غیرت کے نام پر بیوی کے قاتل کی بریت کی درخواست مسترد ،سپریم کورٹ نے مجرم کو سزائے موت سنا دی

غیرت کے نام پر بیوی کے قاتل کی بریت کی درخواست مسترد ،سپریم کورٹ نے مجرم کو ...
غیرت کے نام پر بیوی کے قاتل کی بریت کی درخواست مسترد ،سپریم کورٹ نے مجرم کو سزائے موت سنا دی

  

اسلام آباد (صباح نیوز) سپریم کورٹ نے غیرت کے نام پر بیوی کو قتل کرنے والے ملزم طاہر کی بریت کی درخواست مسترد کرتے ہوئے مجرم کو سزائے موت سنا دی۔ عدالت نے قرار دیا ہے کہ مجرم کا کنڈکٹ قابل رحم نہیں ہے اس نے بیوی کو مسلسل تین فائر مار کر قتل کر دیا۔

’اگر دوران سفر آپ پرسکون نیند سونا چاہتے ہیں تو جہاز کے اس حصے میں سیٹ حاصل کریں کیونکہ۔۔۔‘ ماہرین نے مسافروں کو وہ بات بتادی جو بہت ہی کم لوگوں کو معلوم ہے,خبر پڑھنے کیلئے کلک کریں

جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی مجرم طاہر نے شیخوپورہ میں 2005ءمیں غیرت کے نام پر بیوی کو قتل کر دیا تھا جس پر ٹرائل کورٹ نے اسے سزائے موت سنائی اور ہائیکورٹ نے بھی سزا برقرار رکھی۔

دوران سماعت ریمارکس دیتے ہوئے جسٹس دوست محمد خان کا کہنا تھا کہ اسلام نے 14سو سال قبل خواتین کو حقوق دیئے لیکن بدقسمتی ہے کہ آج کے تعلیم یافتہ معاشرے میں بھی خواتین پر تیزاب پھینکا جاتا ہے۔ کبھی چولھے سے جلا کر مارنے کی وارداتیں سامنے آتی ہیں اور کبھی تشدد کے واقعات سامنے آتے ہیں۔ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ عدالت نے ایسے مقدمات میں فیصلہ سناتے وقت پورے معاشرے کے لئے قانون کو دیکھنا ہوتا ہے۔

عدالت قرار دے چکی ہے کہ اگر اس طرح کے مقدمات میں ملزمان کو سزائیں نہ دی گئیں تو شوہروں کو بیویوں کو قتل کرنے کا لائسنس نہ مل جائے اس لئے احتیاط برتی جاتی ہے۔ جب گھر میں کوئی قتل ہو جائے تو اس کی ذمہ داری خاوند پر رکھی جاتی ہے کہ وہ قتل کی وجوہات بتائے۔

مزید : اسلام آباد