14سرحدی گارڈز کی ہلاکت میں ملوث انتہا پسند باغیوں کے خلاف کارروائی

14سرحدی گارڈز کی ہلاکت میں ملوث انتہا پسند باغیوں کے خلاف کارروائی

  

تہران(این این آئی) ایرانی سیکورٹی فورسز نے چودہ ایرانی سرحدی گارڈ زکی ہلاکت میں ملوث انتہا پسند باغیوں کے چار ارکان کو تازہ جھڑپ میں ہلاک کر دیا ہے۔ایرانی میڈیا نے ایران کے سرحدی گارڈ کمانڈر بریگیڈئیر جنرل حسین ذوالفقاری کے حوالے سے بتایا کہ جیش العدل کے ساتھ ہماری جھڑپ میں ان کے چار ارکان ہلاک ہو گئے ہیں یہ نہیں بتایا کہ تازہ جھڑپ کب اور کس مقام پر ہوئی ہے۔جیش العدل باغیوں کا ایک گروپ ہے جو گزشتہ سال قائم ہوا تھا جمعہ کے روز سراوان کے علاقے میں ہونے والی جھڑپ کی ذمہ داری بھی اسی گروپ نے قبول کی ہے جس میں 14 ایرانی گارڈ ہلاک اور سات زخمی ہو گئے تھے۔سراوان کا علاقہ پاکستان کی سرحد کے قریب جنوب مشرقی صوبے سستان بلوچستان کے قریب واقعے ہے جہاں شیعہ اکثریتی ایران کے برعکس سنی آبادی مقیم ہے۔ایرانی میڈیا کے مطابق ایرن نے جوابی کاروائی میں 16 باغیوں کو پھانسی دے دی تھی جن میں 8 باغی اور آٹھ منشیات اسمگلر تھے، جو تمام پھانسی کی سزا کی قطار میں تھے۔انہوں نے کہا کہ مارچ 2013, سے 67 جھڑپوں میں 20 اسمگلر ہلاک ہو چکے ہیں۔ ایرانی جنرل نے خبر دار کیا کہ ایران پاکستانی سر زمین پر ان کا پیچھا کرنے کا حق محفوظ رکھتا ہے، ان کے یونٹ نے اپنے پاکستانی ہم منصب کو اس کے بارے میں مطلع کر دیا تھا۔وزرات خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ نائب وزیر داخلہ حملوں پر بات چیت کرنے کے لیے پاکستان کا دورہ کریں گے.-

مزید :

عالمی منظر -