مینوفیکچرنگ سیکٹرکوفعال کرنے سے ملکی درآمدی بل میں کمی ہوگی: قاضی عبدالمقتدر

مینوفیکچرنگ سیکٹرکوفعال کرنے سے ملکی درآمدی بل میں کمی ہوگی: قاضی عبدالمقتدر

  

کراچی(اے پی اے )ڈپٹی گورنر اسٹیٹ بینک آف پاکستان قاضی عبدالمقتدرنے کہا ہے کہ پاکستان کے مینوفیکچرنگ سیکٹرکوفعال کرنے سے پاکستان کے درآمدی بل میں کمی ممکن ہے اورمعیشت پراس کے فوری مثبت اثرات نمودار ہو سکتے ہیں، ملک میں موجودخام مال کو تاجروصنعت کاراستعمال کرتے ہوئے برآمدات میں اضافے کے اقدامات کریں تاکہ ملک کو قیمتی زرمبادلہ حاصل ہو سکے۔یہ بات انہوں نے کورنگی ایسوسی ایشن آف ٹریڈاینڈانڈسٹری کی تقریب سے خطاب کے دوران کہی، اس موقع پر سیکریٹری انڈسٹریز عارف الٰہی،کاٹی کے سرپرست اعلی ایس ایم منیر، کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر میاں زاہد حسین، ایف پی سی سی آئی کے نائب صدرگلزارفیروز اور کاٹی کے قائم مقام صدر حشام اے رزاق نے بھی خطاب کیا جبکہ اس موقع پرفرحان الرحمن، فراز الرحمن، ذکی احمد شریف اور دیگر بھی موجود تھے۔قاضی عبدالمقتدر نے کہا کہ پاکستان میں رسک فری گیس اور تیل کے ذخائر بھارت کے مقابلے میں زیادہ موجود ہیں جس سے بھرپور استعفادہ حاصل کیا جاسکتا ہے اور اپنے وسائل کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنے مسائل کوحل کرنے کی کوشش کی جائے۔اس موقع پر سیکریٹری انڈسٹریز عارف الٰہی نے کہا کہ کورنگی صنعتی علاقے میں ٹریفک کے نظام کو بہتر بنانے کے لیے ای بی ایم کازوے کوفوری طور پر بہتر بنایا جائے گا اور اس کے بعد جام صادق پل کی مرمت کرتے ہوئے ٹریفک کے نظام کوبحال کیا جائے گا۔ کاٹی کے سرپرست اعلی ایس ایم منیرنے کہا کہ ملکی وسائل اتنے ہیں کہ ہمیں کسی سے قرضوں لینے کی ضرورت نہیں بلکہ موجودہ وسائل کو استعمال کرتے ہوئے قرضوں سے چھٹکارا حاصل کیا جاسکتا ہے۔انہوں نے زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملکی معاشی سرگرمیوں کو زیادہ سے زیادہ فروغ دیتے ہوئے زرمبادلہ کے ذخائر میں اضافہ کیا جا سکتا ہے۔

 ایس ایم منیر نے کہا کہ روپے کی گرتی ہوئی ساکھ کو بہتر بنانے کے لیے اقدامات کرتے ہوئے ڈالر کی قیمت کو100روپے تک محدود کر دیا جائے۔ کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر میاں زاہد حسین نے کہا کہ ٹینکر مافیا انڈسٹری کا پانی چوری کرکے انڈسٹری کو ہی فروخت کر رہا ہے، حکومت انڈسٹری کو پانی کی فراہمی یقینی بنائے اور ٹینکرمافیا کے خلاف کارروائی کرے اور کراچی میں غیرقانونی ہائیڈرینٹس کو مستقل طور پر بند کیا جائے۔

مزید :

کامرس -