وزیر اعظم کااظہار برہمی ، خواجہ آصف کو لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم کرنے کی ہدایت

وزیر اعظم کااظہار برہمی ، خواجہ آصف کو لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم کرنے کی ہدایت

اسلام آباد(آن لائن) وزیراعظم محمد نواز شریف نے ماہ صیام میں لوڈشیڈنگ پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے وزارت پانی و بجلی کو سحری و افطاری میں لوڈشیڈنگ نہ کرنے جبکہ گردشی قرضے کی تھرڈ پارٹی آڈٹ اور توانائی مسائل کی فیصلہ سازی میں صوبائی نمائندوں کو بھی شامل کرنے کی ہدایت کر دی، انہوں نے یہ ہدایت منگل کو ہونے والی کابینہ کی توانائی کمیٹی کے اجلاس کے دوران دی، جس میں وفاقی وزیر پانی و بجلی خواجہ محمد آصف، وزیر پیٹرولیم شاہد خان عباسی، وفاقی وزیر خزانہ اسحاق سمیت دیگر نے شرکت کی، اس موقع پر وزیراعظم کو سیکریٹری پانی و بجلی یوسف کھوکھر کی جانب سے بریفنگ دی گئی جس میں ملک میں بجلی کی موجودہ طلب ورسد سے آگاہ کیا گیا، وزیراعظم نواز شریف نے کہا کہ بجلی کی طلب واسہ سے متعلق آئندہ 12سے 36ماہ کے درست اعداد شمار اکھٹے کیے جائیں، تھرڈ پارٹی آڈٹ کے ذریعے گردشی قرضوں کا از سرنو جائزہ لیا جائے جبکہ آڈٹ کے ذریعے ایندھن کی ادائیگیوں، لائن لاسز اور دیگر حقائق کا جائزہ لینے سمیت توانائی کے اہم امور پر فیصلہ سازی کیلئے صوبائی نمائندوں کو بھی شامل کیا جائے تاکہ باہمی اتفاق و اتحاد اور مشاورت سے معاملات نمٹائے جائیں۔اس موقع پر وزیر اعظم نے وفاقی وزیر پانی و بجلی خواجہ آصف کو خصوصی ہدایت کی ہے کہ کراچی سمیت ملک بھر میں لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم کیا جائے تاکہ عوام کو ماہ رمضان میں مشکلات کا سامنا نہ ہو اور اس حوالے سے فوری طور پر خصوصی اقدامات بروئے کار لائے جائیں ۔اس پر خواجہ آصف نے وزیر اعظم کو آگاہ کیا کہ انہوں نے گزشتہ روز وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ سے رابطہ کر کے انہیں کراچی میں لوڈشیڈنگ حوالے آگاہ کیا تھا اور انہیں یقین دہانی بھی کرائی ہے کہ آئندہ کراچی میں ایسی لوڈشیدنگ نہیں کی جائے گی جبکہ خواجہ آصف نے کمیٹی کو بتایا کہ اس وقت ملک بھر میں بجلی کی طلب 22550 میگاواٹ تک پہنچ چکی ہے اور اس وقت ملک بھر میں بجلی کا شارٹ فال 5430 میگاواٹ تک پہنچ چکا ہے اس وقت دیہاتوں میں 12 سے 14 گھنٹے اور شہروں میں 8 سے 10 گھنٹے لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے ۔

مزید : صفحہ اول