رواں سال کسی پروموٹر نے امریکہ ،یورپ اور کنیڈا میں ڈرامہ پیش نہیں کیا

رواں سال کسی پروموٹر نے امریکہ ،یورپ اور کنیڈا میں ڈرامہ پیش نہیں کیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لاہور(فلم رپورٹر)امریکہ،یورپ اور کینیڈا میں رواں سال کے دوران کسی بھی بڑے پروموٹر نے ڈرامہ پیش نہیں کیا ہے،اس کی بڑی وجہ سٹیج ڈراموں کی آڑ میں ہونے والی انسانی سمگلنگ ہے۔ ان حالات کو دیکھتے ہوئے پروموٹرز سٹیج ڈراموں کی بجائے میوزیکل شوز کو منعقد کرنے میں زیادہ دلچسپی لے رہے ہیں،اس کے علاوہ گزشتہ دو سالوں کے دوران بیرون مُلک جتنے بھی ڈرامے پیش کئے گئے اُن میں پروموٹرز کو بہت زیادہ مالی نقصان برداشت کرنے کے علاوہ نام نہاد پرفارمر لڑکیوں کی شرمناک حرکتوں کے باعث کئی پروموٹرز نے اعلان کیا ہے کہ وہ آئندہ کسی بھی مُلک مین سٹیج ڈرامہ نہیں کریں گے ،ہماری اکثر پرفارمرز مُلک سے باہر جاکر شراب نوشی اور دیگر غیر اخلاقی کاموں میں ملوث ہوجاتی ہیں اس کے ساتھ ساتھ وہ پروموٹرز کو بلیک میل کرکے شاپنگ کرتی ہیں،اگر کوئی پروموٹر شاپنگ کروانے سے انکار کرتا ہے تو وہ کہتی ہیں کہ ہم واپس پاکستان جا کر تمہیں بدنام کریں گی۔ ایک نامور پرفارمر نے نام نہ بتانے کی شرط پر بتایا کہ چند گندی مچھلیوں نے پورے تالاب کو گند اکردیا ہے،اس کے علاوہ ایک ٹولہ ایسا ہے جو ڈرامہ کرنے کے بہانے غیر معروف لڑکیوں کو باہر لے جاکر اُن سے ہر قسم کے غیر اخلاقی دھندے کرواتا ہے،ایسے لوگوں کی وجہ سے حقیقی کام کرنے والے بھی بدنام ہورہے ہیں۔یہ لوگ انسانی سمگلنگ جیسے مکروہ کام میں بھی ملوث ہیں۔میرا حکومت سے مطالبہ ہے کہ وہ ایسے لوگوں کا محاسبہ کرے تاکہ سچے فنکاروں کی روزی روٹی چلتی رہے۔پروڈیوسر چنگیز اعوان نے کہا کہ اچھے اور بُرے لوگ ہر جگہ ہوتے ہیں بُرائی کرنے والوں کی وجہ سے اب صحیح کام کرنے والوں کو بھی ویزہ کے حصول میں بے پناہ دشواری ہورہی ہے۔بیرون مُلک سٹیج ڈرامے نہ ہونے کی وجہ سے وہاں پر مقیم پاکستانی اپنے محبوب فنکاروں کی پرفارمنس دیکھنے کو ترس رہے ہیں ۔علی عیسیٰ اینڈ کمپنی نے ہمیشہ بُرے کاموں کی مذمت کی ہے۔ہمارا مشن سچی پاکستانی ثقافت کو فروغ دینا ہے۔

مزید :

کلچر -