ڈگریاں لی اور اس یونیورسٹی کا پاکستان میں کوئی کیمپس نہیں ہے اور دوران ڈگری کے حصول کے ان لوگوں نے نہ انتظامیہ کو آگاہ کیا اور نہ ہی امتحانات کے لئے چھٹی لی۔

مزید : صفحہ آخر