نیب کا منظور قادر ، این ایل سی انتظامیہ ، قراقرم یونیورسٹی کے افسروں سمیت دیگر کیخلاف انکوائری کا فیصلہ

نیب کا منظور قادر ، این ایل سی انتظامیہ ، قراقرم یونیورسٹی کے افسروں سمیت ...

اسلام آباد (این این آئی)قومی احتساب بیورو (نیب )ایگزیکٹو بورڈ نے معاہدے کے مطابق چینی کی عدم فراہمی پر میسرز حق باہو شوگر ملز پرائیویٹ لمیٹڈ کے چیف ایگزیکٹو ریاض قدیر بٹ،بینک افسران کی ملی بھگت سے جعلی کاغذات پر قومی خزانے کو 195.217 ملین روپے کا نقصان پہنچا نے پرڈائریکٹر میسرزا یس بی ہوزری فیکٹری پرائیویٹ لمیٹڈ فیصل آباد شہناز اکرام کیخلاف بدعنوانی ریفرنس دائر کرنے ، غیر معیاری پٹرولیم مصنوعات کی خریداری اور تقسیم میں بدعنوانی پر پاکستان سٹیٹ آئل کے افسران کے خلاف انوسٹی گیشن ، 1200 غیر قانونی بھرتیوں پرڈائریکٹر جنرل سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کراچی منظور قادر، غیر قانونی بھرتیوں پرقراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی گلگت بلتستان کے افسران، کابینہ ڈویژن کی پابندی کے باوجود 86 ایمپورٹڈ گاڑیوں کی خریداری پر نیشنل لاجسٹک سیل (این ایل سی) کی انتظامیہ ، مشتبہ رقوم کی منتقلی پراسسٹنٹ کمشنر منسٹری آف لیبر ویلفیئر حکومت سندھ فوزیہ شاہ جیلانی اور آفتاب حسین شاہ اراضی کے ریکارڈ میں ردوبدل اور ناجائز ذرائع سے اثاثے بنانے پر سابق رکن صوبائی اسمبلی نصر اللہ بلوچ کے خلاف انکوائری کا فیصلہ کیا ، جبکہ چیف ایگزیکٹو آفیسر میسرز یونائیٹڈ انجینئرز اور کنٹریکٹر پرائیویٹ لمیٹڈ لاہور احسان اللہ چٹھہ کی 29.850 ملین روپے اور این ٹی سی کے افسران اور میسرز یونائیٹڈ کنٹریکٹر پرائیویٹ لمیٹڈ کے خلاف مقدمے میں ظہیر عالم شیخ کی 2.495 ملین روپے پلی بارگین کی درخواست منظور کر لی۔نیب ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس چیئرمین نیب قمر زمان چوہدری کی صدارت میں نیب ہیڈ کوارٹر اسلام آباد میں ہوا۔ ایگزیکٹو بورڈ نے اجلاس میں میسرز حق باہو شوگر ملز پرائیویٹ لمیٹڈ کے چیف ایگزیکٹو ریاض قدیر بٹ اور دیگر کیخلاف بدعنوانی ریفرنس دائر کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر الزام ہے کہ انہوں نے ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان اور یوٹیلٹی سٹوروں ضروری چینی فراہم نہیں کی بعد میں چینی کی فراہمی بند کر دی اور ایڈوانس رقم خردبرد کرلی ، جس سے قومی خزانے کولاکھوں روپے کا نقصان ہوا،ایگزیکٹو بورڈ نے ڈائریکٹر میسرزا یس بی ہوزری فیکٹری پرائیویٹ لمیٹڈ فیصل آباد شہناز اکرام کے خلاف بدعنوانی ریفرنس دائر کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس مقدمے میں ڈائریکٹر میسرزا یس بی ہوزری فیکٹری پرائیویٹ لمیٹڈ فیصل آباد نے بینک افسران کی ملی بھگت سے جعلی کاغذات پر دھوکہ دہی کی جس سے قومی خزانے کو 195.217 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔ اجلاس میں پاکستان سٹیٹ آئل کے افسران اور دیگر کے خلاف انویسٹی گیشن کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر غیر معیاری پٹرولیم مصنوعات کی خریداری اور تقسیم میں بدعنوانی کا الزام ہے جس سے قومی خزانے کو لاکھوں روپے کا نقصان پہنچا۔ اجلاس میں طاہر ٹریڈرز رحیم یار خان کے مالک محمد طاہر اسماعیل کے خلاف انویسٹی گیشن کی منظوری دی گئی۔ ملزم غیر قانونی بروکریج ہاؤس قائم کرکے لوگوں کو بڑے پیمانے پر دھوکہ دہی سے لوٹنے کا الزام ہے جس سے قومی خزانے کو 315.264 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔ ایگزیکٹو بورڈ نے ڈائریکٹر جنرل سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کراچی منظور قادر و دیگر کے خلاف انکوائری کا فیصلہ کیا۔ ملزمان پر 1200 غیر قانونی بھرتیوں کا الزام ہے جس سے قومی خزانے کو 1.487 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔ اجلاس میں ڈائریکٹر جنرل سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کراچی منظور قادر و دیگر کے خلاف انکوائری کا فیصلہ کیا گیا۔ ملزمان پر نان کمرشل روڈ پر کمرشل بلڈنگ سائٹ پلان کی غیر قانونی منظوری کا الزام ہے جس سے قومی خزانے کہ 343.5 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔ ایگزیکٹو بورڈ نے قراقرم انٹرنیشنل یونیورسٹی گلگت بلتستان کے افسران کے خلاف انکوائری کی منظوری دی۔ ملزمان پر اختیارات سے تجاوز اور غیر قانونی بھرتیوں کا الزام ہے جس سے قومی خزانے کو 40.975 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔ اجلاس میں نیشنل لاجسٹک سیل (این ایل سی) کی انتظامیہ کے خلاف انکوائری کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر کابینہ ڈویژن کی پابندی کے باوجود 86 ایمپورٹڈ گاڑیوں کی خریداری کے ذریعے 85.7 ملین روپے کے غیر قانونی اخراجات کا الزام ہے۔ اجلاس میں میسرز جنرل انشورنس کمپنی لمیٹڈ کے خلاف انکوائری کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر ناجائز ذرائع سے اثاثے بنانے کا الزام ہے جس سے قومی خزانے کو 57.156 ملین روپے کا نقصان پہنچا۔ ایگزیکٹو بورڈ نے اسسٹنٹ کمشنر منسٹری آف لیبر ویلفیئر حکومت سندھ فوزیہ شاہ جیلانی اور آفتاب حسین شاہ کے خلاف انکوائری کی منظوری دی۔ ملزمان پر مشتبہ رقوم کی منتقلی کا الزام ہے۔ یہ کیس سٹیٹ بینک آف پاکستان نے نیب کو ریفر کیا۔ اجلاس میں سابق ایکس ای این سی اینڈ ڈبلیو محکمہ بلوچستان عدیل انور و دیگر کے خلاف انکوائری کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر ٹھکیوں میں 9.6 ملین روپے خرد برد کا الزام ہے۔ ایگزیکٹو بورڈ نے چیف ایگزیکٹو آفیسر میسرز یونائیٹڈ انجینئرز اور کنٹریکٹر پرائیویٹ لمیٹڈ لاہور احسان اللہ چٹھہ کی 29.850 ملین روپے اور این ٹی سی کے افسران اور میسرز یونائیٹڈ کنٹریکٹر پرائیویٹ لمیٹڈ کے خلاف مقدمے میں ظہیر عالم شیخ کی 2.495 ملین روپے پلی بارگین کی درخواست منظور کر لی۔ اجلاس میں سپروائزر محکمہ ریونیو سندھ اصغر ویسر اور دیگر کے خلاف مقدمے میں سابق رکن صوبائی اسمبلی نصر اللہ بلوچ اور دیگر کے خلاف انکوائری کی منظوری دی گئی۔ ملزمان پر اراضی کے ریکارڈ کے ٹیمپرنگ کے ذریعے ناجائز اختیارات کے استعمال اور ناجائز ذرائع سے اثاثے بنانے کا الزام ہے۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین نیب قمر زمان چوہدری نے کہا کہ نیب زیروٹالرننس کی پالیسی پر عمل کرتے ہوئے ملک سے بدعنوانی کے خاتمے کیلئے پرعزم ہے نیب زیروٹالرننس کی پالیسی پر عمل کرتے ہوئے ملک سے بدعنوانی کے خاتمے کیلئے پرعزم ہے۔ انہوں نے نیب کے تمام افسران کو ہدایت کی کہ وہ تفتیش اور تحقیقات میں شفافیت پر عمل کرتے ہوئے مقدمات کو تیزی سے نمٹانے کیلئے کوششیں کریں۔

نیب

مزید : علاقائی