وکٹوریہ ہسپتال: انسولین بھی غائب، مریض دھکے کھاکر گھرواپس

وکٹوریہ ہسپتال: انسولین بھی غائب، مریض دھکے کھاکر گھرواپس

  



بہاولپور،ڈیرہ بکھا(ڈسٹرکٹ رپورٹر+نمائندہ پاکستان)ڈاکٹرمسیحا کاکرداراداکرتے ہیں پی ایم اے بہاولپورکابہاول وکٹوریہ ہسپتال کی ہڑتال سے کوئی تعلق نہیں ہم مریضوں کے علاج معالجہ اورعوامی خدمت کیلئے بھرپور کرداراداکرینگے۔ ان خیالات کااظہار صدر پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن بہاولپور ڈاکٹر محمدافتخار احمدبھٹی نے نومنتخب عہدیداروں کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہاکہ ہمارا کام مخلوق خداکی خدمت کرناہے ہم انہیں تکلیف پہنچانے کے کسی طورپرحق میں نہیں ہیں اس(بقیہ نمبر52صفحہ12پر)

موقع پرانہوں نے ایم ٹی آئی اور ایم ڈی سی کے ایشوز پربھی غوروخوض بھی کیا اس موقع پرجنرل سیکرٹری ڈاکٹرتنویراحمدباجوہ، سینئرنائب صدرڈاکٹرعامربخاری، نائب صدراسدکامران، جوائنٹ سیکرٹری ڈاکٹرانضال احمد، فنانس سیکرٹری ڈاکٹررانامحمدشفیق ممبرایگزیکٹو کونسل ڈاکٹرملک محمدنسیم نے بھی شرکت کی اجلاس میں مریضوں کے علاج معالجہ کیلئے بھرپور کاوشیں جاری رکھنے اورہسپتال انتظامیہ کاساتھ دینے کافیصلہ بھی کیاگیا۔ ڈیرہ بکھا سے تعلق رکھنے والے رانا خلیل احمد،غلام مصطفیٰ،عبدلخالق،محمد یاسر،رضیہ بی بی،شاہدہ پروین،شبانہ کوثر،کلثوم بی بی و دیگر عرضہ دراز سے شوگر کے مرض میں مبتلا ہیں اور بہاولپور وکٹوریہ ہسپتال سے انسولین لیتے ہیں گزشتہ روز جب یہ سب مریض انسولین لینے بہاولپور وکٹوریہ ہسپتال پہنچے تو ہسپتال انتظامیہ نے ان کو او پی ڈی میں جانے ہی نہیں دیا اور کہا کہ یہاں سے اب کچھ نہیں ملے گاڈاکٹرز ہڑتال پر ہیں جس پر یہ مریض دھکے کھاتے ہوئے واپس گھر لوٹ آئے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ان مریضوں کا کہنا تھا کہ غربت کے باعث مہنگی انسولین نہیں خرید سکتے حکومت کی طرف سے فراہم کردہ انسولین سے ہی استفادہ حاصل کرتے تھے اب ڈاکٹرز کی ہڑتال کے باعث انسولین بھی نہیں مل رہی جو شوگر کے مریضوں کے لیے انتہائی اہم ہے اس کے بغیر شوگر کے باعث دیگر پچیدہ امراض پیدا ہونے کا خدشہ ہے ان کا مزید کہنا تھا کہ ہسپتال میں ینگ ڈاکٹرز کی غنڈاگردی سے دیگر مریض بھی پریشان دربدر کے دھکے کھا رہے ہیں ان کا کوئی پرسان حال نہیں واضح رہے کہ پنجاب بھر میں ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال سے مریضوں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر