صوبے کے ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کیلئے بستروں کی کوئی کمی نہیں:اجمل خان وزیر

صوبے کے ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کیلئے بستروں کی کوئی کمی نہیں:اجمل خان ...

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا کے مشیر برائے اطلاعات و تعلقاتِ عامہ اجمل خان وزیر نے کہا ہے کہ صوبے کے ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کے لیے بیڈز کی کوئی کمی نہیں ہے۔تمام بڑے ہسپتالوں میں داخل مریضوں کا علاج جاری ہے اور مزید مریضوں کی بھی کافی گنجائش ہے۔ صوبے کے بڑے ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کے لے مختص بیڈز، وینٹی لیٹرز اور علاج معالجے کی سہولیات کے بارے میں سول سیکرٹریٹ میں میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ ایل آر ایچ پشاور میں ٹوٹل1800بیڈز اور 63 وینٹیلیٹرز ہیں جن میں 105 بیڈز اور 25 وینٹیلیٹرز کورونا مریضوں کے لیے مختص ہیں جبکہ ہسپتال میں اس وقت 33 بیڈز پر کورونا کے مریض زیر علاج ہیں اور 20 مریض وینٹیلیٹرز پر ہیں۔ خیبر ٹیچنگ ہسپتال میں 1300 بیڈز اور 56 وینٹیلیٹر ہیں جن میں 55 بیڈز اور 25 وینٹیلیٹرز کورنا مریضوں کے لیے مختص ہیں جبکہ50کورونا مریض بیڈز اور 2 وینٹیلیٹرز پر زیر علاج ہیں۔ اسی طرح حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں 1250 بیڈز اور 52 وینٹی لیٹرز میں سے 25 وینٹی لیٹرز اور 128 بیڈز کورونا مریضوں کے لئے مختص ہیں جبکہ اس وقت 17 وینٹی لیٹرز اور 90 بیڈز پر کورونا کے مریض زیر علاج ہیں۔انہوں نے ایبٹ آباد کی صورتحال بتاتے ہوئے کہا کہ ایوب ٹیچنگ ہسپتال ایبٹ آباد میں ٹوٹل 1250 بیڈز ہیں اور 25 وینٹیلیٹرز ہیں جہاں کورونا مریضوں کے لیے 71 بیڈز اور 12 وینٹیلیٹرز مختص ہیں جبکہ اس وقت ایوب ٹیچنگ ہسپتال میں کورونا کے 28 مریض زیر علاج ہیں اور 4 مریض وینٹیلیٹرز پر ہیں۔اسی طرح مردان میڈیکل کمپلیکس میں ٹوٹل 500 بیڈز ہیں اور 26 وینٹیلیٹرز ہیں جن میں سے 100 بیڈز اور 20 وینٹیلیٹرز کورونا مریضوں کے لیے مختص ہیں جبکہ اس وقت مردان میڈیکل کمپلیکس میں 33 بیڈز پر کورونا مریض زیر علاج ہیں جبکہ 2 مریض وینٹیلیٹرز پر زیر علاج ہیں۔اجمل وزیر نے مزید کہا کہ محکمہ صحت نے مریضوں کے لیے مختلف کیٹیگریز بنائی ہیں،جن میں کیٹیگری اے کے مریضوں کو ہیلتھ کیئر سنٹر میں علاج کی سہولیات فراہم کی جارہی ہیں، اس کیٹیگری میں شوگر، دل، گردہ، لیور، سانس و دیگر بیماریوں میں مبتلا مریض شامل ہیں جنہیں ہسپتال میں داخل کیا جاتا ہے جبکہ کیٹیگری بی اور سی کے مریض جو ہائی رسک پر نہ ہوں اور واضح علامات نہ ہوں کو گھروں میں قرنطینہ کر کے ان کی مانیٹرنگ کی جارہی ہے اور طبی مشورے فراہم کیے جارہے ہیں۔مشیر اطلاعات نے عوام سے گزارش کی ہے کہ علامات کی صورت میں ہسپتال کی بجائے 1700 پر کال کریں تاکہ انکو طبی مشورے فراہم کئے جاسکیں۔ انہوں نے کہا کہ احتیاط نہ کی تو ہسپتالوں پر دباؤ بڑھے گا اس لیے عوام سے اپیل ہے کہ احتیاطی تدابیر پر عمل کریں اور کورونا سے محفوظ رہیں۔ اجمل وزیر کا کہنا تھا کہ وزیر اعلیٰ محمود خان کی قیادت میں تمام تر فیصلے عوام کے تحفظ کی خاطر کیے جا رہے ہیں۔ ملک میں تمام تر فیصلے صوبوں کی مشاورت سے ہو رہے ہیں اور اس کا کریڈٹ وزیر اعظم عمران خان کو جاتا ہے۔

مزید :

صفحہ اول -