ماضی میں پاکستانی شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بھی فروخت ہوئے ،وزیر داخلہ

ماضی میں پاکستانی شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بھی فروخت ہوئے ،وزیر داخلہ

 اسلام آباد(صباح نیوز)وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثارعلی خان نے کہا ہے کہ آصف علی زرداری کانام ای سی ایل میں شامل نہیں اورنہ ان کیخلاف کوئی مقدمہ ہے اگر کسی کے پاس معلومات ہیں تو وزارت داخلہ کو آگاہ کرے ،ملک بھر میں 9میگاسینٹرزاور 12ایگزیکٹیو پاسپورٹس سنٹرز ستمبر تک قائم ہوجائیں جو 24گھنٹے کھلے رہیں گے،ماضی میں ہمارے شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بھی فروخت ہوتے رہے۔ان خیالات کا اظہاروفاقی وزیر داخلہ چودھری نثارعلی خان نے نادرا ہیڈ کوارٹر میں آن لائن نادرامیگاسینٹر لاہور اورسرگودھا وفیصل آباد میں ایگزیکٹیو پاسپورٹ دفاتر کے افتتاح کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا،وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ ملک میں کوئی ضلع ایسا نہیں ہوگا جہاں پاسپورٹ آفس نہ ہو جبکہ پاکستان پوسٹ کے ساتھ مل کر ملک بھر میں 1500نئے نادرا سنٹرزقائم کریں گے۔انہوں نے کہا کہ بلاک کئے گئے شناختی کارڈز میں سے ایک لاکھ ساٹھ ہزار کو بحال کردیا ہے جبکہ30ہزار پاسپورٹ کینسل کئے کسی ایک کے خلاف بھی اپیل نہیں آئی۔انہوں نے مزید کہا کہ دس ہزار پاکستانی ایسے تھے جنہوں نے افغان مہاجرین کی مراعات حاصل کرنے کیلئے پاکستان میں رجسٹریشن کارڈز حاصل کررکھے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ایک ایک شخص نے چار چار شناختی کارڈ لیئے ہوئے تھے ہم نے ان لوگوں کی تین درجہ بندیاں کی ہیں ۔ کچھ کے شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بحال کردیئے ہیں لیکن تیسرے درجے والے افراد کے خلاف تحقیقات ہوں گی ۔ انہوں نے کہا کہ یہ مشکل کام ہے بعض معلومات میں میڈیا کے سامنے بیان نہیں کرسکتا حتی کہ کے اپنی حکومت کے سامنے بھی بیان نہیں کیا ماضی میں ہمارے شناختی کارڈ اور پاسپورٹ بھی فروخت ہوتے رہے ۔ 30ہزار پاسپورٹ کینسل کئے کسی ایک کے خلاف بھی اپیل نہیں آئی ۔ نادرا حکام کو ہدایت کی ہے کہ جعلی شناختی کارڈ رکھنے والے کارڈ منسوخ کریں مگر بلا وجہ کسی پاکستانی کو تکلیف نہ دیں ہمارے اقدامات کے نتیجے میں 36ہزار غیر ملکی دباؤ میں آکر خود ہمارے پاس آئے اور اپنے شناختی کارڈ منسوخ کرائے ۔

وزیرداخلہ

مزید : صفحہ آخر