حکومت توانائی بحران پر قابو پانے میں ناکام ہو چکی :حیدر ہوتی

حکومت توانائی بحران پر قابو پانے میں ناکام ہو چکی :حیدر ہوتی

مردان (بیورورپورٹ) ا ے این پی کے صوبائی صدر اورسابق وزیراعلیٰ امیرحیدرخان ہوتی ایم این اے نے کہاہے کہ حکومت توانائی بحران پر قابو پانے میں مکمل طورپر ناکام ہوچکی ہے بجلی لوڈشیڈنگ کے خلاف کراچی سے ملاکنڈ تک شہری احتجاج پر مجبورہیں ،خیبرپختون خوا کو اپنے حصے کا بجلی نہیں مل رہا امتیازی سلوک ناقابل برداشت ہوتاجارہاہے صوبائی حکومت کے 350ڈیموں کے دعوے کہاں گئے وہ برطانیہ کے دورے مکمل کرنے کے بعد ہوتی ہاؤس میں پارٹی کے صوبائی نائب صدر ایوب شاڑی ،سوات کے صدر شیرشاہ خان ،جنرل سیکرٹری رحمت علی خان اور ضلع ناظم حمایت اللہ مایار کی قیادت میں ملنے والے الگ الگ پارٹی وفود سے گفتگو کررہے تھے ان کاکہناتھاکہ حکومت کے توانائی بحران کے خاتمے کے دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے ہیں بحران کے خاتمے کے لئے گذشتہ چارسال میں کوئی بہتری نہیں لائی گئی انہوں نے کہاکہ خیبرپختون خوا کو اس کے حصے کا بجلی فراہم نہیں کیاجارہا اورامتیازی سلوک ناقابل برداشت ہوتاجارہاہے عوام ماہ مقدس میں بھی احتجاج پر مجبورہیں اے این پی کے صوبائی صدر نے کہاکہ بدقسمتی سے بجلی جیسے عوامی ایشو پر سیاسی سکورننگ کی جارہی ہے بجائے اس کے کہ مسئلے کا حل تلاش کیاجائے اور لوگوں کو سمجھایا جائے حکومت کے اپنے اراکین آگ بجھانے کی بجائے آگ لگارہے ہیں انہوں نے درگئی میں واپڈا کے خلاف مظاہرین پر طاقت کے استعمال کی مذمت کرتے ہوئے بے گناہ شہریوں کی ہلاکت پر افسوس کا اظہا رکیا اورکہاکہ خدارا بجلی بحران کے ایشو پر سیاست سے گریز کیاجائے امیرحیدرخان ہوتی نے کہاکہ صوبائی اور مرکزی حکومت کو چاہئے کہ وہ مل بیٹھ کر بحران پر قابو پانے کے لئے اقدامات اٹھائے جائیں لیکن یہاں بدقسمتی سے مرکزی اورصوبائی حکومتیں دونوں اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے کو تیارنہیں انہوں نے سوال اٹھایاکہ 350ڈیموں کے بلند وبانگ دعوے کرنے والے عوام کو بتائیں کہ صوبے میں توانائی بحران کے لئے کیا اقدامات اٹھائے گئے ہیں تبدیلی والوں کے چھوٹے ڈیموں کی تعمیر کے وعدے کہاں گئے انہوں نے کہاکہ مرکزی حکومت ہوش کے ناخن لیں شدید گرمی اور رمضان کے مقدس مہینے کا خیال کرتے ہوئے لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کیاجائے اور بلاتعطل بجلی کی فراہمی کو ممکن بنایا جائے ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر