ٹڈی دل کرونا سے زیادہ خطرناک،حکومت فوری اقدامات کرے، ریاض پیرزادہ

  ٹڈی دل کرونا سے زیادہ خطرناک،حکومت فوری اقدامات کرے، ریاض پیرزادہ

  

حاصل پور (نمائندہ خصوصی)حکومت نے کرونا وائرس اور ٹڈی دل (مکڑی) کا خاتمہ نہ کیا تو پاکستان قحط کا شکار ہوسکتا ہے، اتنی اموات کرونا بیماری سے نہیں ہوئیں جتنی قحط کی وجہ سے ہوں گی۔ ان خیالات کا اظہار سابق وفاقی وزیر او رممبر قومی اسمبلی میاں ریاض حسین پیرزادہ نے اپنے آبائی شہر شیخ واہن میں عید ملنے والوں سے گفتگوکرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ ٹڈی دل کرونا سے زیادہ خطرناک ہے، کرونا نظر تو نہیں آتا ٹڈی دل لاکھوں کی تعداد میں پھر رہی ہے (بقیہ نمبر30صفحہ6پر)

یہ جہاں سے بھی گزرتی ہے فصلوں اور درختوں کا خاتمہ کر دیتی ہے، سب سے زیادہ نقصان جنوبی پنجاب کے کسانوں کا ہوا ہے۔ ریاض پیرزادہ نے کہا کہ ماہ فروری اور مارچ میں ٹڈی دل نے چولستان کی ریت پر انڈے دیے اس کا بچہ پندرہ دنوں میں اڑان بھرنے اور نقصان کرنے کے قابل ہوجاتا ہے۔ حکومت پاکستان کو ماہ اکتوبر،نومبر 2019ء سے علم تھا کہ ٹڈی دل سندھ سے پنجاب میں داخل ہوسکتی ہے لیکن انہوں نے سپرے کرانے کا کوئی انتظام نہیں کیا۔ انہوں نے کہا کہ اگر انڈوں اور بچوں پر سپرے ہوجاتا تو پاکستان کا اتنا نقصان نہ ہوتا۔ جنوبی پنجاب کے کسان تین مرتبہ کپاس کاشت کر چکے ہیں، ٹڈی دل کے نقصان سے کسانوں میں اتنی سکت نہیں رہی کہ اب چوتھی مرتبہ کاشت کریں اور نہ ہی کوئی اچھی قسم کا بیج مہیا کیا جاتا ہے۔ وفاقی حکومت کو چاہیے کہ وہ پاکستان کو قحط سے بچانے کے لیے جہازوں کے ذریعے سپرے کر کے ٹڈی دل مکڑی کا خاتمہ کیا جائے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -